خاور نعیم ہاشمی



بات بڑھتی چلی جا رہی ہے


اصل جرم یہ نہیں کہ جج ارشد ملک نے کیا کیا؟ اصل جرم یہ ہے کہ ن لیگ اور شریف خاندان نے ایک انڈر ٹرائل آدمی کو سزا سے بچانے کیلئے جج کو خریدنے کیلئے ہر حربہ استعمال کیا جو مقدمے کی سماعت کر رہا تھا، بد قسمتی یہ بھی ہے کہ میرے سمیت زیادہ تر لکھاریوں کے قلم کا ٹارگٹ جج صاحب ہی ہیں، شایدآج کے کالم میں بھی آپ کو یہی جھلک نظرآئے۔لیکن حقائق کو دونوں جانب سے چانچنا مجھ نا چیز کی ذمہ داری بھی ہے میں سمجھتا ہوں ۔ ٭٭٭٭٭ کالعدم شہزادی مریم نواز کی جانب سے
اتوار 14 جولائی 2019ء

کالعدم شہزادی کا انتقام

جمعه 12 جولائی 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
مریم نواز نے احتساب عدالت کے جج کی ویڈیو لیک کرکے یقیناً بہت بڑا جرم کیا ہوگا، اس جرم کو ن لیگ ’’شہزادی کا کھڑاک‘‘ قرار دے رہی ہے، ایک ایسا کھڑاک جو کسی گنڈاسے سے نہیں الیکٹرونک آلات کی مدد سے کیا گیا ،جس کی گونج پوری دنیا میں سنی گئی، ہاں یہ انتقام کا کھڑاک بھی ہے، نواز شریف کی بیٹی کی جارحانہ مزاحمتی سیاست نے ایوانوں کے ایوان ہلا کر رکھ دیے ہیں، لیکن پہلا اور آخری سوال یہ ہے کہ اس ’’عظیم ثبوت‘‘ کو مریم نواز اعلی عدالتوں کے سامنے لے کر کیوں نہ گئیں؟احتساب عدالت
مزید پڑھیے


گوتم سے گستاخی اور لال قلعہ

بدھ 10 جولائی 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
اوائل عمری میں لکھنا شروع کیا تو اس زمانے میں سب سے زیادہ شائع ہونے والے اخبار کا آفس نسبت روڈ پر لیبر ہال کے قریب ہوا کرتا تھا، میں کبھی کبھی اپنے والد کے دوست اشرف طاہر صاحب کے پاس جا کر بیٹھ جاتا ، جو وہاں نیوز ایڈیٹر تھے، اشرف طاہر صاحب سینئر ٹی وی اداکارہ روبینہ اشرف کے والد تھے،غلام محی الدین نظر مشرق میں بچوں کے صفحہ کے انچارج تھے، ان سے بھی سلام دعا ہوتی ، ان کی دبلی پتلی شخصیت بچوں کے کارٹون جیسی تھی، حسن رضا خان وہاں فلم پیج کے کرتا
مزید پڑھیے


نیک دل مزدور حسیناؤں کا جذبہ

اتوار 07 جولائی 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
فنکار برادری نے کینسر کے مرض میں مبتلا کامران کامی نامی نوجوان گلوکار کے علاج کی رقم جمع کرنے کیلئے چیریٹی شو کا اہتمام کیا تو مجھ سے رابطہ کرکے کہا گیا کہ آپ مہمان خصوصی کی حیثیت سے شریک ہوں، ایک نیک مقصد کے لئے ہونے والی اس تقریب میں جانے سے انکار نہ کر سکا ، لیکن یہ ضرور سوچتا رہا کہ کامران کامی ہے کون سا گلوکار، جس کا نام کبھی نہیں سنا، انٹر نیٹ پر تلاش شروع کی تو وہاں اس کے تین گانے مل ہی گئے،آواز اچھی لگی، پرفارمنس بھی بری نہ
مزید پڑھیے


دی جرنلسٹس

جمعه 05 جولائی 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
پاکستانی صحافت کی تاریخ کے ہر دور میں ہر قسم کے صحافی دستیاب رہے ہیں اورآج بھی ہیں، مگرآج کے دور میں مثبت بات یہ ہے کہ اب کم از کم انگوٹھا چھاپ صحافی خال خال ہیں، ماضی میں تو ہر ادارے میں دو چار اخبار نویس ایسے ضرور موجود ہوتے تھے جو بے چارے خود اخبار بھی نہیں پڑھ سکتے تھے، وہ خبریں جن کے انہوں نے پیسے پکڑے ہوتے تھے ان کے دماغ میں ہوا کرتی تھیں جنہیں لکھوانے کے لئے وہ آدمی ڈھونڈا کرتے تھے، ایسے ان پڑھ صحافیوں کی دھاک بھی بہت ہوا
مزید پڑھیے




