BN

قدسیہ ممتاز



امروز


انسان زیادہ سے زیادہ کتنا جی سکتا ہے۔پاکستان میں اوسط عمرساٹھ سال سمجھ لیجئے۔ اس کا مطلب ہے کہ اگر آپ نے اپنی زندگی کے پچاس سال کامیابی سے گزار لیے ہیں جس کی وجہ آپ کی ڈھٹائی بھی ہوسکتی ہے تو جیسا کہ دستور ہے،اگلے دس سال اسپتالوں، ڈاکٹروں اور حکیموں کے چکر لگاتے گزریں گے۔غالب امکان ہے کہ چالیس کے پٹے میں آپ کو جوڑوں کا درد لاحق ہوجائے گا، کولیسٹرول کی سطح بلند ہوجائے گی، بلند فشار خون جو اب جوانی میں بھی معمول کامرض بن گیا ہے، یقینا آپ کو بھی نہیں چھوڑے گا۔ممکن ہے آپ
جمعرات 11 جولائی 2019ء

مریم صفدر کی خطرناک ڈرائیونگ

منگل 09 جولائی 2019ء
قدسیہ ممتاز
نون لیگ کی سیاست اگر مریم صفدر کے حوالے کردی گئی ہے تو لواحقین کو قبل از وقت فاتحہ کا انتظام کرلینا چاہئے۔ محترمہ نے جس دن سے نون لیگ کی ڈرائیونگ سیٹ سنبھالی ہے، اسپیڈ بریکروں کی پروا کئے بغیر ،نو آموز ڈرائیوروں اور نومسلموں جیسے جوش و خروش کے ساتھ پارٹی کی بچی کچھی،ڈھیلے پرزوں والی زنگ آلود گاڑی کو ہر اوبڑ کھابڑ راستے سے نہ صرف گزارنے کی کوشش کررہی ہیں بلکہ کہنہ مشق ڈرائیوروں سے زبردستی داد بھی وصول کرنا چاہتی ہیں۔معلوم ہوتا ہے انہوں نے نون لیگ کو ان ہنگامی حالات میں
مزید پڑھیے


دیپک مشرا اور جمہوریت کو خطرہ

هفته 06 جولائی 2019ء
قدسیہ ممتاز
سیاست اور جرم کا ساتھ دنیا بھر میں مستند مانا جاتا ہے۔وائٹ کالر کرائم یا جسے جدید اصطلاح میں آرگنائزڈ کرائم بھی کہا جاتا ہے ، دنیا بھر میں سیاست کا بائی پروڈکٹ ہے لیکن پاکستان اور بھارت میں یہ دھندہ عروج پہ ہے۔یہاں بات طرز سیاست کی نہیں ہورہی۔ وہ چاہے آمریت ہو یا پارلیمانی آمریت جس میں اکیاون فیصد کو انچاس فیصد پہ فضیلت حاصل ہوتی ہے، سیاست کی گود میں جرائم پلتے ہی ہیں۔ آپ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہونے کے دعوے دار بھارت کو دیکھ لیں۔بھارتی لوک سبھا میں ایک سے بڑھ کر ایک
مزید پڑھیے


ہوں لائق تعزیر پہ الزام غلط ہے

جمعرات 04 جولائی 2019ء
قدسیہ ممتاز
رانا ثنا اللہ منجھے ہوئے سیاست دان ہیں۔ اتنا احمق توکوئی عام مجرم بھی نہیں ہوتا کہ وہ موٹر وے پہ جہاں نگرانی اور ناکوں کی صورتحال عام شاہراہوں سے کہیں بہتر ہو بیس کلو منشیات اپنی گاڑی میں لے کر سفر کرے چہ جائیکہ ایک ایسا جہاندیدہ بلکہ مرغ باد نما قسم کا سیاست دان جس کی مخالف جماعت برسر اقتدار ہو اور فل موڈ میں ہو۔ایسے حالات میں جب گرفتاریوں کا موسم عروج پہ ہو اور حکومت پہلے سے کہیں زیادہ جارحانہ موڈ میں نظر آتی ہو،رانا ثناء اللہ کی اس
مزید پڑھیے


ایک سوچی سمجھی تقسیم

منگل 02 جولائی 2019ء
قدسیہ ممتاز
خلافت عثمانیہ کے زوال پہ نوحے میںکیوں لکھتی ہوں؟مجھے ترکوں سے کوئی انس ہے نہ عربوں سے کوئی پرخاش۔ پاکستا ن کے قیام کے بعد دونوں ہی پاکستان کے بہترین دوست ثابت ہوئے۔ میں سازشی تھیوریوں کی بہت زیادہ قائل بھی نہیں لیکن خلافت عثمانیہ کو ختم کئے بغیر ریاست اسرائیل کا قیام ممکن نہیں تھا۔مجھ سے گلہ کیا گیا کہ میں نے مسلم تاریخ کے اس شرمناک باب کا ذکر کرتے ہوئے عربوں کا تذکرہ گول کردیا جو سقوط خلافت کے اصل نفع کنندگان تھے۔ زندہ قومیں زوال کے اسباب پہ غور کیا کرتی ہیں، اس میں شریک کرداروں
مزید پڑھیے




