BN

عدنان عادل



پولیس بہتر کیوں نہیں ہوتی؟


اس ملک میں بڑے بڑے پاٹے خان حُکمران آئے‘ لیکن پولیس کے محکمہ کو سیدھا نہ کرسکے۔ بلکہ مرض بڑھتا گیا جُوں جُوں دوا کی۔عوام کی خواہشات کے مطابق بہتری آتی بھی کیسے؟ اس ظالم پولیس ہی کے سہارے تو صاحبانِ اقتدار کا سِکّہ چلتا ہے۔ پنجاب پولیس کی زیادتیوں اور ُپر تشدد‘ طریقے استعمال کرنے پر میڈیا میں شور برپا ہے۔گزشتہ دنوں تین چار واقعات میں چند ملزم پولیس کی تحویل میں ہلاک ہوگئے۔ الزام ہے کہ پولیس نے انہیں بہیمانہ تشدد کرکے مار ڈالا۔ رحیم یار خان میں اے ٹی ایم مشین توڑ کر روپے چُرانے والا صلاح
اتوار 15  ستمبر 2019ء

کربلا کی عصری معنویت

اتوار 08  ستمبر 2019ء
عدنان عادل
محرم الحرام اکسٹھ ہجری میں کربلا کے مقام پر پیش آنے والے واقعہ کی متعدد تشریحات کی جاچکی ہیں اور کی جاتی رہیں گی۔ اسلامی تاریخ کا یہ دلدوز معرکہ اپنی اہمیت کے اعتبار سے اتنا اہم اور ایسی گہرائی کا حامل ہے کہ ہر عہد کربلا کی ایک نئی معنویت دریافت کرتا ہے۔ دور حاضر میں ہر مذہب‘ نسل اور قوم کا کچھ بنیادی انسانی حقوق کے تحفظ اور احترام پر اتفاق ہے۔ آج سے ستّر برس پہلے دو بڑی ہولناک عالمی جنگوں میں کروڑوں افراد لقمہ اجل بن چکے تھے۔ انسانی ضمیر جنگوں کی تباہ کاریوں تلے سسکیاں
مزید پڑھیے


پولیو کے خلاف جہاد

اتوار 01  ستمبر 2019ء
عدنان عادل
بنوں ڈویژن میں خطرے کی گھنٹیاں بج رہی ہیں، جہاں بچوں میں پولیو کا مرض خطرناک صورت اختیار کرچکا ہے۔ گزشتہ آٹھ مہینوں میں یہاں پولیو سے متاثر اکتیس بچوں کی تصدیق ہوچکی ہے۔ صوبہ خیبر پختونخواہ میںاس سال پولیو کے چوالیس مریض بچے سامنے آچکے ہیں۔ اس کے برعکس گزشتہ پُورے سال میں ملک بھر میں ان مریضوں کی تعداد صرف بارہ تھی۔ پولیو وائرس سے پھیلنے والا وبائی مرض ہے۔ یہ صرف بنوں تک محدود نہیں رہے گا۔ اگر بنوں میں اس کی بیخ کنی نہ کی گئی تو یہ اس سے متصل علاقوں سے ہوتا ہُوا
مزید پڑھیے


سی پیک کی رفتار تیز کریں!

اتوار 25  اگست 2019ء
عدنان عادل
چند ہفتے پہلے چینی کمپنیوں نے پاکستان میں دو بڑے ترقیاتی منصوبے مکمل کیے۔ بلوچستان کے علاقہ حب میں کوئلہ سے بجلی بنانے کا پلانٹ اور دوسرے ملتان سے سکھر تک موٹروے۔ دونوں منصوبے چینی سرمائے سے تعمیر کیے گئے۔ یہ کامیاب منصوبے اُس منفی پراپیگنڈے کی قلعی کھولنے کے لیے کافی ہیں جو پاکستان میں چینی سرمایہ کاری کے خلاف ایک مخصوص لابی پھیلاتی رہتی ہے کہ یہ پاکستان پر ایک بوجھ ہے۔ مخالفین کو اصل خطرہ یہ نہیں ہے کہ ہم چین کے دست نگر ہوجائیں گے بلکہ امریکہ اور اسکے زیر اثر مالیاتی اداروں کے چُنگل سے
مزید پڑھیے


معاشی ترقی کا چیلنج

اتوار 18  اگست 2019ء
عدنان عادل
بلاشبہ‘ اس وقت ملک کے معاشی حالات خراب ہیں۔ عوام کو افراط زر‘ کاروباری مندی اور بیروزگاری ایسی بلاوں نے ایک ساتھ گھیر لیا ہے۔ حکومت تسلی دے رہی ہے کہ یہ معاشی استحکام کا مرحلہ ہے جو ایک سال تک گزر جائے گا‘ اسکے بعد ترقی کا سفر شروع ہوجائے گا لیکن عوام کا اضطراب بڑھتا جارہا ہے۔ اسٹاک مارکیٹ دو سال کی مدت میں چوبیس ہزار درجے نیچے آچکی ہے۔ یہ گراوٹ اس بات کی نشان دہی کرتی ہے کہ سرمایہ کار مال لگانے کو تیار نہیں اور معیشت کی نمو بہت کم رہ گئی ہے۔ عالمی مالیاتی
مزید پڑھیے




