Common frontend top

آغرندیم سحر


نواز شریف کی وطن واپسی :چند سوال


نواز شریف کو وطن واپسی پر جو پروٹوکول دیا گیا اور ان کے لیے میدان صاف کیا گیا،اسے سیاسی زبان میں ڈیل یا این آ ر او کہتے ہیں،ہمیں اس این آر او یا ڈیل پر اعتراض نہیں مگر سوال یہ ہے کہ کیا اس مرتبہ بھی اس ڈیل کا انجام وہی ہوگا جو گزشتہ تین مرتبہ ہوا؟ڈیل یا این آر او کے تحت بننے والی حکومتیں کم سے کم پاکستان کے مفاد میں نہیں ہوتیں،ان کی پہلی ترجیح اسکرپٹ رائٹر کی خوشی ہوتی ہے۔نواز شریف کو چوتھی مرتبہ لانچ کرنے والوں نے ایک ایسی غلطی کر دی جس کا
پیر 23 اکتوبر 2023ء مزید پڑھیے

ہمارے سماج کا بنیادی مسئلہ کیا ہے؟

پیر 02 اکتوبر 2023ء
آغرندیم سحر
فیصل آباد سے شائع ہونے والے اہم ترین ادبی جریدے’’نقاط‘‘کاخصوصی نمبر موصول ہوا‘ڈاکٹر قاسم یعقوب کی ادارت میں شائع ہونے والے اس جریدے کی بنیادی خوبی یہ ہے کہ اس نے ہمیشہ نئے اور بنیادی مباحث کو چھیڑا،مکالمے کی دم توڑتی روایت کونئی زندگی بخشی،زبان و ادب کے نئے ٹرینڈز کو اپنے قاری تک پہنچایا، سماجی بے گانگی کے شکار غیر تخلیقی معاشرے کو بنیادی مسائل سے نبردآزما ہونے کا ہنر سکھایا ۔’’نقاط‘‘کا ہر شمارہ کسی نہ کسی خاص موضوع پر نامور محققین اور ناقدین کے مضامین سے مزین ہوتا ہے،شعری و نثری فن پاروں سے لے کر عالمی ادب
مزید پڑھیے


پاکستان چھوڑنے کا مشورہ!

پیر 25  ستمبر 2023ء
آغرندیم سحر
دو ہزار تیرہ کی بات ہے،میں نے سائپرس کے لیے سٹڈی ویزہ اپلائی کیا،دو ماہ میں ویزہ لگ گیا مگر میری حب الوطنی آڑے آ گئی اور یوں میں اوورسیز پاکستانی بنتے بنتے رہ گیا۔پھر پانچ سال قبل مجھے ایک عزیز دوست نے دبئی شفٹ ہونے کا مشورہ دیا،ویزے کے اخراجات بھی برداشت کرنے کی حامی بھر لی،میں نے پاسپورٹ بھی ری نیو کروا لیا مگر جانے کیا سوجھی،عین وقت پر میرا ارادہ بدل گیا اور یوں ایک مرتبہ پھر ہجرت کی اذیت سے بچ گیا۔دو سال قبل عرب ملک کے ایک معروف پاکستانی اسکول نے بطور اردو استاد
مزید پڑھیے


میرا پہلا رومانس: منڈی بہاء الدین!

منگل 19  ستمبر 2023ء
آغرندیم سحر
جس شہر نے آپ کو خواب دیکھنا سکھایا ہو،اس شہر سے محبت آپ کے خمیرمیں شامل ہو تی ہے،آپ دنیا کے کسی بھی شہر یا ملک میں چلے جائیں، آپ اپنی پہلی محبت کو نہیں بھول سکتے۔ پہلی محبت کی طاقت اور رومانس سے آپ ساری زندگی باہر نہیں آ سکتے اور اگر محبت بھی ایسی ہو جس سے آپ کے خواب جڑے ہوںتووہ کیسے فراموش ہو سکتی ہے۔مجھے لاہور آئے ایک دہائی سے زیادہ کا عرصہ ہو چکا،اس شہر نے مجھے کامیاب کیرئیر بھی دیا اور محبت بھی،نام اور مقام بھی اسی بابرکت اور رومانوی شہر کی بدولت نصیب
مزید پڑھیے


ریاست ماں ہوتی ہے؟

پیر 04  ستمبر 2023ء
آغرندیم سحر
اگر ریاست ماں ہوتی ہے تو کیا ماں کا رویہ اس قدر خوف ناک اور تکلیف دہ ہوسکتا ہے؟اگر ریاست اپنے شہریوں کے حقوق کی ضامن ہوتی ہے توپھرجو گزشتہ ڈیڑھ سال میں ہوا،کیا یہ سب ہونا چاہیے تھا؟اگر ریاست اپنے شہریوں کے لیے آسانیاں پیدا کرتی ہے اور اپنے لوگوں کو زندہ رہنے کا حق دیتی ہے تو پھر جمہوریت،انصاف اور قانون کے نام پر گزشتہ ڈیڑھ سال میں جو کچھ ہوا،کیا اس سے ریاست کا چہرہ مجروح نہیں ہوا؟۔اگر ریاست اپنے عوام کا تحفظ نہیں کرپا رہی اوراپنی آنکھوں کے سامنے اپنے لوگوں کو زندہ درگور ہوتے دیکھ
مزید پڑھیے



