BN

سعد الله شاہ



خالد جامی سے مکالمہ


کارِ فرہاد سے یہ کم تو نہیں جو ہم نے آنکھ سے دل کی طرف موڑ دیا پانی کو تو رُکے یا نہ رُکے فیصلہ تجھ پر چھوڑا دل نے در کھول دیئے ہیں تری آسانی کو اس سے پہلے کہ دل کے در کھولے جائیں ایک چھوٹی سی بات مجھے کہنی ہے کہ اس طرح ایک اینکر اپنے پروگرام میں بھی کرتے آئے ہیں۔ نادرا کے دفتر کے باہر ایک فوٹو کاپی کرنے والا کھڑا۔ اس سے میں نے شناختی کارڈ کی چار کاپیاں کروائیں تو اسے بیس روپے ادا کرنا تھے۔ اس کے پاس پانچ سو روپے کھلے نہیں تھے۔ مجبوراً اس
منگل 02 جولائی 2019ء

ورلڈ کپ کا سب سے سنسنی خیز مقابلہ

پیر 01 جولائی 2019ء
سعد الله شاہ
بات کرتے ہوئے بے ربط ہوا وہ اکثر اس کی نفرت میں محبت کے بھی پہلو آئے میں نے تو اڑتے پرندوں سے سبق سیکھا ہے کام آئے تو فقط اپنے ہی بازو آئے یہ محبت اور سعی کی داستان کھولنے سے پہلے پاک افغان کرکٹ میچ کی بات کرنا ہو گی۔ یہ میچ کیا تھا اچھی خاصی ٹینشن تھی۔ آپ یقین مانیے کہ اس میچ نے آخر تک ہمیں سولی پر لٹکائے رکھا۔ بعض جگہ تو سانس رُک رک گئی کہ اگر ہارے تو داغ نہیں زخم لگے گا۔ ایک دھڑکا یہ بھی تھا کہ ہم ورلڈ کپ کے وارم اپ میچ میں
مزید پڑھیے


کرکٹ میں کامرانی و سرفرازی

جمعه 28 جون 2019ء
سعد الله شاہ
اس نے پوچھا جناب کیسے ہو اس خوشی کا حساب کیسے ہو بعض اوقات ایسا ہوتا ہے کہ قدرت فرحت و انبساط ارزاں کر دیتی ہے اور انسان نہال اور خوشی سے مالا مال ہو جاتا ہے۔ بعض اوقات یہ انفرادی سطح پر ہوتا ہے اور بعض مرتبہ اجتماعی سطح پر یہ عمل چشمہ پھوٹنے ‘ جھرنا گرنے یا صباکے جلنے کی طرح ہوتا ہے‘ بہت بے ساختہ کسی کی پہلی مسکراہٹ کی طرح کہ چہرے پر حیا کی سرخی پھیل جائے۔ شاید میں نے اپنی بات کو کچھ زیادہ ہی رومانٹک کر دیا ہے۔ اصل میں ‘میں خوش ہی اتنا ہوں
مزید پڑھیے


بلاول کی تقریر اور سیاسی منظر نامہ

منگل 25 جون 2019ء
سعد الله شاہ
سحر کے ساتھ ہی سورج کا ہمرکاب ہوا جو اپنے آپ سے نکلا وہ کامیاب ہوا میں جاگتا رہا اک خواب دیکھ کر برسوں پھر اس کے بعد مرا جاگنا بھی خواب ہوا بے نظیر کی 66ویں سالگرہ پر بلاول نے کیا خوب تقریر کی کہ میں نے بڑے اشتیاق سے پوری کی پوری سنی۔ یہ تقریر ہرگز دلچسپی سے خالی نہیں تھی۔ اب وہ تقریر کرنا سیکھ گیا ہے اور انداز اس کا اپنا ہے ایک مرتبہ تو اس نے مہنگائی کے حوالے سے ایک جملہ یوں ادا کیا کہ مفہوم نکل رہا تھا کہ آسمان مہنگائی سے بات کر رہا ہے ۔ویسے
مزید پڑھیے


مولانا روم اور کیمیائے سعادت

اتوار 23 جون 2019ء
سعد الله شاہ
مولانا روم پر انہیں تخصیص حاصل ہے۔ اس دن بھی وہ مولانا روم کے حوالے سے بات کرتے رہے کہ ان کی تعلیمات کا نچوڑ یکجہتی اتحاد اور یگانگت ہے۔ اس حوالے سے انہوں نے نہایت دلچسپ بات بتائی کہ جب مولانا قونیہ میں قیام پذیر ہوئے تو شہرت چاروں وانگ پہنچی۔ وہاں کوئی مولانا سراج الدین تھے۔ انہوں نے اپنے ایک شاگرد کو مولانا روم کے حوالے سے معلومات لینے کے لئے ان کے پاس بھیجا کہ پتہ تو کر کے آئو کہ مولانا روم 72فرقوں سے متفق ہیں۔ وہ شاگرد مولانا کے پاس پہنچا اور مکالمہ کیا کہ
مزید پڑھیے




