Common frontend top

ذوالفقار چوہدری


سیاسی ہیرو اور ولن کے کرداروں کی تبد یلی


امریکی وزیر خارجہ میڈلین البرائٹ نے کہا ہے کہ بین الاقوامی سیاست شطرنج کا کھیل نہیں جس میں آپ کے پاس بیٹھ کر سوچنے اور چالیں چلنے کا وقت ہوتا ہے۔ بین الاقوامی سیاست تو بلیئرڈ کا کھیل ہے اور آپ کے سامنے گیندوں کا کلسٹر ہوتا ہے۔ ایک گیند کو نشانہ بنا کر کئی ایک گیندوں کو اپنی جیبوں میں ڈالنا ہوتا ہے۔ سیاست قومی ہو یا بین الاقوامی مقصد دونوں کا ہی ایک مد مقابل کو کمزور کر کے اس پر غلبہ حاصل کرنا ہوتا ہے‘البتہ اتنا فرق ضرور ہے کہ بین الاقوامی سیاست میں ٹارگٹ کو
جمعه 14 اپریل 2023ء مزید پڑھیے

قانون کا بلیک ہول اور اشرافیہ

جمعه 07 اپریل 2023ء
ذوالفقار چوہدری
معروف سکالر ڈاکٹر اشوک آنند نے کہا ہے کہ اگر عوام خود غرض اور لالچی ہوں گے تو ان پر کرپٹ افراد حکمرانی کریں گے وہ لالچ ‘ انا‘ غصہ اور لگائو کو بہن بھائی قرار دیتے ہوئے دعویٰ کرتے ہیں کہ یہ اکٹھے آتے ہیں اور ان سے نجات بھی اکٹھے ایک ہی وقت میں ممکن ہو سکتی ہے۔ اشکوک آنند کی خود غرض عوام پر کرپٹ افراد کی حکمرانی کرنے کی منطق بھارتی نژاد امریکی سکالر اور ریسرچر پی ایس جگدیش کمار نے بتائی دی جگدیش نے قانون کو ایسا ’’بلیک ہول‘‘ بتایا ہے جہاں طاقتور اپنی انا‘
مزید پڑھیے


سماجی ،معاشی زوال اور روشنی سے ڈرنے والے مرد!

جمعه 31 مارچ 2023ء
ذوالفقار چوہدری
جان سٹوارٹ مل نے کہا تھا’’اندھیرے سے ڈرنے والے بچے کو تو ہم آسانی سے معاف کر سکتے ہیں مگر المیہ تو اس وقت جنم لیتا ہے جب بڑے مرد روشنی سے ڈرتے ہیں‘‘۔روشنی سے ہم اس وقت ڈرتے ہیں جب خواہشات انسان پر اس قدر غالب آ جائیں کہ وہ اخلاق ‘ ضابطے سے بھی ٹکرانے پر اتر آئے۔ پاکستان کا المیہ تو یہ بھی رہا ہے کہ یہاں اخلاقیات تو دور کی بات قانون کو بھی طاقت کے بل بوتے پر اپنی خواہش اور مفاد کے لئے ناچنے پر مجبور کر دیا جاتا ہے۔ پاکستان مسلم
مزید پڑھیے


ارمغان لاہور اور بینجمن فرینکلن کا معیار !

هفته 11 مارچ 2023ء
ذوالفقار چوہدری
بینجمن فرنیکلن نے کہا تھا کہ یا تو کچھ پڑھنے کے لائق لکھو یا پھر کچھ ایسا کرو کہ دوسرے لکھنے پر مجبور ہو جائیں۔گزشتہ دنوں برادرم اشرف شریف نے ’’ارمغان لاہور‘‘ آثار‘ شخصیات ‘ احوال ہدیہ کی۔ سوچا لاہور کی تاریخ پر بہت سی کتابیں لکھی گئی ہیں یہ کتاب بھی ایسا ہی کچھ اضافہ ہو گا ۔کتاب کی پشت پر معروف دانشور ،ادیب ،محقق مستنصر حسین تارڑ کی تحریر نے چونکا دیا۔ارمغان لاہور کے بارے میں لکھتے ہیں’’ موہنجوڈارو یا ہڑپہ کے نیچے بھی اور تہیں ہیں ان کی کھدائی پوری کی پوری نہیں ہوئی۔لاہور کی جو کھدائی
مزید پڑھیے


گھر کے بھیدی نے لنکا ڈھا دی!

جمعه 03 مارچ 2023ء
ذوالفقار چوہدری
نیکیتا خروشیف نے کہا تھا ’’سیاست دان ہر جگہ ایک جیسے ہوتے ہیں وہ دریا نہ ہونے پر بھی عوام سے پل بنانے کا وعدہ کرتے ہیں۔ جہاں دریا نہ ہو وہاں بھی پل بنانے کا وعدہ اور لوگوں کے اعتبار کرنے کی ایرک پیورناگی نے گتھی سلجھائی کہ سیاستدان باڑ کی دوسری طرف ہمیشہ سبز باغ دکھاتے ہیں اس کے لئے دھوکہ دہی کے ساتھ خوبیاں ملاتے ہیں، چالیں چلتے ہیں۔ دلکش خواب دکھاتے ہیں مگر جب عوام پر حقیقت آشکار ہوتی ہے تو سبز گھاس کے بجائے بنجر میدان نظرآتا ہے۔ عمران خان کی حکومت گرانے کے لئے
مزید پڑھیے



