BN

شازیہ ذیشان


نہ تیرا ہے، نہ میرا ہے


یہ میرا ہے، یہ تیرا ہے۔ مجھے یہ بھی چاہیے، مجھے وہ بھی چاہیے۔ مجھے دنیا کی ہر آسائش چاہیے، مجھے اپنی ہر خواہش چاہیے۔کاش! ایسا ہو جائے۔ کاش! ویسا ہو جائے! کاش! میں اس دنیا پر راج کر سکوں! جی ہاں! یہ انسانی فطرت ہے، لیکن کبھی کسی نے یہ سوچا کہ اس دنیا میں سب کچھ حاصل کر لینے کے بعد بھی ہمارا کچھ بھی نہیں ہوتا؛ سب کچھ اس فانی دنیا میں رہ جاتا ہے۔اس دنیا میں ہماری زندگی ایک ٹرین کی مانند ہے؛ جیسے ٹرین میں کوئی مسافر سوار ہوتا ہے، تو کوئی اپنا پلیٹ فارم
بدھ 14 اکتوبر 2020ء

ضد اور انا کا دریا سب بہا لے جائے گا

بدھ 07 اکتوبر 2020ء
شازیہ ذیشان
دنیا میں کئی ضدی اور انا پرست حکمران گزرے ہیں اور تاریخ گواہ ہے کہ ان حکمرانوںکی ضد اور انا ہی ان کی حکمرانی کے خاتمے کا سبب بنی ؛اس لیے اگر یہ کہا جائے کہ ضد اور انادونوں میں انسان کا نقصان ہے، تو غلط نہ ہو گا۔ کہا جاتا ہے کہ عقل دلیل مانگتی ہے، جبکہ ضد اور انا دونوںاندھی پیروی چاہتے ہیں، چاہے یہ پیروی نفس کی ہو یا کسی شخص کی ہو ، یہ پیروی بغیر کسی دلیل کے ہوتی ہے، یعنی ضد اور انا ایسی بیماریوں کے نام ہیں، جو
مزید پڑھیے


ہاتھی کے دانت کھانے کے اور دکھانے کے اور

بدھ 30  ستمبر 2020ء
شازیہ ذیشان
ہفتہ رفتہ جب آل پارٹیز کانفرنس(اے پی سی) کا اعلان ہواتو یقین کریں مجھے بالکل کوئی حیرانی نہیں ہوئی، کیونکہ اس سے پہلے بھی اپوزیشن کی اے پی سی ، نشتند، گفتند، برخاستندکے سوا کچھ نہیں تھی اور رہی بات اپوزیشن کے نئے اتحاد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ ( پی ڈی ایم) کی، تو اس کا بھی کچھ ایسا ہی انجام ہوتا نظر آتا ہے، جیسا کہ ماضی میں مولانا فضل الرحمان کے دھرنے کا ہوا۔سیاسی مبصرین کا یہ کہنا بالکل بجا ہے کہ حالیہ اپوزیشن اتحاد بھی حکومت کے لیے کسی قسم کا خطرہ نہیں بن سکتا، تاہم اگر
مزید پڑھیے


نفسیاتی اپاہج پن

بدھ 23  ستمبر 2020ء
شازیہ ذیشان
10 ستمبر کو جب 92 نیوز کے پروگرام’’ نائٹ ایڈیشن ‘‘کی ریکارڈنگ کے لیے دفتر آ رہی تھی تو گاڑی ڈرائیو کرتے ہوئے میرے ذہن میں ایک ہی خیال بار بار آ رہا تھا کہ ابھی ابھی جو نیوز بلیٹن سنا اور تمام ٹی وی چینلز پر گزشتہ رات لاہور موٹر وے پہ رونما ہونے والے سانحے پر اپنے پروگرام میں کیا بات کروں اور پروگرام کا آغاز کن الفاظ میں کروں؟ کیونکہ بطور خاتون شاید میرے اندر فیمینیزم کی تحریک بھی ابھر رہی تھی۔میرے ذہن میں ایک ہی جملہ بار بار دستک دے رہا تھا کہ بنت ِ حواآج
مزید پڑھیے