مجاہد بریلوی



ذرا پھر لندن سے


ہیتھرو ایئرپورٹ پر جب حسب ، روایت بیرسٹر صبغت اللہ قادری اور اُن کی بیگم کریتا کے انتظار میں تھا ۔ ۔ ۔ سالِ گزشتہ جب فیض ؔ میلے میں شرکت کے لئے آمد ہوئی تو امارات کی فلائٹ بھی ہماری قومی ایئر لائن کی طرح تین گھنٹے کی تاخیر سے پہنچی۔ ۔ ۔ مگر ہفتے کی شب نہ صرف فلائٹ آدھے گھنٹے پہلے پہنچی بلکہ لمبی قطار اور امیگریشن کے ہاتھوں سے گذرنے میںچند منٹ ہی لگے مگر ہاں۔ ۔ ۔ اسلام آباد میں بیٹھے کپتان وزیر اعظم عمران خان کو خبر ہو کہ اُن کی حکومت کے
بدھ 12 فروری 2020ء

میں حیراں ہوں وہ ذکرِوادیِ کشمیر کرتے ہیں

هفته 08 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی

سِکّہ بند،ترقی پسند شاعرِ عوام حبیب جالبؔ کی شاعری کے بارے میں کہا کرتے تھے کہ عوام میں مقبول تو ہے مگر۔ ۔ ۔ یہ فیض ؔ صاحب کی طرح مستقبل میں زندہ نہیں رہے گی۔ پروپیگنڈے کا نام دے کر ان کے بارے میں ہمارے مارکسسٹ نقاد کہا کرتے تھے کہ۔ ۔ ’’بس یہ جلسے جلوسوں میں عوام کا خون گرمانے کی حد تک ہے ‘‘۔ ۔ ۔ اور پھر یہ اگر رہی بھی تو اُن کے گذر جانے کے سال دو سال بعد تک ۔ آج جالبؔ صاحب کے انتقال کو کوئی تین دہائی ہونے کو آرہی ہے۔اُن
مزید پڑھیے


بے ساکھیاں

بدھ 05 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی
جولائی 2018ء کے الیکشن کے بعد جس میں تحریک انصاف واضح اکثریت نہیں حاصل کر سکی تھی۔یعنی 382کے ایوان میں 172ارکان جس سے وہ بغیر کسی اتحادی کے حکومت بنا سکے۔ ۔ ۔ تو پھر یہی وہ وقت تھا کہ تحریک انصاف کے قائد عمران خان کی بے پناہ مقبولیت اور لاکھوںکی تعدادمیں نوجوانوں کی حمایت کے باوجود یہ جنوبی پنجاب سے تعلق رکھنے والے اور گھاٹ گھاٹ کا پانی پینے والے جہانگیر ترین ہی تھے جو بے پناہ وسائل جن میںان کا ذاتی جہاز اور ہیلی کاپٹر بھی شامل تھا ، تن و تنہا مہینے بھر کی
مزید پڑھیے


بے حسی،بے بسی

هفته 01 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی
کورونا وائرس نے ساری دنیا کو دہلا کر رکھ دیا ہے۔ دنیا کی دوسری بڑی معاشی طاقت چین کی قیادت ابھی تک یہ دریافت کرنے اور اس پر قابو پانے میں ناکام رہی ہے،یا پھر اس بات سے آگاہ ہوتے ہوئے جس کا قوی امکان ہے ۔ ۔ ۔ کہ وہ یہ بتانے سے گریز کررہی ہے کہ زندگی کے تمام شعبوں میں بشمول سائنس اور ٹیکنالوجی دنیا کی نمبر ایک نہیں تو دو طاقت ہونے کے باوجود آخر وہ اپنے لوگوں کو ایک ماہ گزر جانے کے باوجود ان کی تواتر سے ہونے والی اموات سے کیوں بچا نہیں
مزید پڑھیے


شکریہ مودی

بدھ 29 جنوری 2020ء
مجاہد بریلوی
بھارت کے زیر تسلط کشمیر میں 72سال سے آزادی کے نعرے تو لگ ہی رہے تھے اور جس کے لئے ایک لاکھ سے زیادہ کشمیری اپنے خون کا نذرانہ دے چکے ہیں،اور 8لاکھ بھارتی غاصب فوج جن کو اب تک دبانے اور کچلنے میں ناکام رہی ہے ،آج سرینگر اور مقبوضہ کشمیر میں لگنے والے نعرے سارے ہندوستان میں دہلی سرکار کے زیر تسلط ریاستوں میں لگ رہے ہیں۔دہلی میں شاہین باغ کی خواتین کا ذکر ذرا بعد میں کروں گا،جو بھارت کی تاریخ کے سرد ترین دنوں میں گذشتہ چالیس دن سے ہزاروں کی تعداد میں اپنے بچوں
مزید پڑھیے




آ ج کے حکمرانوں کے لئے (2)

