Common frontend top

فیصل مسعود


ایلیٹ گروہوں کا فولادی گٹھ جوڑ!


معروف مئورخ ڈرک کولیئر کا خیال ہے کہ تاریخ میں شیر شاہ سوری جیسے بہت کم ایسے کردار گزرے ہیں جو میکیاولی کے آئیڈیل مطلق العنان ’پرنس‘ کی تعریف پریوں پورا اترتے ہوں۔تاہم آج شیر شاہ سوری کو ہم اس کے ’میکیاولین اوصاف‘ کی وجہ سے نہیں بلکہ’گورننس کے اس تصور‘کی بناء پرجانتے ہیں کہ جو اُس نے اپنے محض پانچ سالہ دور حکمرانی میں پیش کیا تھا۔ اکبر اعظم جیسے بادشاہ نے حکمرانی کے انہی اصولوں پر عظیم الشان ہندوستانی سلطنت کی عمارت کھڑی کی۔ صدیوں کے بعد انگریزوں نے برصغیر میںجدید ایڈمنسٹریشن کے ڈھانچے کی بنیاد رکھی
اتوار 07 جنوری 2024ء مزید پڑھیے

اُفق کے اس پار!

اتوار 31 دسمبر 2023ء
فیصل مسعود
سائنسی تحقیقات روح کی حقیقت کا کھوج لگانے میں ناکام ہیں۔قرآنِ حکیم نے فرمایا:’’روح میرے پروردگار کے حکم سے ہے۔اور تمہیں اس کا بہت کم علم دیا گیا ہے‘‘۔زندگی جسم اور روح کے تعلق کا نام ہے اور اسی تعلق کے ٹوٹنے کو موت کہتے ہیں۔ قرآن میں موت کو نیند سے مشابہت دی گئی ہے۔ سائنس کے مطابق موت کسی بھی ذی روح کی طبیعاتی حرکیات اور حیاتیاتی افعال کے رک جانے کا نام ہے۔موت مگر اچانک برپا ہونے والا ایک حادثہ نہیں، ایک تدریجی عمل ہے۔ حواسِ خمسہ ایک طے شدہ ترتیب کے تحت معدوم ہونا شروع
مزید پڑھیے


دائرے میں سفر!

اتوار 24 دسمبر 2023ء
فیصل مسعود
اگلے روز ایک تقریب میں پیارے دوست توقیر جدون نے کھانے کی میز پر مجھے گزرے ’خاکی دنوں‘ پر لکھنے کو کہا۔یوں بھی دکھائی دیتا ہے کہ پاکستانی مڈل کلاسیوںکی بڑی تعداد جوگزشتہ چند برسوں سے بوجہ ملکی معاملات پرمتحرک دکھائی دے رہی تھی، ایک بارپھر لاتعلقی کے خول میں واپس لوٹ رہی ہے۔توآئیے پھر کچھ ماضی کے دریچوں میں جھانکتے ہیں۔ ساڑھے تین سال ازکارِ رفتہ سپاہی نے جو فاٹا کی تین ایجنسیوں بالخصوص شمالی اور جنوبی وزیرستان میں گزارے،دل وجان پر گزری ایک داستان ہے جسے ایک عرصہ سے قلم بند کرنے کی آرزورہی ہے۔نوک پلک ٹھیک کرنے
مزید پڑھیے


سفیرِمحترم کے ساتھ غیررسمی گفتگو !

اتوار 17 دسمبر 2023ء
فیصل مسعود
جنرل فرحت عباس ثانی کے ساتھ ازکارِ رفتہ سپاہی کی رفاقت کا سفر چار عشروں سے زائدعرصے پر محیط ہے۔ جنرل صاحب اب برادر اسلامی ملک برونائی دارالسلام میں پاکستان کے سفیر کی ذمہ داریاں سر انجام دے رہے ہیں۔ بیرونِ ملک ہونے کی بناء پر ان کے ساتھ ایک عرصے سے با لمشافہ ملاقات تو نہیںہوسکی، تاہم بذریعہ فون رابطہ مسلسل برقرار ہے۔ کئی مواقع پراہم قومی اور عالمی معاملات پر ان کے فکر انگیز خیالات ہمارے متعدد کالموں کی تخلیق کا سبب بھی بنے۔زیرِ نظر مضمون کا بنیادی محرک سفیر محترم کی طرف سے دی جانے والی
مزید پڑھیے


نام نہاد جمہوریت پسند لبرلز کا دوغلا پن!

اتوار 10 دسمبر 2023ء
فیصل مسعود
مغربی جمہوریت کہ جس شکل میں ہم اس سے واقف ہیں، اس کی آبیاری لبرل ازم کے فلسفے نے کی تھی۔ بیسویں صدی کے آغاز میں روس کے اندر سوشلسٹ انقلاب کے اثرات بھی مغربی یورپ تک پہنچنے لگے تھے۔سرد جنگ کے عشروں کا آغاز ہواتومغربی ممالک نے امریکہ کی سربراہی میں خود کو آزاد دنیا جبکہ سوشلزم کو جبر کا نظام قرار دیتے ہوئے محکوم قوموں کی آزادی کا بیانیہ ترتیب دیا۔ آج ہم سب جانتے ہیں کہ اس پراپیگنڈے کے پسِ پشت اعلیٰ انسانی و جمہوری اقدار نہیں بلکہ معاشی اور تزویراتی اہداف کا رفرما تھے۔سرد جنگ
مزید پڑھیے



مذاکرات کے طوطے اور محاذآرائی کے الّو!

