BN

سعد الله شاہ



کچرا کچرا کراچی اور مصطفی کمال


’’محوِ حیرت ہوں کہ دنیا کیا سے کیا ہو جائے گی‘‘ حیرت تو اس بات پر ہوتی ہے کہ کراچی جیسا عروس البلاد اور روشنیوں کا شہر گردانا جاتا تھا، اب کچرا کچرا کراچی کیسے بن گیا۔ اتفاق سے میں مصطفی کمال کی زبانی کہانی سنی تو سمجھ میں آیا کہ ان گند پسند لوگوں کے عزائم کیا ہیں۔ اتفاق سے کچھ عرصہ قبل میں عافیہ صدیقی کی رہائی کے لیے قائم جرگہ میں شریک ہوا کہ محترمہ ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے بلایا تھا تو وہاں میں نے دیکھا کہ سچ مچ سڑکوں کا کوئی پرسانِ حال نہیں تھا تا
جمعرات 05  ستمبر 2019ء

کشمیریوں کی عملی طور پر مدد کیسے کی جائے

منگل 03  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
دشت کی پیاس بڑھانے کے لئے آئے تھے ابر بھی آگ لگانے کے لئے آئے تھے ایسے لگتا ہے کہ ہم ہی سے کوئی بھول ہوئی تم کسی اور زمانے کے لئے آئے تھے مجھے اسی تناظر میں بات کرنا تھی کہ کل بارش اتری تو بجلی غائب ہو گئی۔ بارش تو دو تین گھنٹے برسی مگر بجلی چھ سات گھنٹے غائب رہی۔میں مرغزار کالونی کی بات کر رہا ہوں۔ یہاں م کے اوپر زبر ہے تو اس کا مطلب سبزہ زار ہوا اور اسے بارش کی ضرورت تو ہوتی ہے۔ مگر بجلی کے بغیر تو سارے برقی آلات بند ہو جاتے ہیں اور
مزید پڑھیے


کشمیر اور حاجیوں کا استقبال

اتوار 01  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
ابھی تک سفر کی تھکاوٹ ہے۔ اٹھتے ہی اپنا اخبار 92نیوز دیکھا تو آنکھوں میں چمک آئی۔ ہارون الرشید صاحب کا کالم ’’کوئی کوئی‘ خال خال‘‘ پڑھا تو میں نہال ہو گیا کیا کریں ہم جیسوں کی خوراک یہی ہے وہ نثر کب لکھتے ہیں۔ شاعری کرتے ہیں اور وہ بھی پر مغز۔ پتہ نہیں ان کے اندر کتنے زمانے سانس لیتے ہیں۔ مکہ میں بھی اکثر حجاج کشمیر کے حوالے سے پوچھتے۔ میرا بیٹا عمیر بن سعد ایئر پورٹ پر لینے آیا تو آپ یقین مانیے میری بیگم نے سب سے پہلے کشمیر کے حوالے سے موجودہ صورتحال
مزید پڑھیے


مکہ سے جدائی کا وقت

هفته 31  اگست 2019ء
سعد الله شاہ
29اگست کی رات ہمیں جدہ ایئر پورٹ پہنچنا ہے۔ موقع غنیمت جانا اور میں بیگم اور بہن کے ساتھ حرم پہنچا اور وہاں کی دل آرا اور روح پرور فضا میں تہجد ادا کی۔ اللہ مانگنے والوں کو پسند کرتا ہے اور چاہنے والوں سے پیار کرتا ہے اگر وہ قبول نہ بھی کرے تو دوسرا در کون سا ہے۔اقبالؔ یاد آتے ہیں ؎ ترے عشق کی انتہا چاہتا ہوں مری سادگی دیکھ کیا چاہتا ہوں مگر یہ آرزو رکھنا ہی تو اعلیٰ ظرفی ہے بہرحال میں آج تو خانہ کعبہ کو آنکھ بھر کے دیکھنے گیا جبکہ اس پر
مزید پڑھیے


مکہ سے رخصتی کے لمحات

بدھ 28  اگست 2019ء
سعد الله شاہ
میں تہی دست ہوں اور بارہا یہ سوچتا ہوں اس طرح لوگ کہاں لوٹ کے گھر جاتے ہیں میری تمنا ہی نہیں مجھ پہ فرض بھی تھا اللہ کے گھر کی زیارت کر کے ذہن و دل کو آسودگی سے ہمکنار کیا جائے ویسے تو بلاوے اور قبولیت کی بات ہے مگر دنیا کے جھمیلے اور روز مرہ کے کام کاج اور پھر سب سے بڑھ کر شیطان اس فریضہ حج کی طرف سے غافل رکھتا ہے کہ یہ کر لو اور وہ کر لو۔ پھر اسی یہ اور وہ میں بندہ اگلے جہان سدھار جاتا ہے۔ بس اللہ توفیق دے دے
مزید پڑھیے