هفته 25 جنوری 2020ء
مجاہد بریلوی
جس طرح تاریخ کا اپنا انتقام ہوتا ہے کہ جو اُس سے سیکھتے نہیں اُسے وہ روند دیتی ہے ۔اس حوالے سے میں برصغیر پاک و ہند کے ان اہم کرداروں کا ذکر کررہا تھا جو تقسیم ِ ہند کے بعد پاکستان کو دولخت کرنے کے محرک بنے ۔اسی طرح کہاجاتا ہے کہ انقلاب اگر خونیں ہو تو سب سے پہلے وہ اپنے بچوں کو نگل جاتا ہے۔اگر برصغیر پاک و ہند کی تاریخ پر نظر ڈالی جائے تو بانی ِ پاکستان قائد ِ اعظم محمد علی جناح اور جدید بھارت کے بانی وزیر اعظم جواہرلال نہرونے بھی ایک طویل
مزید پڑھیے


آج کے حکمرانوں کے لئے… (1)

بدھ 22 جنوری 2020ء
مجاہد بریلوی
کہا جاتا ہے جو تاریخ سے سبق نہیں سیکھتے ،تاریخ انہیں اس طرح روندتی ہے کہ بعد میں بس المناک یادیں رہ جاتی ہیں۔افسوس کہ ہمارے آج کے حکمراں تاریخ سے سیکھنا تو کیا،اتنی فرصت بھی نہیں رکھتے کہ اُن اوراق کو الٹیں جب ہم 70ء کی دہائی میں اپنی سیاسی تاریخ کے ایک ایسے سانحے سے گذرے کہ جس نے بانی ِ پاکستان قائد اعظمؒ کے پاکستان کو ہی دو لخت کردیا۔ میں ان بزعم خود سرخیل اینکروںاور خودسر کالم کاروں میں شامل نہیں ۔ ۔ ۔ جو ہر المیے اور بحران کے پیچھے پنڈی ،آب پارہ کو
مزید پڑھیے


شرمندگی

هفته 18 جنوری 2020ء
مجاہد بریلوی
شجاع نواز کی کتاب The Battle for Pakistanکے اوراق کھولنے کیا بیٹھا کہ ہر باب ۔ ۔ ۔ ایک پورا کالم مانگتا ہے۔موضوعات ہی ایسے ہیں۔ ۔ ۔ مشرف ، بی بی این آر او،اور پھر اُن کی شہادت کے محرکات ۔ ۔ ۔ اسامہ بن لادن کی امریکیوں کے ہاتھوں ہلاکت، میمو گیٹ ،امریکی امداد ایک جال،پاکستانی فوج کی ٹرانسفارمیشن اور پاکستانی فوج کا Dilemma۔ ۔ ۔ مگر ابھی پی پی کی قائد کی شہادت میں خود پارٹی کے مرکزی قائدین کے مشکوک کردار کو ہی سمیٹا تھا کہ ایک نجی ٹی وی چینل
مزید پڑھیے


(2) The Battle for Pakistan

بدھ 15 جنوری 2020ء
مجاہد بریلوی
The Battle for Pakistanیعنی پاکستان کے لئے جنگ ،پر کالم سپرد قلم کرچکا تھا کہ ذرا تاخیر سے یہ خبر پہنچی کہ محترم شجاع نواز کی کتاب کی تقریب رونمائی جو کراچی ،لاہور اور اسلام آباد میںہونی تھی ،اُسے بحکم ِ سرکار ملتوی کردیا گیا۔ خود انگریزی کے معتبر اخبار میں ایک تفصیلی انٹرویو دیتے ہوئے شجاع نواز نے اس خبر کی تصدیق کرتے ہوئے کہاکہ جن وجوہ کے سبب تقریب رونمائی رکوائی گئی ہے ،اِس بارے میں تو متعلقہ ادارہ ہی بتا سکتا ہے ۔دلچسپ با ت یہ ہے کہ محترم شجاع نواز جب اپنی پہلی کتاب
مزید پڑھیے


The Battle for Pakistan (1)

هفته 11 جنوری 2020ء
مجاہد بریلوی
واشنگٹن میں مقیم ممتاز دانشور اور تجزیہ نگار شجاع نواز کی حال ہی میں شائع ہونے والی کتاب The Battle for Pakistan and The Bitter US Friendshipکے اوراق الٹ رہا تھا۔ ۔ ۔ شجاع نواز اپنی پہلی کتاب Crossed Swordsبزبان ِ اردو’’بے نیام تلواریں‘‘ کے ذریعے ایک ایسے معتبر اسکالراور مصنف کی حیثیت سے خود کو منوا چکے ہیں کہ جن کا لکھا اور کہا اسلام آباد سے واشنگٹن تک بڑی توجہ سے پڑھا اور سنا جاتا ہے ۔کتاب ابھی مکمل نہیں کی ہے ۔ایک چوتھائی کتاب ہی تک پہنچا ہوں انکشافات اتنے سنسنی خیز اور دلچسپ ہیں کہ
مزید پڑھیے