BN

عبداللہ طارق سہیل



تنکا بھر اپوزیشن


بہت سے حکومتی وزیروں نے مریم نواز کے باہر جانے کی اطلاعات کا خیر مقدم کیا ہے اور اظہار مسرت کیا ہے کہ نواز شریف کے بعد اب مریم بھی مائنس ہونے والی ہیں۔ گویا خدا کا شکر کہ جس نے یہ مبارک دن دکھایا۔ ایک وزیر صاحب وہی جو درود شریف پڑھنے کے بعد ’’سچ‘‘ بولنے کے لئے مشہور ہیں۔ اس اظہار مسرت پر اضافہ کرتے ہوئے یوں گویا ہوئے کہ اچھا ہے یہ سب باہر چلے جائیں تاکہ ہم کام کر سکیں۔ دوسرے لفظوں میں انہوں نے ایک بہت اہم راز سے پردہ اٹھا دیا۔ اس راز سے کہ
منگل 10 دسمبر 2019ء

غدار کہیں کا!

پیر 09 دسمبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
واقف کاروں میں ایک صاحب راسخ العقیدہ محب وطن ہیں۔ ان کی کرم فرمائی ہے کہ دو اڑھائی ہفتوں میں ایک آدھ بار تشریف لاتے ہیں اور شرف زیارت سے مشرف فرماتے، محب الوطنانہ گفتگو سے سرافراز فرماتے ہیں۔ چار کنال کی حویلی میں رہتے ہوئے چل کر ایسے کے پاس آنا جو آٹھ مرلے کے کرائے کے گھر میں رہتا ہو، ان کی عظمت کردار کی کھلی نشانی نہیں تو اور کیا ہے۔ سخت گیر محب وطن ہونے کے باوجود لہجے میں اعتدال ہے۔ کسی مخالف کو غدار نہیں کہتے، بس یہ کہنے پر اکتفا کرتے ہیں کہ تمہاری
مزید پڑھیے


جتنی بلائیں آئیں، سی پیک کے بعد آئیں

منگل 03 دسمبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
تحریک انصاف نے اپنے بانی رکن حامد خان کی رکنیت معطل کردی ہے اور حکم نامے کا انداز بیان بتلاتا ہے کہ بات یہیں تک نہیں رکے گی، اخراج تک جائے گی۔ پارٹی حکم نامے میں حامد خان پر الزام لگایا گیا ہے کہ انہوں نے من گھڑت بیانات دیئے۔ من گھڑت الزامات کی اصطلاح تو سنی تھی، من گھڑت بیانات کا پہلی بار سنا۔ گویا حامد خان کو من گھڑت نہیں کسی اور کے گھڑت بیانات دینے چاہئیں تھے۔ پارٹی نے من گھڑت بیانات کی تفصیل نہیں بتائی کہ آخر ان میں کیا کہا گیا تھا لیکن ظاہر ہے
مزید پڑھیے


مافیا ساتھ دے گا

پیر 02 دسمبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
ہیں کواکب کچھ نظر آتے ہیں کچھ کا معاملہ تو ہمارے ہاں اکثر رہا۔ آرمی چیف کی توسیع کے معاملے نے جو متوقع یا غیر متوقع شکل اختیار کی۔ اس پر بھی بعض لوگ اسی قسم کی کوڑی لائے۔ پتہ نہیں یہ دور کی تھی یا نزدیک کی۔ معاملہ اتنا خاص نہیں تھا لیکن خاص بن گیا۔ حکومت نے توسیع دی تو پتہ چلا کہ اس کے پاس تو اب کوئی اختیار یا قانون ہے ہی نہیں؛چنانچہ معجزہ ظہور میں آیا۔ عدالت نے توسیع دے دی اور کہہ دیا کہ چھ مہینے میں قانون بنا لو۔ چھ مہینے تو بہت
مزید پڑھیے


شرح سود کا ایجنڈا

منگل 26 نومبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
ایک معاصر میں چھپنے والی خبر کے مطابق معاشی ماہرین نے حیرت ظاہر کی ہے کہ سٹیٹ بنک نے نئی پالیسی میں سود کی شرح کم کیوں نہیں کی۔ یہ شرح پہلے ہی خطے بھر میں سب سے زیادہ ہے اور اس کی وجہ سے حالات خراب سے خراب تر ہوتے جا رہے ہیں۔ خطے بھر ہی میں نہیں، پاکستان کی تاریخ میں بھی اتنی زیادہ شرح ایک ریکارڈ ہے اور احباب کے غور فرمانے کا ایک مقام ہے کہ جن ادوار میں یہ شرح کم تھی تو ہمارے محب وطن اور نیکوکار تجزیہ نگار دہائی دیا کرتے تھے کہ
مزید پڑھیے




