BN

سعدیہ قریشی


سرکار کا اقبال بلند ہو!!


ہر وقت حکومت کے پیچھے لٹھ لے کر پڑے رہنا شریفوں کا شیوا نہیں ہے آخر وہ بھی بے چارے انسان ہیں اور انسان سے غلطیاں تو ہو ہی جاتی ہیں۔ویسے بھی مثبت سوچ کا تقاضا یہی ہے کہ آپ کو ہر مسئلے میں سے ایک امکان کی خوشخبری سنائی دی اور آپ بلاوجہ جلنے کڑھنے اور حکومت کو کوسنے دینے کے انتہائی منفی عمل سے خود کو محفوظ رکھ سکیں۔اس طرح آپ کو بہت سے فوائد حاصل ہوں گے۔سب سے پہلے تو آپ کا بلڈ پریشر کنٹرول میں رہے گا۔ آپ کے چہرے پر ہمہ وقت کے کڑھنے اور
اتوار 14 جون 2020ء

جیسنڈا آرڈرن کا فلسفہ حکمرانی !

جمعه 12 جون 2020ء
سعدیہ قریشی
22مارچ 2019ء سے پہلے جیسنڈا آرڈرن پاکستانیوں کے لئے اجنبی تھیں۔ پھر کرائسٹ چرچ کا سانحہ ہوا۔ پچاس مسلمانوں کو جمعہ کی نماز کے دوران ایک جنونی نے موت کے گھاٹ اتار دیا۔ اس وقت جیسنڈا آرڈرن نے یوں جس طرح متاثرین اور مرنے والوں کے لواحقین کو گلے سے لگایا۔ یوں لگتا کہ ایک وہ سربراہ مملکت سے زیادہ ایک شفیق اور فکر مند ماں کے روپ میں ڈھل گئیں ہیں۔ صرف ہم یہاں پاکستان میں ہی ان کے اس طرز حکومت کے دیوانے نہ ہوئے بلکہ پوری دنیا نے حیران ہو کر اس دبلی پتلی عام صورت خاتون وزیر
مزید پڑھیے


سنا مکی۔نیم حکیم جھوٹ نہ پھیلائیں

بدھ 10 جون 2020ء
سعدیہ قریشی
سنا مکی کے حوالے سے کالم لکھنے کا مقصد ہرگز ہرگز یہ نہیں کہ میں پڑھنے والوں کو سنا مکی سے کورونا کے علاج کا مشورہ یا ترغیب دے رہی ہوں۔ یہ میرا کام ہی نہیں ہے لوگ اپنے اعتماد کے مستند طبیب سے علاج کروائیں خواہ ایلو پیتھک ہوں ۔ہومیو پیتھک ہوں یا پھر طب یونانی سے ہوں۔ یعنی جڑی بوٹیوں سے علاج کرنے والے نیچر وپیتھ(naturo path)۔شفا تو اللہ کی جانب سے ملتی ہے مگر اس کا وسیلہ شفا دینے والا کسی کو بھی بنا سکتا ہے۔ سناء مکی طبّ نبویؐ میں مذکور ہوئی ایک جڑی بوٹی کا نام
مزید پڑھیے


کورونا ریلیف ٹائیگر فورس کہاں ہے…؟

اتوار 07 جون 2020ء
سعدیہ قریشی
کورونا خطرناک انداز میں پھیلتا جا رہا ہے۔ اس وقت حکومت کورونا کے پھیلائو کا سارا الزام لوگوں پر دھر رہی ہے۔ یہ ٹھیک ہے کہ حفاظتی تدابیر تو خود ہی لوگوں نے اپنے اوپر نافذ کرنا تھیں۔خود اس بات کا اہتمام کرنا تھا کہ ہم نے ہجوم میں نہیں جانا۔ ماسک پہننا ہے دستانے پہننے ہیں بس یہی سوچ کر سرکار نے سب کچھ کھول دیا اور ساری ذمہ داری عوام پر ڈال دی۔ خطرناک وبا کے دنوں میں فیصلہ سازی کرتے ہوئے فیصلہ کرنے والوں کو اپنے ملک کے لوگوں کی نفسیات اور ان کے شعور کی سطح کا اندازہ
مزید پڑھیے


بدلے ہوئے امریکی

جمعه 05 جون 2020ء
سعدیہ قریشی
2018ء میں IVLPپروگرام کے تحت امریکہ یاترا کا موقع ملا پانچ ریاستوں میں جانے اور وہاں کے لوگوں سے ملاقات کرنے اور بات چیت کے ذریعے انہیں جاننے کی کوشش کی۔ پہلا پڑائو امریکہ کے دارالحکومت واشنگٹن ڈی سی میں تھا۔ یخ بستہ دسمبر کے دنوں میں واشنگٹن ڈی سی کا شہر ایک دلآویز تصویر کی طرح حسین نظر آتا۔ موسم خزاں میں بھی سبز پتے سرخ اور زرد رنگوں کی عجب بہار دکھاتے تھے۔ عام امریکیوں سے لے کر دانشوروں میڈیا سے وابستہ صحافیوں پروڈیوسروں لکھاریوں سے ملاقات کا موقع ملا۔ امریکیوں کو میں نے اپنے حال میں مست خوش باش
مزید پڑھیے