اتوار 03 دسمبر 2023ء
فیصل مسعود
9مئی کا المناک دن بے یقینی کے سائے چھوڑ کرڈھلاتو اگلے روز کا سورج آگ اُگلتا ہوا نمودار ہوا۔نسیں خیموں کی تنابوں کی طرح تنی ہوئی تھیںتوجذبات کا پارہ آسمانوں کو چھو رہا تھا۔ دو چار روزکے اندر فضاء اس قدر بوجھل ہوگئی کہ سانس لینا دشوار ہو گیا۔حالات کی سنگینی اور ادارہ جاتی غم و غصے کو محسوس کرتے ہوئے مفاد پرستوں کے غول در غول ’آدم بو ،آدم بو‘ پکارنے لگے۔سیاسی ایجنڈا رکھنے والوں کا طرزِ عمل تو قابلِ فہم تھا، پکڑلو، ماردو، چھوڑنا نہیں، کا شور مچانے والوں کے اس ہجوم میں مگر وہ عناصربھی شامل ہو
مزید پڑھیے


ایک جرنیل کی نئی جنگ!

اتوار 26 نومبر 2023ء
فیصل مسعود
جنرل عابد لطیف خان دھیمے مزاج کے حامل ایک خوشگوار شخصیت کے مالک افسر ہیں۔ہماری باہم شناسائی کا آغاز سال 2008ء کے آس پاس اس وقت ہوا، جب ان کی تعیناتی منگلا کور میں ہوئی، جہاں میں پہلے سے موجود تھا۔ دو چار برسوں کے بعداگلے رینک پر ان کی ترقی ہوئی تووہ شمال مغربی سرحد کے ساتھ ایک بریگیڈ کی کمان سنبھالنے کے لئے چلے گئے، جبکہ کچھ ہی عرصہ بعدخود میری پوسٹنگ بھی کوئٹہ ہو گئی ۔ ایک طویل وقفے کے بعد ہماری اگلی ملاقات چکلالہ کینٹ میں ان کے گھر پراس وقت ہوئی جب ہم انہیںجنرل
مزید پڑھیے


کمپنی کاظلم اور تاریخ کا سبق!

اتوار 12 نومبر 2023ء
فیصل مسعود
عصرِ حاضر کے نامور مورخ ولیم ڈلرمپل کی ’دی لاسٹ مغل‘ اٹھارویں صدی عیسوی کے عظیم برطانوی فلسفی اور مدبر سیاستدان ایڈمنڈ برک کے اِس قول پر ختم ہوتی ہے کہ’جو تاریخ سے سبق سیکھنے میں ناکام رہتے ہیں ، وہ ہمیشہ تاریخ کو دہراتے ہیں‘۔ڈلرمپل کی مذکورہ کتاب تیموری خاندان کے آخری چشم و چراغ کی دلّی پر حکمرانی کے آخری چندپُر شورش مہینوں اور ملک بدری کے کچھ برسوں کی المناک داستان ہے۔1857ء کی شورش کو مغربی دنیا بغاوت(Mutiny )جبکہ ہم ’جنگ آزادی‘ قرار دیتے ہیں۔یہاں سوال پیدا ہوتا ہے کہ بغاوت تو غلام اپنے آقا کے
مزید پڑھیے


ظلم کے خلاف نئی عالمی گروہ بندی!

اتوار 05 نومبر 2023ء
فیصل مسعود
فلسطین اب ایک مذہبی مقدمہ نہیںرہا بلکہ انسانی سانحے کا روپ دھار چکا ہے۔ تاریخی طور پر عرب اسرائیل تنازعے کے باب میں دنیا دو واضح حصوں میں تقسیم رہی ہے۔ایک طرف جبکہ امریکی قیادت میں مغربی دنیا اسرائیل کی طرفدار رہی ہے تووہیں دوسری جانب عرب ممالک سمیت مسلم دنیا فلسطینیوں کی حمایت کرتی رہی ہے۔ یقینا سرد جنگ اور بعد ازاں امریکہ چین مخاصمت کے محرکات بھی اس گروہ بندی پر اثر انداز ہوتے رہے ہیں۔تاہم 7 اکتوبر کے بعد سے غزہ میں بڑھکنے والی آگ نے دنیا میں ایک نئی گروہ بندی کو جنم دیا ہے۔اس نئی
مزید پڑھیے


اب سوشل میڈیا اگلا نشانہ ہے!

اتوار 29 اکتوبر 2023ء
فیصل مسعود
سال 1991 ء کا ذکر ہے۔ رات دیر گئے ، ہم کیبل نیوز نیٹ ورک (سی این این)پر خلیجی جنگ کو براہِ راست دیکھا کرتے تھے۔ ٹی وی سکرین پرفضاء میں اڑتے میزائلوں،صحرائوںمیں بھاگتے ٹینکوں اوربلا تعطل جنگی مبصروں کو ہم متحیر ہو کر دیکھتے اورسنتے تھے۔سال 1991ء میں دنیا الیکٹرانک میڈیا کے ظہور کے دہانے پر کھڑی تھی ۔کہا جاتا ہے کہ خلیجی جنگ امریکہ نے اپنے فوجی مروائے بغیر،اپنی ایئر فورس کے علاوہ سی این این کے سر پر جیتی تھی۔ دنیا نے اکیسویں صدی میں قدم رکھا تو وطنِ عزیز میں بھی الیکٹرانک میڈیا کے دور کا آغاز
مزید پڑھیے








اہم خبریں