کشمیرمزاحمت سے آزاد ہوگا

اتوار 11  اگست 2019ء
عدنان عادل
کشمیر پر پاکستانیوں کے دل اُداس ہیں۔ بھارت کے تازہ اقدام کے بعد لوگوں میں ایک بے بسی کا احساس ہے۔ قوم چاہتی ہے کہ کشمیری بھائیوں کی مدد کیلیے ہماری ریاست اور حکومت نتیجہ خیز اقدامات کریں۔ انہیں ظالم بھارتی سامراج سے آزادی دلائیں۔ پانچ اگست کے بعد پاکستان نے بعض اہم اقدامات کیے۔ پارلیمان کے مشترکہ اجلاس نے بھارتی اقدام کے خلاف متفقہ قرار داد منظور کی‘ حکومت نے بھارت سے دو طرفہ سفارتی تعلقات کی سطح کم کی‘ دونوں ملکوں کے درمیان بس‘ ریل سروس اور تجارت بند کی۔ ان فیصلوں کے ذریعے بھارت سے پاکستانی عوام
مزید پڑھیے


تمباکو‘ سگریٹ لابی کا زور

اتوار 04  اگست 2019ء
عدنان عادل
ہمارے ملک میں اڑھائی کروڑ افراد تمباکو نوشی کرتے ہیں‘ زیادہ تر سگریٹ نوشی۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق ہمارے بیس فیصد بالغ افراد تمباکو کے نشہ میں مبتلا ہیں۔ گزشتہ سال تقریبا پونے دو لاکھ افراد اس نشہ سے پیدا ہونے والی موذی بیماریوں کے باعث موت کے منہ میں چلے گئے۔ جو شخص ایک آدمی کو قتل کرے تو اسے قاتل کہا جاتا ہے‘ اور جو چیز لاکھوں لوگوں کی موت کا باعث بنے اسے کیا کہیں گے؟ تمباکو‘ سگریٹ کا کاروبار کرنے والے اتنے طاقتور ہیں کہ ہر حکومت اس کی روک تھام کرنے میں
مزید پڑھیے


پٹڑی سے اُتری ریلوے

اتوار 28 جولائی 2019ء
عدنان عادل
دنیا بھر میں ریل گاڑی کا سفر محفوظ ترین سمجھا جاتا ہے لیکن پاکستان میں ٹرینوں کے حادثے آئے دن کا معمول ہیں۔کبھی دو ریل گاڑیوں کی ٹکر ہوجاتی ہے‘ کبھی چلتی ٹرین کے ڈبے پٹڑی سے اُتر جاتے ہیں‘ کبھی ر یلوے پھاٹک پر موٹر گاڑی اور ٹرین میں ٹکر ہوجاتی ہے۔ ان حادثات میں درجنوں لوگ لُقمہ اجل بن جاتے ہیں۔ ایک واقعہ کے بعد چند دن میڈیا پر شور بپا رہتا ہے‘ پھر اگلے ایکسیڈنٹ تک سب کچھ بھُلا دیا جاتا ہے۔ چند ہفتے پہلے صادق آباد کے قریب ایک مسافر ٹرین اسٹیشن پر پہلے سے کھڑی
مزید پڑھیے


ٹیکس چوری کا کلچر

اتوار 21 جولائی 2019ء
عدنان عادل
لاہور میں میرے ہئیر ڈریسر عثمان صاحب ایک چھوٹی سی دکان کے مالک ہیں۔ بال سنوارنے کے ساتھ ساتھ پراپرٹی کا کام بھی کرتے ہیں۔ بال بناتے ہوئے مجھ سے سماجی و سیاسی مسائل پرگفتگو کرتے رہتے ہیں۔ چند ماہ پہلے اچانک پوچھنے لگے ’میرے پاس دس لاکھ روپے ہیں۔ میں ان کے ڈالر خرید لوں؟ آجکل ڈالر بہت اوپر جارہا ہے۔‘ میں ذرا چونکا کہ انکے پاس سرمایہ کاری کے لئے اتنی رقم موجود ہے جو میرے پاس بھی نہیں حالانکہ وہ سال میں ایک روپیہ بھی انکم ٹیکس نہیں دیتے جبکہ میں گزشتہ بیس برسوں سے باقاعدہ
مزید پڑھیے


اکیس سے بیالیس کروڑ

اتوار 14 جولائی 2019ء
عدنان عادل
ہم بحیثیت قوم سیاست کی لفظی جنگوں‘ مناظرہ بازیوں میں اس قدر الجھے ہوئے ہیں کہ معاشرہ کے ٹھوس مسائل کے بارے میں سوچنے‘ بات کرنے کیلیے وقت نہیں نکال پاتے۔ جو اجتماعی معاملات ہماری بقا اور خوشحالی سے متعلق ہیں ہم اُن پر بہت کم توجہ دیتے ہیں۔ ملک کی تیزی سے بڑھتی ہوئی آبادی ایسے مسائل میں سے ایک ہے۔ پاکستان بننے سے ابتک ہماری آبادی میں سترہ کروڑ افراد کا اضافہ ہوچکا۔72 برس پہلے اس خطہ میں تقریبا پونے چار کروڑ انسان آباد تھے۔ اب پونے اکیس کروڑ ہیں۔ نتیجہ یہ کہ دستیاب پانی میں
مزید پڑھیے