BN

ڈاکٹر صائمہ اسما


کیا تیسری جنس ایک حقیقت ہے؟…(3)


پاکستان کا آئین کہتا ہے کہ قرآن و سنت سے متصادم کوئی قانون سازی نہیں ہوسکتی جبکہ یہ ایکٹ صریحاً آئین سے متصادم ہے،بلکہ اصولی اور تکنیکی طور پرٹرانس جینڈر کا نام ہی آئین سے متصادم ہے۔نون لیگ کی حکومت میں پیپلزپارٹی کے سید نوید قمر نے یہ بل پیش کیااور سارے ہاؤس نے منظور کیا۔اس ایکٹ میں ٹرانس جینڈر کی تعریف میں تین اقسام درج ہیں:۱)انٹر سیکس یا ہیجڑا (جسمانی طور پہ)،۲)یونک(حادثاتی یا رضاکارانہ نامرد)اور۳)ٹرانس جینڈر یاخواجہ سرا کوئی بھی ایسا شخص جس کی صنفی شناخت یا صنفی اظہارمعاشرتی اقداراورکلچر کی توقعات کے برعکس ہو، اس بنا پر کہ
هفته 10  ستمبر 2022ء مزید پڑھیے

کیا تیسری جنس ایک حقیقت ہے؟……(2)

جمعرات 08  ستمبر 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
یہ ٹرانس جینڈر یا خواجہ سرا وہی حضرت مخنث ہیں جو بقول اکبر ’’نہ ہییوں میں نہ شییوں میں‘‘ ،فرق یہ کہ ہوتے مرد ہیں مگر عورتوں کی سی چال ڈھال اپناتے ہیں ، یا عورت ہیں مگر مردانہ پن اختیار کیے ہوئے۔نتیجہ یہ کہ جنسی تعلق کے لیے اپنی ہی صنف کی طرف راغب ہوتے ہیں۔اس کی وجہ کوئی جسمانی کمی نہیں بلکہ یہ امریکی نفسیات دانوں کے نزدیک جینڈر ڈس فوریایعنی صنفی شناخت کی خرابی پر مبنی رویہ ہے،ایک ایسی نفسیاتی بیماری جس میں متاثرہ شخص خود کواپنی پیدائشی جنس کے الٹ جنس میں محسوس کرتا ہے اور
مزید پڑھیے


کیا تیسری جنس ایک حقیقت ہے؟

منگل 06  ستمبر 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
قرآن کریم میں اللہ فرماتے ہیں ، ہم نے تمہاری جنس میں باہم جوڑے بنادیے تاکہ تمہاری نسل زمین میں پھیلے (الشوریٰ)،اور اس جوڑے بنانے کوکئی جگہ اپنی نشانی کے طور پر ذکر کیاکیونکہ اس کے ذریعے خدا نے انسان اور دیگر مخلوقات کی زمین میں بقا کا بندوبست کیا ہے۔پھر انسان چونکہ اشرف المخلوقات ہے تو اسے اس تعلق کے لیے نکاح کا پابند کیا ہے تاکہ نئے آنے والے انسان کو محفوظ اور محبت بھرے ماحول کی ضمانت ملے۔قرآن یہ بھی بتاتا ہے کہ خدا نے دو اصناف نر اور مادہ بنائیں (واللیل)یہ بھی بتایا کہ لڑکے اور
مزید پڑھیے


ریاستِ مدینہ دین ہے یا سیاست؟

هفته 06  اگست 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
شمسی تقویم کے مقابل قمری تقویم میں تحرک ہے،زندگی ہے، اسی کی برکت ہے کہ ہمارا یوم آزادی کبھی رمضان المبارک سے ہم آہنگ ہوجاتا ہے، کبھی ذی الحج سے،کبھی ربیع الاول سے تو کبھی محرم الحرام سے۔دو نسبتیں مل جاتی ہیں تو سوچ کے ہزاروں نئے در وا کردیتی ہیں۔آزادوطن کے پچھہتر برس بعدجس ریاستِ مدینہ کا ہمارے ہاں چرچا ہے،امام حسینؓ اسی ریاست مدینہ کی روح کوبرقرار رکھنے کے لیے اٹھے تھے۔یہ ریاست وہ تھی جس کے لیے نبیِﷺ مہربان نے تیرہ برس تیاری کی تھی، حرم کا صحن،مکہ کی گلیاں،کوہِ صفا،شعب ابی طالب کے پتھر، طائف کے
مزید پڑھیے


