BN

راوٗ خالد



ڈنگ ٹپائو معیشت


دہائیوںسے پاکستان کی معیشت کو جس طرح سے چلایا جاتا رہا ہے اسکو بہت ہی فراخدلی سے ڈنگ ٹپائو معیشت ہی کہا جا سکتا ہے کیونکہ دنیا بھر کے مالیاتی اداروں کی مالی معاونت اور کوشش کے باوجود ہم نے اس شعبے کو کبھی سنجیدگی سے بہتر بنانے کی کوشش ہی نہیں کی۔ادھار لے کر کوئی ایسا منصوبہ یا صنعت لگانے کی کوشش نہیں کی جس سے ملکی معاشی آمدن میں کچھ اضافہ کیا جاسکے۔ پبلک سیکٹر میں مسلسل نقصان کا سبب بننے والے اداروں کو بحال کیا جا سکے جس سے معاشی بہتری کے ساتھ ساتھ روزگار کے مواقع
اتوار 21 اپریل 2019ء

گھٹیا پن کے ریکارڈ

اتوار 14 اپریل 2019ء
راوٗ خالد
کسی سیانے کا قول ہے کہ جب دلیل ختم ہو جاتی ہے تو گالی شروع ہوتی ہے۔عمران خان پوری زندگی اس قول کا سب سے زیادہ شکار رہے ہیں، اور انکے ہاتھوں رہے ہیں جو یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ وہ دلیل والے ہیں غلیل والے نہیں۔ سیاست میں آنے کے بعد توعمران خان کے حوالے سے ہمارے ہاں زرخیز ذہن کے مالک لوگ ایسی ایسی کمال کی کہانیاں پیش کر رہے ہیں کہ گھٹیا پن کے نئے نئے ریکارڈ رقم ہو رہے ہیں۔ وزیر اعظم کو ازدواجی زندگی کے حوالے سے پھر افواہوں کا سامنا ہے جس کی اگرچہ
مزید پڑھیے


بلاول کی لات

اتوار 07 اپریل 2019ء
راوٗ خالد
ذوالفقار علی بھٹو کی چالیسیویں برسی تھی اور اسکی دوسری نسل مزار پر حاضر تھی۔بلاول بھٹو اور اسکی بہنیں اور کزنز بجا طور پر فخر کر سکتے ہیں کہ وہ ایک ایسے لیڈر کی نسل سے ہیں جس نے پاکستان میں عوامی شعور اجاگر کرنے میں انقلابی کردار ادا کیا۔ بھٹو کی شخصیت کے حوالے سے تنازعات ہو سکتے ہیں لیکن عوام کے لئے جو درد انکے دل میں تھا اس نے عوام کے دل کو چھوا، اسی لئے آج بھی اگر پیپلز پارٹی یہ نعرہ لگاتی ہے کہ بھٹو زندہ ہے تو اسکا بنیادی اشارہ عوام کی طرف ہوتا
مزید پڑھیے


سیاسی تحریک کے ا مکانات

اتوار 31 مارچ 2019ء
راوٗ خالد
بلاول بھٹو جب ٹرین مارچ پر نکلے تو میرے جیسے بہت سے تجزیہ نگار اسکو حکومت کے خلاف ایک بڑی سیاسی تحریک کا آغاز قرار دینے لگے لیکن لاڑکانہ پہنچنے سے پہلے ہی انہوں نے سیاسی تحریک کے غبارے سے ہوا نکال دی۔ میاں نواز شریف کی ضمانت اور میاں شہباز شریف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ سے نکالنے کے عدالتی احکامات کی خبر ملتے ہی انہوں نے کارکنوں کو خطاب کرتے ہوئے دونوں بھائیوں کو مبارکباددی لیکن ساتھ ہی عمران خان کو طعنہ دیا کہ آپ تو کہتے تھے کوئی این آر او نہیں ہوگا لیکن یہ آپ کا
مزید پڑھیے


کرپشن کی دھن پہ ڈسکو

اتوار 24 مارچ 2019ء
راوٗ خالد
عنوان شاید آپ کو بہت عجیب لگے ۔ میں بہت سنجیدہ باتیں کرنے کے موڈ میں تھا جس میں نیوزی لینڈ کا سانحہ اور وزیر اعظم جیسنڈرا کی انسانیت دوستی ، اقلیتوں کے ساتھ برادرانہ سلوک اور جس طرح اس ملک کے باسیوں اور وہاں کی پارلیمنٹ نے محبت نچھاور کی جیسے معاملات تھے۔لیکن گزشتہ دو تین سال سے ہمارے ہاں سیاست میں ایسا مسخرہ پن شروع ہوا ہے کہ ختم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہا۔ کرپشن کی دھن پر جو ڈسکو دھمال شروع ہے اسکے مظاہرے آئے دن دیکھنے کو ملتے ہیں۔اس شو کو دیکھنے والے بھلے
مزید پڑھیے