خلافت عثمانیہ۔اسرائیل اور صدی کی سب سے بڑی ڈیل

جمعرات 27 جون 2019ء
قدسیہ ممتاز
غالبا ًاسی دن کے لئے مسلمانوں کی آخری مرکزی سلطنت خلافت عثمانیہ کے ٹکڑے ٹکڑے کر کے اسے وفاداروں اور کاسہ لیسوں میں تقسیم کیا گیا تھا کہ جب فیصلہ کن جنگ کا مرحلہ سر پہ آن پہنچے تو امت مسلمہ ، اگر وہ کہیں ہے ، تو اپنے ہی مسائل میں الجھی ہو،باہم دست و گریبان ہو یا عظیم منصوبہ سازوں کے ہاتھ میں کٹھ پتلیوں کی طرح کھیل رہی ہو۔ خلافت عثمانیہ کے زوال کے اسباب میں ایک اہم سبب اس کا یہودیوں کو سلونیکا میں آباد کاری کی اجازت دینا تھا۔ تاریخ اسلام گواہ ہے کہ یہودیوں
مزید پڑھیے


پانی پلوں سے بہہ چکا ہے

منگل 25 جون 2019ء
قدسیہ ممتاز
کس رعونت سے آئے تھے۔ کس خجالت سے نکالے جائیں گے۔ امریکہ افغانستان سے نکلنا چاہتا ہے لیکن باعزت واپسی کا کوئی تو راستہ ہو۔کل کے مجاہدین جس طرح آج افغان لیڈروں کے ساتھ بھوربن میں بیٹھے خوش گپیاں کررہے ہیں،کیا حرج تھا اگر نوے کی دہائی میں یہی راہ اپنا لی جاتی۔مرحوم قاضی حسین احمد نے گلبدین حکمت یار کو ربانی اور احمد شاہ مسعود سے صلح کا مشورہ دیا جو حکمت یار نے رد کردیا۔ اس قصے کے راوی معروف صحافی اور افغان امور کے ماہر اسلم خان ہیں جنہوں نے راقم کے ڈرائنگ روم میں بیٹھ کر
مزید پڑھیے


بے سمت اپوزیشن، ہارے ہوئے لہجے

هفته 22 جون 2019ء
قدسیہ ممتاز
عمران خان جنہیں سیاست نہیں آتی ، بڑے غیر محسوس طور پہ منجھی ہوئی اپوزیشن کے اعصاب کے ساتھ کھیل رہے ہیں۔دوسری طرف کہیں یکجا اور اکثر تقسیم اپوزیشن کو بھی کوئی سنجیدہ نوعیت کا کام درپیش نہیں اس لئے وہ خوشی خوشی چار پانچ دن کسی ایسے ایشو پہ میڈیا پہ شور مچانے لگتی ہے جیسے یہی اہم ترین مسئلہ ہو۔ جس وقت آصف علی زرداری ،حمزہ شہباز اور شہباز شریف کے پارلیمنٹ میں پروڈکشن آرڈر جاری کرنے یا نہ کرنے کے بارے میں حکومت بظاہر مخمصے کا شکار تھی اپوزیشن کے پاس لے دے کر ایک ہی
مزید پڑھیے


محمد مرسی بے سر و صدا دفن شد

جمعرات 20 جون 2019ء
قدسیہ ممتاز
حسن البنا شہید سے محمد مرسی تک اخوان المسلمون کی داستان لکھی جائے تو اس کا عنوان کیا ہوگا؟وفا اور استقامت ۔ مصر کے حکمرانوں کی تاریخ لکھی جائے تو اس کا عنوان کیا ہونا چاہئے؟آمریت اور جبر و استبداد کا سلسلہ رواں،جس کا نشانہ ہر دور میں اخوان المسلمون رہی۔مصر کے حکمرانوں کا سیاسی سلسلہ نسب فرعون سے ملتا ہے۔ عرب اسرائیل جنگ میں جمال عبدالناصر نے اپنی قوم کو مخاطب کرتے ہوئے بڑی رعونت سے کہا تھا:فرعون کے بیٹو آج تمہارا مقابلہ موسی کے بیٹوں سے ہے۔ پھر فرعون کے بیٹے تو حسب سابق و روایت بحر ذلت
مزید پڑھیے


سوشل میڈیا یا نوجوانوں کا مقتل؟

منگل 18 جون 2019ء
قدسیہ ممتاز
اکثر لوگ کسی صدمے سے گزرتے ہیں تو ان کا ذہن فورا ہی اس کو قبول کرلیتا ہے اور اعصاب کو ایسے سگنل بھیجنا شروع کردیتا ہے جس سے صدمے کی شدت کم ہوسکے جیسے آنسو بہنا،چیخنا چلانا اور بین کرنا۔اس طرح ان کے اعصاب جلد پرسکون ہوجاتے ہیں اور وہ حقیقت کا سامنا کرتے ہوئے جلد ہی نارمل زندگی کی طرف لوٹ آتے ہیں۔ میرے ساتھ اس کے برعکس ہوتا ہے۔صدمہ جس وقت میرے اعصاب سے ٹکراتا ہے وہ ایسے سن ہوجاتے ہیں جیسے بیر بہوٹی چھونے پہ بے حس اور ساکت ہوجاتی ہے۔دیکھنے والوں کو لگتا ہے شاید
مزید پڑھیے