جو لفظ کہ غالب مری ’’تقریر‘‘ میں آوے

بدھ 20 جولائی 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
کہنے کو بیس نشستیں تھیں مگر بیس قسم کے تجزیے دے گئیں، بلکہ آنے والے قومی انتخابات کے لیے امکانات و خدشات کے بہت سے در وا کر گئیں۔جیت کی خوشیاں بھی ہیں اور ناکامی کا اعتراف بھی، مگر شاید یہاں فتح اور شکست کو کسی اور زاویے سے دیکھنے کی بھی ضرورت ہے۔ بعض کہتے ہیں کہ جن کی سیٹیں تھیں انہیں مل گئیں،اس میں حیران ہونے یا جشن منانے کی کیا بات ہے!دوسری طرف مریم نواز صاحبہ نے جس قدر پھرتی اور اطمینان سے شکست کو تسلیم کیا اس پہ حیرت ہے۔کیا ہمارا سیاسی کلچر اتنا ہی مہذب
مزید پڑھیے



تیری الفت نے محبت مری عادت کردی

اتوار 10 جولائی 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
متبسم لبوں اور مہربان آنکھوں والا وہ شفیق چہرہ بھولنے والی چیز نہیں ہے! میں نے اس چہرے کو ٹی وی پر دیکھا تھا یا اخبار میں، بس اتنا پتہ تھا کہ ادب کی دنیا میں یہ میرے عہد کا سب سے قدآور نام ہے۔نئے ہزاریے کا پہلا سال تھا۔ایم اے کے کورس کا سب سے مشکل پرچہ تھا مگر ذہن بغاوت پر آمادہ تھا۔ شماریاتی تحقیق کی کتاب سامنے کھلی تھی مگر قلم سے افسانہ برآمد ہورہا تھا۔ تخلیق کی حرکیات بھی عجیب ہیں ،کیسا باغیانہ مزاج رکھتی ہیں۔آپ لاکھ آنکھیں چرائیں،وفورِ تخلیق کے آگے ہتھیار ڈالتے ہی بنتی ہے۔امتحانات
مزید پڑھیے


دھنک آنچلوں کے رنگ

جمعرات 16 جون 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
نوے کی دہائی کی بات ہے۔ ایک لڑکی کو پڑھانے والا ٹیوٹراسے ورغلا کر اپنے ساتھ بھگا لے گیا۔ ایک شریف گھرانے کی عزت اچھل گئی، ماں باپ زندہ درگور ہوگئے۔ کورٹ میرج کے کیس میں تین ججوں کے پینل میں سے دو نے اس لڑکی کے حق میں فیصلہ دے دیا کیونکہ لڑکی کاکیس لڑنے والی کوئی اور نہیں خود عاصمہ جہانگیر تھیں۔ مگر یہ فیصلہ ایک اختلافی نوٹ کے ساتھ جاری ہوا۔ یہ نوٹ کیا تھا،ہماری معاشرتی اقدار کا نوحہ تھا۔ اس وقت سب اخبارات عورت کی آزادی پر بھاشن دے رہے تھے اور معاملہ چونکہ ایک دینی
مزید پڑھیے


یارو مجھے معاف رکھو ۔۔۔۔۔!

جمعرات 02 جون 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
ایک صاحب کی بیٹی کا رشتہ آیا تو انہوں نے لڑکے کی معلومات لینی شروع کیں۔ لوگوں نے کہا کردار کا اچھا نہیں ہے۔ وہ اس کے خاندان کے کسی فرد کے پاس گئے اور پوچھا۔بتانے والے نے کہا،کچھ بھی نہیں بس پیاز کھاتا ہے۔صاحب مطمئن ہو کر اٹھنے لگے کہ کوئی بات نہیں،برداشت ہے۔مگروہ بولا، پیاز اس وقت کھاتا ہے جب منہ سے بدبو آتی ہے۔اور وہ کب آتی ہے؟صاحب حیران ہوئے۔ جواب ملا جب شراب پی کر آتا ہے۔صاحب چونکے۔ مگر پریشان نہ ہوں، شراب ہروقت نہیں پیتا،وہ شخص بولا، صرف تب ،جب اس بازار میں جاتا ہے!اور
مزید پڑھیے


ٹورازم پولیس، ایک اچھا قدم

بدھ 25 مئی 2022ء
ڈاکٹر صائمہ اسما
یادش بخیر،خان صاحب کے یوں تو بہت سے وعدے تھے! یہ بھی انہی کا کمال ہے کہ گزشتہ تین سال میں قوم ’’ترے وعدے پر جیے ہم‘‘ کی تصویر بنی رہی اور زندہ رہی۔ انہی میں ایک وعدہ ٹورازم کے فروغ کابھی تھا۔ یہ وعدہ جہاں نہال کرتا تھا وہیں ہم جیسوں کا خون خشک بھی کرتا تھا۔کیونکہ ہمارے ہاں اب تک کا تجربہ یہ ہے کہ جہاں عام لوگ تفریح کی غرض سے پہنچ جاتے ہیں وہاں قدرتی خوبصورتی ختم ہوجاتی ہے۔ بے دردی سے پہاڑ کاٹ کر ہوٹل بنائے جاتے ہیں، سبزے کو تباہ کیا جاتا
مزید پڑھیے








اہم خبریں