BN

عدنان عادل


ہانگ کانگ پر چین کی گرفت


چین کی بڑھتی ہوئی اقتصادی‘ عسکری اور سیاسی طاقت سے خوفزدہ امریکہ نے اسکے خلاف ایک مہم شروع کی ہوئی ہے۔اسکو عدم استحکام سے دوچار کرنے کی غرض سے ایک اہم مقام ہانگ کانگ ہے جو جنوبی بحیرہ چین کے اہم بحری تجارتی راستے پراس ملک کی شہ رگ کی حیثیت رکھتا ہے۔ گزشتہ بر س جون میں امریکہ اور برطانیہ نے یہاں اپنے ایجنٹوںکے ذریعے ایک احتجاجی تحریک شروع کروائی جسے فی الحال چین نے کامیابی سے کنٹرول کرلیا ہے اور شورش برپا کرنے والے گروپ پسپا ہوکر خاموش ہوگئے ہیں۔ ہانگ کانگ مشرقی ایشیا میں واقع جنوبی بحیرہ چین
اتوار 26 جولائی 2020ء

مثبت اشاریے

بدھ 22 جولائی 2020ء
عدنان عادل
ملک پر چھائے کالے بادل چھٹ رہے ہیں۔ روشنی کی کرنیں نمودار ہورہی ہیں۔کورونا وبا تیزی سے کم ہورہی ہے۔ معیشت میں مثبت رجحانات واضح ہورہے ہیں۔ اسٹاک مارکیٹ بڑھتی چلی جارہی ہے۔ بیرونی سرمایہ کاری میں اضافہ ہوا ہے۔ملک میں آنے والی ترسیلاتِ زر بڑھ گئی ہیں۔ چین کی شراکت سے سی پیک منصوبوں پر عمل درآمد تیز ہوگیا ہے۔ ملکی سرمایہ کاروں کیلئے بینکوں کی شرح ِسود بہت کم کردی گئی ہے۔ دوبرس پہلے ملک زر مبادلہ کے شدید بحران کا شکار تھا۔ بیرون ملک سے لیے گئے قرضوں کی ادائیگی کے لیے قومی خزانہ میں ڈالرز نہیں
مزید پڑھیے


متناسب نمائندگی کی خوبیاں‘ خامیاں

اتوار 19 جولائی 2020ء
عدنان عادل
ملک میں حکمرانی کے نظام سے عوام الناس کا ایک بڑا طبقہ ناخوش رہتا ہے اور گاہے گاہے یہ بحث چل پڑتی ہے کہ موجودہ سیاسی‘ انتخابی سسٹم کو بہتر کیسے بنایا جائے۔ کچھ لوگوں کا خیال ہے کہ ہمارے انتخابی نظام کی نوعیت ایسی ہے جس سے قومی اور صوبائی سطح پر جو قیادت سامنے آتی ہے وہ ملک و قوم کو درپیش چیلنجوں سے نبرد آزما ہونے کی اہلیت نہیں رکھتی۔ ارکانِ اسمبلی کی اکثریت مقامی سطح کے مسائل سے زیادہ شعور و ادراک نہیں رکھتی۔ موجودہ حلقہ بندیوں پر مبنی الیکشن کاطریقہ ناکام ہوچکا ہے۔
مزید پڑھیے


الیکٹ ایبل کا شکنجہ

بدھ 15 جولائی 2020ء
عدنان عادل
ہمارے ملک کے پارلیمانی نظام سیاست میں ملک کوسینکڑوں قومی اورصوبائی حلقوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ ان انتخابی حلقوں سے منتخب ہونے والے ارکانِ اسمبلی ملک کے لیے وزیراعظم اورصوبوں کے لیے وزرائے اعلیٰ منتخب کرتے ہیں ۔ہماری تاریخ گواہ ہے کہ اس پارلیمانی نظام نے ہمارے ملک کو سخت بدانتظامی اور معاشی بدحالی سے دوچار کیا ہے ۔حلقہ بندیوں پر مبنی یہ طریقۂ انتخاب صرف جاگیرداروں ‘ قبائلی سرداروں اور شہر کے جرائم پیشہ افراد کو راس آیا ہے‘ عوام الناس کواِس سے سخت نقصان پہنچا ہے۔ہمارے ملک میں حکمرانی کے بیشتر مسائل اور خرابیوںکی جڑ یہ انتخابی
مزید پڑھیے


تھانہ کی اصلاح

اتوار 12 جولائی 2020ء
عدنان عادل
پاکستان کی پولیس کو جو بیماری لاحق ہے ا سکا مرکز تھانہ ہے لیکن جب بھی پولیس اصلاحات کی بات ہوتی ہے تو پولیس اسٹیشن کونظر انداز کردیا جاتا ہے۔ ملک کے طول و عرض میں پھیلے تقریباًڈیڑھ ہزار تھانے وہ ستون ہیں جن پر نہ صرف پولیس اسٹبلیشمنٹ کی عمار ت کھڑی ہے بلکہ پاکستانی ریاست کی عملداری بھی اِن کے دم سے قائم ہے۔ ملک کے چاروں صوبوں‘آزاد کشمیر‘ گلگت بلتستان میں مجموعی طور پر پانچ لاکھ پولیس فورس ہے جس میں اکثریت جونئیر افسروں اور اہلکاروں کی ہے۔ عوام کا واسطہ اُنہی سے پڑتا ہے۔ اعلیٰ افسران
مزید پڑھیے