دھاندلی نہ ہونے کا درست دعویٰ

پیر 25 نومبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
امریکہ نے سی پیک کیخلاف جلے دل کا پھپھولا پھر پھوڑا ہے اور پاکستان کو چینی سرمایہ کاری سے ڈرایا ہے۔ امریکی معاون وزیر خارجہ ایلس ویلز کے بیان سے ان پاکستانی احباب کی حوصلہ افزائی ہوئی ہو گی جو 2014ء سے سی پیک کے خلاف بھرے بیٹھے ہیں۔ امریکی بیان کا جواب پاکستان کی طرف سے چین نے دیا۔ امریکی مہم ان خبروں کے بعد شروع ہوئی جن سے یہ شبہ ہوتا ہے کہ شاید پاکستان پھر سے سی پیک پر کام شروع کرنے والا ہے۔ عملاً یہ منصوبہ چودہ ماہ سے معطل ہے۔ اگرچہ خبریں اس طرح سے چھپتی
مزید پڑھیے


امانت کا گفٹ باکس

پیر 18 نومبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
مولانا فضل الرحمن کا دھرنا گرجتے گونجتے سونامی کی طرح اسلام آباد داخل ہوا۔ دارا و سکندر کے لشکر کی طرح چودہ روز اپنی جگہ جما رہا اور پھر بادنسیم کے بے آواز جھونکے کی طرح پلٹ گیا ع کہ دھرنا بود رسیدہ ولے بخیر گزشت ایک طرف اتنا بڑا ہجوم حکومت کو پورے چودہ روز تک ڈراتا سہماتا رہا تو دوسری طرف باخبر ذرائع نے عوام کو دہلائے رکھا کہ خونیں تصادم اب ہوا کہ تب ہوا۔ ’’اندر‘‘ تک رسائی کا دعویٰ رکھنے والے یہ ’’ذرائع‘‘ ایمان کامل کے ساتھ یہ اطلاع دیتے رہے کہ مولانا ڈی
مزید پڑھیے


کرتار پور کا جشن

منگل 12 نومبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
9نومبر کو ہم نے یوم کرتار پور بھر پور مذہبی عقیدت و احترام سے منایا۔ روح پرور بھنگڑوں نے ساری فضا روحانیت سے معمور کر دی ہے۔ وزیروں نے ست سری اکال کے نعرے لگا کر فضا نہال کر دی۔ بعض عناصر نے اس روز یوم اقبال منایا۔ کوئی بات نہیں۔ ع اگلے وقتوں کے ہیں یہ لوگ انہیں کچھ نہ کہو حکومت نے سکھ برادری سے مواخات کے لئے فیصلہ کیا کہ کرتار پور آنے کے لئے پاسپورٹ از ضروری نہیں۔مزید مواخات کے لئے یہ فیصلہ بھی ہوا کہ سکھوں کے علاوہ دیگر مذاہب کے لوگ بھی
مزید پڑھیے


ایران کی نئی پریشانی

منگل 05 نومبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
ملکی سیاست کی طرح عالمی سٹیج پر بھی مخالفوں کو دیے گئے بعض ’’خطابات‘‘ ہٹ ہو جاتے ہیں چند عشرے پہلے ایران کے رہبر انقلاب خمینی صاحب نے امریکہ کو شیطان بزرگ کا خطاب دیا جو بہت مقبول ہوا۔ اگرچہ ہمارے ملک میں لوگ قدرے حیرت زدہ نظر آئے کہ امریکہ کو شیطان کہنا تو ٹھیک ‘ بزرگ کہنے کا کیا مطلب۔ آہستہ آہستہ پھر انہیں پتہ چلا گیا کہ بزرگ کے معنے ’’بڑا‘‘ ہونے کے ہیں یعنی بڑا شیطان۔ ایک دلچسپ خطاب اس ہفتے پھر ایران ہی کی طرف سے آیا ہے لیکن بجائے مقبول ہونے کے باعث اشتعال بن
مزید پڑھیے


جلتی کا نام گاڑی

پیر 04 نومبر 2019ء
عبداللہ طارق سہیل
آزادی مارچ پہلے دن جلسہ تھا‘ دوسرے دن‘ تیسرے دن بھی وہیں جما رہا تو ازخود دھرنا ہو گیا۔ بنا کسی اعلان کے۔ دھرنا آنست کہ خود بگوید نہ کہ کتنے دن رہتا ہے‘ یہ پتہ نہیں دھرنے میں مولانا کی آواز الگ تھی‘ شہباز کی پرواز الگ۔ شہباز نے رہبر کمیٹی کے ایجنڈے کو ایک طرف رکھا اور صدا لگا دی‘ مجھے وزیر اعظم سلیکٹ کر لو‘ چھ ماہ میں معیشت ٹھیک نہ کر دی تو میرا نام نیازی رکھ دینا۔ یعنی شہباز شریف نیازی۔ پھر نواز شریف کو بھی نام کے ساتھ وضاحتی بریکٹ لگانا پڑے گی۔ یعنی
مزید پڑھیے