مکہ کے شب و روز

منگل 27  اگست 2019ء
سعد الله شاہ
پاکستان سے سعودی عرب میں آئے تو یہاں بھی ایک تبدیلی کا ہم نے سامنا کیا کہ دو انتہائوں پر رہنا پڑا جس کے کہ ہم عادی نہیں تھے ہوٹل کے کمرے ٹھنڈے تھے اور باہر چمکتی اور کڑکتی دھوپ بلکہ سائے میں بھی تپش کا احساس یہاں آ کر صرف عارضی تبدیلی نہیں تھی بلکہ مستقل موسم ہی مختلف تھا یہاں کے لوگ اس میں رہنے کے عادی ہیں کہ ان کی گاڑیاں گھر اور دفاتر ایئر کنڈیشنڈ ہیں ہمارے لئے تو یہ ایک آزمائش ہی تھی کوئی کہاں تک سرد کمروں میں بیٹھا رہے۔ کچھ لوگ تنگ آ
مزید پڑھیے


طواف زیارہ اور سعی

هفته 24  اگست 2019ء
سعد الله شاہ
آج مجھے ذکر کرنا ہے طواف زیارہ کا کہ یہ حج کا تیسرا اور آخری فرض ہے اس سے قبل پہلا نیت اور دوسرا وقوف عرفات جس کا تذکرہ ہو چکا۔ باقی چھ وجوب یعنی واجب ہیں پہلا وقوف مزدلفہ‘ دوسرا شیطان کو کنکریاں ‘ تیسرا قربانی چوتھا حلق یعنی ٹنڈ‘ پانچواں طواف زیارہ کی سعی اور چھٹا طواف زیارہ یعنی آخری طواف آنے کے وقت۔ شیطان کو کنکریاں مارنے کا ذکر میں نے کیا تھا کہ تیسری مرتبہ بھی ہم نے چوتھی منزل یا ٹریک پر آ کر تینوں شیطانوں کو سات سات کنکریاں ماری تھیں۔ ہم اب کے
مزید پڑھیے


شیطان کو کنکریاں

جمعرات 22  اگست 2019ء
سعد الله شاہ

مزدلفہ سے ہم پیدل ہی منیٰ ون کے لئے روانہ ہوئے کہ ٹرین تک پہنچنا اچھا خاصا دشوار تھا۔ ایک ہجوم تھا کہ سولنگ ٹریک پر چلتا جا رہا تھا۔ لوگوں کے رات قیام کے باعث جوس کی خالی بوتلیں قدم قدم پر بکھری پڑی تھیں جو ہمارے مزاج اور عادت کی غماضی کر رہی تھیں۔ ہم جہاں قیام کریں وہاں گند کیوں نہ پڑے۔ الجھن ہوتی رہی مگر سب ایک جذبے کے ساتھ چل رہے تھے کہ صبح کی تازگی بھی شامل حال تھی۔ پھر دھوپ بھی نکل آئی۔ ذکر اذکار کرتے تسبیہ اوردرود شریف پڑھتے قافلہ آگے بڑھتا
مزید پڑھیے


مزدلفہ کا حال

بدھ 21  اگست 2019ء
سعد الله شاہ
میرے پیارے قارئین! میں نے پچھلے کالم میں مزدلفہ کا حال لکھنے کا وعدہ کیا تھا۔ عرفات سے ہم جیسے نکلے وہ آپ پڑھ چکے کہ اکثر لوگوں کو ٹرین پر سوار ہونے کے لیے 5گھنٹے انتظار کرنا پڑا۔ بوڑھوں کے لیے تو یہ حشر سامانی جیسے تیسے ہم لوگ منیٰ کے سٹیشن اتر گئے۔ یہاں پل سے ایک طرف منیٰ ہے دوسری طرف مزدلفہ۔ کچھ اس طرح کی صورت حال تھی رات آنکھوں میں تیر رہی تھی تھکن سے برا حال۔ وہ دو نمازیں مغرب اور عشا کی جو ہم نے مزدلفہ آ کر ادا کرنا تھیں بہت لیٹ
مزید پڑھیے


منیٰ سے عرفات اور طوفانی جھکڑ

منگل 20  اگست 2019ء
سعد الله شاہ
میں نے وعدہ کیا تھا کہ منیٰ کے بعد میں تفصیل سے حج کے حوالے سے لکھوں گا۔ منیٰ کا تو تذکرہ ہو چکا کہ 64لوگوں کے لیے ایک خیمہ تھا اور عورتوں کے لیے 100عورتیں ایک خیمہ میں تھیں خیموں کی تعداد معلوم نہیں۔ وہاں سے ہمیں ظہر، عصر، مغرب اور عشاء پڑھ کر نکلنا تھا۔ اگرچہ اگلے روز کی فجر سنت میں شامل ہے مگر ہمیں بتایا گیا کہ وقوف عرفات کے خطا ہونے کے ڈر سے رات ہی کو عرفات کے لیے کوچ کر لیا جائے گا۔ فرض کا ادا کرنا ضروری ہے۔ ہمارے پاس تو ٹرین کے
مزید پڑھیے