اسلامی کہکشاں کا ستارا

جمعه 21 جون 2019ء
سعد الله شاہ
کوئی جگنو ہے کہیں پر نہ ستارا کوئی شب تیرہ کے گزرنے کا اشارہ کوئی اک محبت ہے کہ شرمندہ آداب نہیں اس کے پیچھے کوئی مکتب نہ ادارہ کوئی اس وقت صورت حال کو بیان کرنے کی بھی ضرورت نہیں کہ سب کچھ خود ہی آئینہ ہوتا دکھائی دیتا ہے اور پھر بقول خدائے سخن کے’آنکھ ہو تو آئینہ خانہ ہے دہرمنہ نظر آتے ہیں دیواروں کے بیچ‘ کچھ کھل نہیں رہا۔ عقدہ کشائی کرنے والے کچھ اور گانٹھیں ڈال بیٹھے ہیں یا پھر’’مٹ گیا کھلنے میں اس عقدہ کا وا ہو جانا۔ یہ قتل و غارت بھی نہ جانے کہاں رکے گی
مزید پڑھیے


ایسا کیچ تو میری نانی بھی پکڑ سکتی تھی

منگل 18 جون 2019ء
سعد الله شاہ
ہمارے پاس حیرانی نہیں تھی ہمیں کوئی پریشانی نہیں تھی ہمیں ہونا تھا رسوا‘ ہم ہوئے ہیں کسی کی ہم نے بھی مانی نہیں تھی ’’محبتوں میں تعصب تو در ہی آتا ہے۔ ہم آئینہ نہ رہے تم کو روبرو کر کے ’’بات یوں ہے کہ ہم اپنے وطن سے وابستہ ہر شے سے وابستہ و پیوستہ ہی نہیں بہت جذباتی اور جنونی ہیں۔ تمام معیارات کو پس پشت ڈال کر سوچتے ہیں۔ اب آپ کرکٹ کے معاملہ ہی کو لے لیجیے کہ ہم اپنی محبت میں سامنے کی چیز ماننے کے لئے تیار نہیں کہ بھارت کی کرکٹ ٹیم ہم سے بدرجہا بہتر
مزید پڑھیے


اللہ کے مہمانوں کی خدمت

پیر 17 جون 2019ء
سعد الله شاہ
ڈائریکٹر حج ریحان کھوکھو نے جب اپنی معروضات کے اختتام پر ہمارے دوست شاکر شجاع آبادی کے دو اشعار پڑھے تو ہمیں بہت اچھا لگا: تو محنت کرتے محنت داصلہ جانے خدا جانے تو دیوا بال کے رکھ چا ہوا جانے خدا جانے ایہہ پوری تھیوے نہ تھیوے مگر بے کارنئیں ویندی دعا شاکر توں منگی رکھ دعا جانے خدا جانے ان خوبصورت اشعار کے پس منظر میں ان کا وہ جذبہ تھا جو اللہ کے مہمانوں کی خدمت کے لئے کمربستہ اور توانا رکھتا ہے۔ حج پر جانے والوں کو وزارت حج کی طرف سے ٹریننگ سیشن میں مدعو کیا گیا تھا۔ جون کی
مزید پڑھیے


کرکٹ سے سیاست ‘سیاست سے کرکٹ

هفته 15 جون 2019ء
سعد الله شاہ
مظفر آباد سے تعلق رکھنے والا خوبرو ڈاکٹر جو ایک اوریجنل شاعر بھی ہے کرکٹ کے بخارمیں مبتلا ہے۔ سوشل میڈیا پر سب سے زیادہ پوسٹیں اس کی ہوتی ہیں۔ اس کی پیش گوئیاں کچھ درست بھی ہوتی ہیں مگر پاکستان بڑے بڑے نجومیوں کی پیش گوئیوں پر خاک ڈال دیتا ہے۔ سری لنکا سے ہمارا میچ بارش کی نذر ہوگیا یہ بارش ویسٹ انڈیز کو بھی لے بیٹھی یہ معاملہ اگر ہمارے ہاں پیش آتا تو دنیا کیا کچھ کہتی کہ موسم کو ذہن میں کیوں نہیں رکھا اب معاملہ ان کاہے جن کے پاس محکمہ موسمیات کے جدید
مزید پڑھیے


دریا کو اپنی موج کی طغیانیوں سے کام

منگل 11 جون 2019ء
سعد الله شاہ
ہو جاتی ہیں ساری باتیں آ کر میری بات میں گم سب کچھ مجھ سے باہر ہے اور میں ہوں اپنی ذات میں گم یہ کیسی خوش فہمی ہے جو غلط فہمی سے بھی زیادہ نقصان دہ ہے۔ یہ ایک بیماری ہے کہ جب انسان اپنے آپ کو کائنات کا یا زمانے کا محور جاننے لگے بس سمجھئے کہ گردش نے اسے بھی گھما دیا ہے لیکن یہ خوش گمانی یقینا اس ڈوگی کی طرح ہے جو اکثر کسانوں کے گڈے کے نیچے چلتا جاتا ہے اور اس کا خیال یہی ہوتا ہے کہ اس گڈے کو بیل نہیں کھینچ رہے بلکہ
مزید پڑھیے