دال میں کالا

بدھ 03 جولائی 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
مسلم لیگ ن کے صف اول کے راہنما، حکومت کے مضبوط ناقد اور پانچ سال تک پنجاب کے وزیر قانون رہنے والے رانا ثناء اللہ جو کبھی پاکستان پیپلز پارٹی لائل پورکے جیالے بھی ہوا کرتے تھے اس وقت اینٹی نارکوٹکس فورس کی تحویل میں ہیں، دو دن پہلے وہ اپنی بلٹ پروف لینڈ کروزر میں فیصل آباد سے لاہور میں داخل ہوئے تو سکھیکی کے قریب انہیں روک لیا گیا، قیمتی گاڑی کی تلاشی لی گئی تو سرکاری بیانیہ کے مطابق اس سے اعلیٰ کوالٹی کی پندرہ کلو ہیروئن برآمد ہوئی، جس کی عالمی منڈی میں مالیت کروڑوں روپے
مزید پڑھیے


جارج پنجم اور طوطا فال والا

اتوار 30 جون 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
انگلستان کے بادشاہ جارج پنجم کو گھڑ سواری کا بہت شوق تھا، فرصت کے اوقات میں وہ اپنے پسندیدہ سفید گھوڑے پر سوار ہوتے اور دریائے ٹیمز کے کنارے پہنچ جاتے، دوسرا شوق انہیں ننھے منے بچوں سے دوستی کرنے کا تھا، ٹیمز کے کنارے وہ گھوڑے کو دوڑاتے رہتے جب تھک جاتے تو گھوڑے کو کسی سمت کھڑاکرکے وہ دریا پر سیر کے لئے آنے والے بچوں سے باتیں کرتے، انہیں نظمیں اور کہانیاں سناتے اور پھر واپس گھوڑے پر محل لوٹ جاتے، جارج پنجم کی یہی واحد تفریح تھی ،وہ کہا کرتے تھے کہ گھڑ سواری، اور بچوں
مزید پڑھیے


جب منزل نہیں ملتی……

جمعه 28 جون 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
یہ سانحہ دنیا کے ہر انسان پر گزرتا ہے کہ کبھی کبھی وہ اس جگہ بھی نہیں پہنچ پاتا جہاں اس کا جانا انتہائی ضروری ہوتا ہے، ہر انسان رشتوں کے بندھن میں بندھا ہوا ہے، انسانی رشتے نباہنا ایک ایسا عمل ہے جس سے چھٹکارا ممکن نہیں، میں یہ بات آپ کو آسانی سے سمجھا دیتا ہوں کہ خاندان صرف خونی رشتوں کے گٹھ جوڑ کا نہیں انسانوں کے باہمی تعلقات کا نام ہوتا ہے، جو بھی آپ کی ذات سے جڑا ہوتا ہے وہی آپ کا عزیز اور رشتہ دار ہے، جو لوگ آپ کی خوشی غمی میں
مزید پڑھیے


کالم غالب کا مصرع نہیں ہوتا

بدھ 26 جون 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
پچھلے کالم ،،اپنے عہد کیلئے لکھنا۔۔ پر بہت رد عمل سامنے آیا، عمومی طور پر قارئین نے اسے ایک تشنہ اور نا مکمل کالم قرار دے کر اپنے با شعور ہونے کا ثبوت پیش کیا، واقعی ایک عہد کو ایک کالم میں مقید نہیں کیا جا سکتا، واقعتاً کالم کوئی بھی مکمل نہیں ہوتا، یہاں لفظوں کی تعداد کی قید میں رہ کر لکھنا پڑتا ہے، پانچ ،دس سطریں بھی اضافی ہو جائیں تو ایڈیٹر حضرات الفاظ پورے رکھنے کیلئے اسے کاٹ دیتے ہیں، کوئی کالم غالب یا میر کا مصرعہ یا شعرتو ہوتا نہیں کہ اس کی تشریح پڑھنے
مزید پڑھیے


اپنے عہد کیلئے لکھنا

اتوار 23 جون 2019ء
خاور نعیم ہاشمی
آج کا کالم میں اپنے بارے میں لکھ رہا ہوں،یہ سب کالمسٹوں اور ادیبوںکیلئے نہیں ہے، کیونکہ گہرے طبقاتی نظام میں تنکوں کی طرح بکھرے ہوئے سارے لکھاریوں کے اپنے اپنے نظریات اور اپنے اپنے مفادات ہیں، سب میری طرح اپنے اپنے مشن پر ہیں،اور کوئی کسی کو کسی کے مشن سے دستبردار کرانے کا حقدار نہیں، یہ لکھنا بھی دوڑ کے مقابلے کی طرح ہوتا ہے، جس کے منصف قارئین ہوتے ہیں، کون سا لکھاری کس سیڑھی پر کھڑا ہوتا ہے کوئی لکھنے والا یہ بات کبھی خود نہیں جان سکتا،اپنے بارے میں ایک عرصہ سے سوچ رہا تھا
مزید پڑھیے