تنخواہیں نہ لینے کا حکومتی ’’احسان‘‘

جمعه 24 فروری 2023ء
ذوالفقار چوہدری
آرنسٹ ہیمنگوے نے کہا تھا کہ بد انتظامی کی شکار قوم کا پہلا علاج مہنگائی ہے اور دوسرا جنگ۔دونوں عارضی خوشحالی لاتے ہیں اور مستقل تباہی، لیکن دونوں سیاسی اور معاشی موقع پرستوں کے لئے بہترین پناہ گاہ ہوتی ہیں۔آرنسٹ کے مطابق عارضی خوشحالی بھی نعروں اور دعوئوں کی صورت میں بہکاوا اور دھوکہ ہوتی ہے۔جنگ صرف عسکری نہیں ہوتی یہ سیاسی محاذ پر بھی لڑی جاتی ہے ۔پاکستان کو آج اسی قسم کی صورتحال کا سامنا ہے ملک کا وزیر دفاع جلسہ عام میں پاکستانیوں کو ڈیفالٹ ملک کے باشندے ہونے کی اطلاع دیتا ہے تو وزیر اعظم اور
مزید پڑھیے


اُس دن کا انتظار کیجیے

جمعه 10 فروری 2023ء
ذوالفقار چوہدری
جنرل جارج پیٹن نے کہا تھا ’’میری رہنمائی کرو یا میری پیروی کرو ایسا نہیں کر سکتے تو میرے راستے سے ہٹ جائو‘‘۔ پاکستان کا المیہ یہ ہے کہ یہاں ہرسیاستدان مسائل کا رونا روتا ہے مسائل گنوانتا ہے‘ یہ دعویٰ بھی کرتا ہے کہ مسائل کی دلدل سے نکالنے والا الٰہ دین کا چراغ اس کے پاس کے ہے ۔عوام تو عوام یہاں خواص بھی حقائق کے بجائے ’’ہوا‘‘ دیکھ کر رائے بناتے ہیں۔ فیصلہ ساز فیصلے آئین اور قانون کے مطابق نہیں خواہش اور ضرورت کے مطابق کرتے ہیں ۔ہر کسی کا اپنا سچ
مزید پڑھیے


پھولوں کا شہر ،گلاب چہرے اور بارود کی بو!

جمعه 03 فروری 2023ء
ذوالفقار چوہدری
پھولوں کے شہر پشاور میں نفرت اور انتقام کی آگ نے 102 پھول چہرے بھسم کر دیے گئے۔ پشاور ہی نہیں پورا ملک دہشت گردوں کے نشانے پر ہے۔کوئی دن نہیں گزرتا جب پاکستانیوں کا خون نہ بہایا جاتا ہو۔ سنٹر فار ریسرچ اینڈ سکیورٹی کی رپورٹ کے مطابق پاکستان میں 2022ء میں دہشت گردی کے 376حملوں میں 400 شہادتیں ہوئیں ہیں۔ شہید ہونے والوں میں 282 سکیورٹی اہلکار شامل ہیں ان میں 376 حملوں میں سے 57 کی ذمہ داری ٹی ٹی پی ‘ داعش اور بی ایل اے نے قبول کی ہے۔باقی 314حملے کرنے والے کون تھے ان
مزید پڑھیے


معاشی بحران اور ’’ڈرائونے خواب‘‘

جمعه 27 جنوری 2023ء
ذوالفقار چوہدری
وولسن انٹرنیشنل سنٹر فار سکالرز میں جنوبی ایشیا کے لئے سینئر ایسوسی ایٹ اور ایشیا پروگرام کے ڈپٹی ڈائریکٹر مائیکل کوگل مین نے 2022ء کو پاکستانیوں کے لئے ’’ڈراونا خواب‘‘ قرار دیا ہے اور پیش گوئی کی ہے کہ پاکستانی رواں سال 2023ء سے بھی بہتری اور رحم کی کوئی امید نہ رکھیں۔ مائیکل کوگل اس ڈرائونے خواب کی وجہ ان معاشی اور قومی سلامتی کے چیلنجز کو قرار دیتے ہیں جو ملک کی سیاسی اور عسکری قیادت کے مابین ایک تقرری پر اختلاف کی بنا پر سیاسی عدم استحکام کا سبب بنے۔کوگل نے جو تفصیلات لکھی ہیں
مزید پڑھیے


خالی گھٹا کو کیا کریں برسات بھی تو ہو!

جمعه 13 جنوری 2023ء
ذوالفقار چوہدری
ٹیرنس میک کینا کے مطابق ’’آج کی جدید دنیا میں دو چیزوںشعور اور کنڈیشنگ کا بحران ہے ۔ ہمارے پاس تکنیکی طاقت ہے، اپنے سیارے کو بچانے کی، بیماری کا علاج کرنے، بھوکوں کو کھانا کھلانے، جنگ کو ختم کی لیکن ہمارے پاس فکری وژن، اپنی سوچ بدلنے کی صلاحیت کی کمی ہے۔ ہمیں اپنے آپ کو 10,000 سال کے برے رویے سے آزاد کرنا چاہیے۔ اور، یہ آسان نہیں ہے۔ ٹیرنس کہتا ہے کہ حکومت کو ڈر ہوتا ہے کہ جو رائے عامہ کا ڈھانچااس نے تشکیل دیا ہے اجتماعی شعور اس کو تحلیل نہ کر دے ۔ ثقافتی
مزید پڑھیے








اہم خبریں