پولیس اصلاحات کا سبز خواب

بدھ 08 جولائی 2020ء
عدنان عادل
وزیر اعظم عمران خان کے انتخابی منشور میں ایک بڑا وعدہ یہ تھا کہ وہ پولیس کے نظام کی خرابیاں دُور کرکے اسے عوام کی خدمت کا ادارہ بنائیں گے۔ وہ اکثر خیبر پختونخواہ کی پولیس کا حوالہ دیا کرتے تھے جہاں تحریک انصاف کی صوبائی حکومت نے انکے بقول پولیس کو سیاسی اثر و رسوخ سے پاک کرکے ایک مثالی ادارہ بنادیا تھا ۔ تاہم گزشتہ دو برسوںسے وفا ق اور پنجاب میںانکی حکومت ہے لیکن وہ اب تک پولیس کی بہتری کے لیے کچھ بھی نہیں کرسکے۔ان کے دور میں پنجاب میں چار انسپکٹر جنرل پولیس مقرر کیے
مزید پڑھیے


جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ

اتوار 05 جولائی 2020ء
عدنان عادل
تحریک انصاف کی حکومت نے یکم جولائی سے بالآخر جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ قائم کردیا ہے۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری کی سطح کا ایک سینئر افسراس سیکریٹریٹ کا سربراہ ہوگا۔ اٹھارہ اہم صوبائی محکموں کے اسپیشل سیکرٹری بہاولپور میں سیکرٹریٹ میں بیٹھیں گے اور ان محکموں سے متعلق اکثر و بیشتر فیصلے بہاولپور میں ہوجایا کریں گے۔ ایک ایڈیشنل انسپکٹر جنرل پولیس ملتان میں تعینات ہونگے جن کے پاس انسپکٹر جنرل ایسے اختیارات ہونگے۔ جنوبی پنجاب گیارہ ضلعوں پر مشتمل ہے جن میں بہاولپور‘ بہاولنگر‘ رحیم یار خان‘ڈیرہ غازی خان‘ راجن پور‘ لیّہ‘ مظفر گڑھ‘ ملتان‘لودھراں‘ خانیوال ‘وہاڑی شامل ہیں۔ ان تمام اضلاع
مزید پڑھیے


بجٹ منظوری کے بعد

بدھ 01 جولائی 2020ء
عدنان عادل
نئے مالی سال کے بجٹ کی منظوری سے پہلے میڈیا میں ایک سنسی خیزی کا ماحول تھا۔ قیاس آرائیاں زوروں پر تھیں کہ حکومت کو قومی اسمبلی میں بجٹ پاس کرانے کے لیے مطلوبہ ووٹ ملنا مشکل ہونگے۔ نتیجہ یہ ہوگا کہ عمران خان بطور وزیراعظم اپنے عہدہ پر قائم نہیں رہ سکیں گے کیونکہ بجٹ مسترد ہونے کو پارلیمانی طرز حکومت میں وزیر اعظم پر عدم اعتماد تصور کیا جاتا ہے۔ اپوزیشن اور حکومتی اتحادیوں دونوں نے حکومت کے خلاف ماحول بنانے میں اپنا اپنا کردار ادا کیا گو بجٹ منظور ہونے کے بعد پتہ چل گیا کہ شور
مزید پڑھیے


دِپسَینگ وادی میں کشیدگی

اتوار 28 جون 2020ء
عدنان عادل
چین اور بھارت کے درمیان مقبوضہ لداخ میں جوفوجی کشیدگی چل رہی ہے اُسکا دائرہ اب بھارت کے اہم فوجی اڈہ دولت بیگ اولڈی کے نواح میں واقع دِپسَینگ وادی تک پھیل چکا ہے۔ چین اور بھارت کی عارضی سرحد پر پین گونگ جھیل اور گلوان وادی کے بعد یہ تیسرا مقام ہے جہاں بھارت کو چین کے ہاتھوں پسپائی کا سامنا ہے۔د ِپسَینگ وادی لدّاخ کے بالکل شمال مشرقی کونہ میں ایک بہت ہی بلنداور انتہائی سرد مقام ہے ۔یہ علاقہ دفاعی اعتبار سے اس لیے اہم ہے کہ اس سے متصل شمال میں بھارت کا فوجی اڈہ دولت
مزید پڑھیے


بڑے شہروں کی اجارہ داری

بدھ 24 جون 2020ء
عدنان عادل
پاکستان میں اڑتالیس ہزار بڑے دیہات اور تقریباً چار سو چھوٹے شہر ہیں لیکن ان سب پر پانچ بڑے شہروں کی حکمرانی ہے۔ اسلام آباد‘لاہور‘ کراچی ‘پشاور اور کوئٹہ میں بیٹھے حکمرانوں نے تمام حکومتی اختیارات اورریاست کے مالی وسائل پر قبضہ کیا ہوا ہے۔ملک کے دو تہائی شہری دیہات اورقصبوں میں رہتے ہیں ‘وہ چند بڑے شہروں کے رحم و کرم پر زندگی گزار رہے ہیں۔ تازہ اعداد و شمار کے مطابق پاکستان کی آبادی بائیس کروڑ سے تجاوز کرچکی ہے۔ ملک کے انتظام و انصرام اور امن و امان کے قیام کے لیے وفاقی حکومت کے ساتھ ساتھ
مزید پڑھیے