جس روز ہمارا کوچ ہو گا

بدھ 03 جون 2020ء
سعدیہ قریشی
البم میں سجی ہوئی تصویریں، گزرے ہوئے وقت کا نقش ہوتی ہیں۔ ہم ان تصویروں کو دیکھ کر ذرا سی دیر کے لیے پھر سے وہ لمحے جی لیتے ہیں۔ وقت گزرتا رہتا ہے۔ لوگ بوڑھے ہونے لگتے ہیں، خدوخال کے گلاب مرجھانے لگتے ہیں، عمر رواں اپنی گرد ڈال کر آگے نکل جاتی ہے تو تصویریں ہی بوڑھی ہو کر مرنے لگتی ہیں۔ ان تصویروں میں مسکراتے، زندگی کی گہما گہمی کو اپنے خوب صورت چہروں کے خدوخال سے منعکس کرتے ہوئے چہروں پر جب موت اپنا عکس ڈالتی ہے تو پھر ان تصویروں میں زندگی کی رمق باقی
مزید پڑھیے


دعا سے وبا کا موسم پلٹ جائے

اتوار 31 مئی 2020ء
سعدیہ قریشی
28مئی کو دانیال نو برس کا ہو گیا۔سالگرہ کیسے منانی ہے کیا کیا سرپرائز گفٹ ہوں گے دوستوں کو کون سے گفٹ دیے جائیں گے یہ ساری پلاننگ صاحبزادے پورا سال کرتے ہیں مگر 28مئی اس بار وبا کے موسم میں آیا۔ لاک ڈائون میں اگرچہ نرمی ہے مگر سکول تو بند ہیں اور جنم دن کی سب سے اہم تقریب تو سکول کے دوستوں کے ساتھ منائی جاتی تھی جس میں برتھ ڈے بوائے ہم جماعتوں کے جھرمٹ میں کیک بھی کاٹتے اور پھر اپنی طرف سے سارے ہم جماعتوں کو گفٹ بھی دیتے۔ سب بچے اس سرپرائز پر
مزید پڑھیے


ہم کب بڑے ہوں گے؟

بدھ 27 مئی 2020ء
سعدیہ قریشی
وبا کے دنوں کی عید تھی جیسے تیسے کر کے گزر گئی stay at homeاور stay safeکی پوسٹیں فیس بک پر تواتر سے لگانے والے بھی عید کے روز اپنوں سے ملنے ملانے گئے۔ حالانکہ ارادہ یہی تھا کہ محدود رہنا ہے اور محفوظ رہنا ہے لیکن کیا کریں کہ عید اس کے علاوہ اور ہے ہی کیا کہ انسان زندگی کی ہر مصروفیت سے دامن چھڑا کر چند لمحوں کے لیے اپنوں کے ساتھ مل بیٹھے، اور بس۔ اسی لیے تو عیدوں پر پردیسی اپنے اپنے گھروں کا رُخ کرتے ہیں۔ کوئی لاری اڈے کی تھرڈ کلاس بسوں میں
مزید پڑھیے


’’شہر وصال سے آنے والی ہوائیں ہجر انگیز بہت ہیں‘‘

اتوار 24 مئی 2020ء
سعدیہ قریشی
پاکستانی قوم کورونا کے سائے میں عید منانے کے خیال سے پہلے کچھ اداس اور پژمردہ سی تھی کہ عید کے مسافروں کی اڑان بھرنے والا جہاز کراچی میں تباہ ہو گیا۔ اس حادثے نے پوری قوم کو ایک بڑے دکھ سے ہمکنار کر دیا۔ مصائب اور تھے پر جی کا جانا، عجیب اک سانحہ سا ہو گیا ہے!لگتا ہے دل کے آس پاس کوئی چیز ٹوٹ کر بکھر گئی ہے۔ روح کی سنسان گلیوں میں اداسی پھیرے لگاتی ہے اور اس پر عید کی آمد کا احساس جو ہمارے ہاں روایت کے مطابق اپنوں کی دید سے جڑا ہوا
مزید پڑھیے


زندگی گزارنے کے روشن ایس او پیز

بدھ 20 مئی 2020ء
سعدیہ قریشی
پچاس‘ پچپن صفحات پر مشتمل یہ ایک مختصر سی کتاب ہے۔ یہ کتاب میں نے انارکلی کی پرانی کتابوں کے سٹال سے خریدی تھی۔ پرانی کتابیں فٹ پاتھ پر بک رہی ہوں یا سٹالوں پر‘ اپنی جانب ضرور کھینچتی ہیں۔ پرانی سال خوردہ کتابوں کو الٹ پلٹ کر کے دیکھنا اور اپنی پسند کی کوئی کتاب تلاش کرنا ایک پرلطف عمل ہے اور اس خوشی کو وہی جان سکتا ہے جسے کتاب پڑھنے اور پرانی کتابوں کے ذخیرے سے خزانے تلاش کرنے کا چسکا ہو۔ یہ گزشتہ موسم سرما کی دھیمی دھیمی سردیوں کی ایک دوپہر تھی‘ دن اتوار کا تھا
مزید پڑھیے