کرائسٹ چرچ کی یادیں

اتوار 17 مارچ 2019ء
راوٗ خالد
کیا سانحہ گزر گیا اور ایک ایسے شہر میں جسکے بارے میں وہم و گمان نہیں تھا کہ کرائسٹ چرچ میں یہ قیامت بھی برپا ہو گی۔اس شہر پر قدرتی آفات کے بہت سے عذاب اترے ہیں جو زلزلے کی صورت میں تھے۔ لیکن ایک انسان اس شہر میں قیامت برپا کر دے گا کبھی تصور بھی نہیں کیا جا سکتا۔ خاص طور پر میں تو یقین نہیں کر پا رہا کیونکہ میں اس شہر تین روز قیام کر چکا ہوں اور جانتا ہوں کہ وہاں کے لوگ کس قدر شاندار، مہمان نواز اور معصوم ہیں۔میری جو یادیں اس
مزید پڑھیے


اب ہماری سنو

اتوار 10 مارچ 2019ء
راوٗ خالد
جب سے ہوش سنبھالا ہے پوری دنیا کو یہ بتاتے سنا ہے کہ پاکستان کو اس طرح کرنا چاہئے، یہ کیوں کر رہا ہے ، وہ کیوں نہیں کرتا۔کبھی داد وتحسین کے ڈونگرے برسائے جاتے ہیں کہ روس کے ٹکڑے کر دئیے کبھی دہشت گردی کے خلاف جنگ میںہمیں دنیا کی فرنٹ لائن سٹیٹ ہونے کا مژدہ سنایا جاتا ہے اور پھر ہمیں طالبان کو تخلیق کرنے کا طعنہ دیا جاتا ہے۔ دنیا بھر کے مجاہدین ہمارے ہاں بھیج کر انکی بھرپور مدد کی جاتی ہے بھلے وہ معاشی ہو، جنگی ہو یا اخلاقی ہو۔ اپنی کتاب چارلی ولسن
مزید پڑھیے


امن کا وقت ہوا چاہتا ہے

اتوار 03 مارچ 2019ء
راوٗ خالد
گزشتہ کالم ان الفاظ پر ختم کیا تھا؛ وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ یہ نیا پاکستان ہے اور فوج کے ترجمان کہہ رہے ہیں کہ پاکستان کی فوج نئی فوج ہے تو اس بات پر بھارت بھی یقین کرے۔ امن کی آفر کو اپنے الیکشن کی فتح کی خاطر نظر انداز نہ کرے ورنہ ، جنوب مشرقی ایشیا ایک نیا خطہ بننے جا رہا ہے جہاں پر امن اور ترقی اب شروع ہونے کو ہے، بھارت اسکا موئثر حصہ بننے سے محروم بھی ہو سکتا ہے۔ یہ ایک تجزیہ بھی اور ایک ایسی حقیقت ہے جس کو نظر انداز
مزید پڑھیے


پلوامہ حملہ، ایک فیصلہ کن واقعہ

اتوار 24 فروری 2019ء
راوٗ خالد
پلوامہ شاید آخری واقعہ ہو جسکی بندوق ایک بار پھر بھارت پاکستان کے کندھے پر رکھ کر چلانے کی ناکام کوشش کر چکا ہے۔ اس واقعے کے بعد جس قسم کا واویلا بھارت نے مچایا ہے وہ نیا نہیں ہے لیکن جو بین ا لاقوامی رد عمل آیا ہے وہ با لکل نیا ہے۔اس سے پہلے بھلے ممبئی حملہ ہو، پٹھانکوٹ ہو یا بھارتی پارلیمنٹ پر حملے کا واقعہ، امریکہ سے لے کر بھوٹان تک پاکستان پر الزام تراشی میں بھارت کے ہمنوا ہوتے تھے۔ اس بار ایسا نہیں ہوا۔آپ کب تک بین الاقوامی برادری کو بیوقوف بنا سکتے
مزید پڑھیے


اَھلا ًو سَھلا ً

اتوار 17 فروری 2019ء
راوٗ خالد
میں پاکستانیوں کی اس نسل سے ہوں جس نے ذوالفقار علی بھٹو کی ایوب خان کے خلاف تحریک اور پھر مشرقی پاکستان کی علیحدگی کا ناگہانی سانحہ دیکھا اور یہ پہلی مرتبہ ہوا کہ میں نے اپنے والدصاحب کو اشکبار اور شدید مایوس دیکھا کیونکہ وہ بطور طالبعلم تحریک پاکستان کا حصہ رہے تھے اور ملک کے دو لخت ہونے پر بہت رنجیدہ تو تھے ہی لیکن باقی ماندہ پاکستان کے حوالے سے متفکر بھی۔پھر بھٹو صاحب کو زمام اقتدار سنبھالتے دیکھا جنہوں نے اس مایوسی کے عالم میں ایک نئے پاکستان کی بنیاد رکھی جسکو عالم اسلام کا
مزید پڑھیے