کیا ادیب سماج سے لاتعلق ہوتا ہے؟

پیر 28  اگست 2023ء
آغرندیم سحر
ملک بھر میں بجلی کے خوفناک بلوں اور مہنگائی کے خلاف احتجاج جاری ہے،لوگ خودکشی کر رہے ہیں،بچوں کو فروخت کر رہے ہیں،خواتین اپنے زیورات بیچ رہی ہیں تاکہ بجلی کا بل جمع کرواسکیں،یہ خوفناک صورت حال خود بنی یا بنائی گئی،یہ عقدہ کھلنا چاہیے۔سرکار بہادر کی عیاشیوں اور شہ خرچیوں کی قیمت مفلوک الحال شخص کیوں دے؟لاکھوں کی تنخواہیں ،مفت پٹرول اور دو سے تین ہزار یونٹس تک فری بجلی استعمال کرنے والوں کے ٹیکس ایک عام آدمی کیوں دے؟ آج عوام سڑکوں پر ہیں،احتجاج کر رہے ہیں،انصاف مانگ رہے ہیں،احتساب کرنا چاہتے ہیں،سوال کرنا چاہتے ہیں مگر کس کے
مزید پڑھیے


ادیب کو سرکاری اعزاز لینا چاہئے؟

پیر 21  اگست 2023ء
آغرندیم سحر
ژاں پال سارتر بیسویں صدی کا ایک عظیم فلسفی ،ادیب،ناول نگار،ڈرامہ نگار اور نقاد تھا،وہ وجودیت اور مظہریت پر یقین رکھتا تھا،بیسویں صدی کے فلسفیوں میں وہ فرانسیسی سماجی محرکات اور مارکس ازم کا عظیم علم بردار تھا۔اس نے فرانسیسی سماجیات،تنقید اور پوسٹ کالونیل نظریات پہ انتہائی وسیع کام کیا۔سارتر نے ساری زندگی اپنے لیے گھر بنایا اور نہ ہی شادی کی،سارتر نے اپنی ساری کتابیں ہوٹل اور کیفے میں بیٹھ کر لکھیں،ہوٹل’’فلور‘‘اس کا پسندیدہ ہوٹل تھا،کچھ لوگ اس کے فلسفہ جدیدیت کو’’کافی ہائوس فلسفہ‘‘ کہتے ہیں۔سارتر نے ناول لکھے، ڈرامے لکھے،بائیو گرافی لکھی،فلسفے پر کتابیں لکھیں۔ اس کی یہ
مزید پڑھیے


ناموسِ صحابہؓ و اہل ِ بیتؓ بل کی منظوری

پیر 14  اگست 2023ء
آغرندیم سحر
پاکستان کی قومی اسمبلی سے چھ ماہ قبل 17جنوری 2023ء کو ناموسِ صحابہؓ و اہل ِ بیتؓ اور امہات المومنینؓ کی توہین پر عمر قید کی سزا کا بل متفقہ طور پر منظور ہوا تھا،یہ بل جماعت اسلامی کے اسمبلی ممبر مولانا عبد الاکبر چترالی نے پیش کیا تھا۔اس بل کے مطابق صحابہ کرامؓ کی توہین کرنے پر کم از کم سزا دس سال قید اور دس لاکھ جرمانہ تجویز کی گئی،یہ سزا عمر قید میں بھی بدل سکتی ہے۔قومی اسمبلی سے منظوری کے چھ ماہ بعد یہ بل گزشتہ ہفتے سینٹ سے بھی منظور ہو گیا۔اس بل کی منطوری
مزید پڑھیے


نااہلی اور الیکشن!

پیر 07  اگست 2023ء
آغرندیم سحر
چیئرمین پاکستان تحریک انصاف کو پانچ سال کے لیے نااہل کر دیا گیا،تین سال سز اور ایک لاکھ جرمانے کی سزا بھی سنائی گئی۔یہ سزا توشہ خانہ فوجداری کیس میں اس وقت سنائی گئی جب اسلام آباد ہائی کورٹ توشہ خانہ کیس قابلِ سماعت قرار دینے کا فیصلہ کالعدم قرار دے کر معاملہ دوبارہ ٹرائل کورٹ میں بھیجنے کا کہہ رہی تھی۔کیا سیشن جج کو ہائی کورٹ کے فیصلے کو چیلنج کرنا چاہیے تھا؟یہ سوال اور اس سے وابستہ کئی سوال اپنی جگہ اہم مگر سوال تو یہ ہے کہ ہمارے ادارے صرف انہی فیصلوں پر عمل کیوں کرواتے ہیں
مزید پڑھیے


نفسیاتی ہراسگی کی کہانی

جمعرات 03  اگست 2023ء
آغرندیم سحر
گزشتہ ہفتے جنوبی پنجاب کی ایک اہم سرکاری یونیورسٹی میں جنسی ہراسگی کا اسکینڈل سامنے آیا‘اس سانحے کے بعد ملک بھر میں تہلکہ مچ گیا‘دل دہلا دینے والے انکشافات اور ثبوتوں نے جامعات کی اجتماعی کارکردگی کو انتہائی مشکوک بنا دیا۔جنوبی پنجاب کی کسی بھی یونیورسٹی میں ایسا واقعہ پہلی مرتبہ نہیں ہوا۔اس سے قبل لاہور،اسلام آباد،سرگودھا اور کراچی سمیت کئی اہم شہروں کی بڑی جامعات میں بھی جنسی ہراسگی کے اسکینڈلز کی ایک حیرت انگیز فہرست ہے۔ حیرت اس وقت ہوتی ہے جب ایسے واقعات کے بعد ہمارے دانش ور مخلوط نظامِ تعلیم پر تنقید کرتے نظر آتے ہیں
مزید پڑھیے








اہم خبریں