BN

مجاہد بریلوی

پاکستان میں الیکشن… کیا کھویا،کیا پایا؟ (2)

بدھ 18 جولائی 2018ء
1970میں پاکستان کی سیاسی تاریخ میں ہونے والے پہلے انتخابات تو خیر قیام پاکستان کے بعد وطن عزیز کے لئے سب سے بڑا المیہ تھے ہی۔ کہ جس نے مملکت ِ خداداد پاکستان کے ہی دو ٹکڑے کردئیے۔تو مارچ 1977میں ہونے والے دوسرے انتخابات بھی کسی بڑے المیے سے کم نہ تھے۔ ایک تو بانیِ پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کے بعدپاکستانی سیاست میں دوسرے بڑے عظیم الشان رہنما، بانیِ پاکستان پیپلز پارٹی ذوالفقار علی بھٹو اس کی بھینٹ چڑھ گئے۔ساتھ ہی اگلی ایک دہائی تک ملک پر ایک ایسا فوجی آمر بھی مسلط کرگئے کہ جس نے
مزید پڑھیے


پاکستان میں الیکشن… کیا کھویا،کیا پایا؟(1)

اتوار 15 جولائی 2018ء
25 جولائی2018ء کو ہونے والے انتخابات پاکستان کی سیاسی تاریخ کے گیارہویں انتخابات ہوں گے۔ قیام پاکستان کے بعد جمہوریت کی روح کے مطابق یعنی بالغ رائے دہی کی بنیاد پر پہلے انتخابات تو بدقسمتی سے ہوئے ہی23سال بعد، مزید بد قسمتی یہ کہ یہ بھی وطن عزیز کو دولخت کرگئے۔ اور پھر اس سے بھی بڑاالمیہ یہ کہ بعد کے برسوں میں بھی۔ کوئی بھی الیکشن ایسا نہ تھا جسے ہارنے والے نے تسلیم کیا ہو اور پھر جیتنے والوں کو گرانے کیلئے۔آخری حد یعنی پنڈی آب پارہ کا سہارا نہ لیا ہو۔ یوں الیکشن جو کسی بھی ملک
مزید پڑھیے


میاں صاحب کاامتحان

جمعرات 12 جولائی 2018ء
سب سے پہلے تو بصد احترام یہ کہ اگر ہمارے سپریم کورٹ سے نااہل ہونے والے وزیراعظم محترم میاں نواز شریف دس سال جیل کاٹ بھی لیں تو وہ کم از کم نیلسن منڈیلا نہیں بن سکتے۔ یہ وضاحت میں نے ابتدا ہی میں اس لئے کردی کہ پیپلزپارٹی کے چیئرمین سابق صدر محترم آصف علی زرداری نے جب دس گیارہ سال کچی پکی جیل کاٹ لی تو ان کی جیالا قیادت اور دانشوروں نے انہیں پاکستان کا ’’نیلسن منڈیلا‘‘قرار دینا شروع کردیاتھا ۔اب ان جیالوں کو کون بتائے اور سمجھائے کہ نیلسن منڈیلا26سال جیل کاٹ کر آئے تو ان
مزید پڑھیے


بے چارے غریب سیاستدان…3

هفته 07 جولائی 2018ء
بے چارے غریب سیاستدانوں کاذکر کرتے ہوئے بلاول بھٹو زرداری سے بی بی مریم نواز کے اثاثوں پر آیاتھا۔ برخوردار بلاول اور بی بی مریم کا سیاسی کیریئر یہی کوئی پانچ، چھ برسوں پر محیط ہے۔ تعلیم مکمل کرنے کے بعد ان دونوں پڑھے لکھے نونہالوں نے کہاں کہاں ملازمتیں کیں۔ اور کس کس کاروبار میں شب و روز سرگرم رہتے تھے۔ مہینے بھر پہلے تک اس بارے میں معروف اصطلاح میں تاریخ خاموش ہے۔ یہ تو الیکشن کمیشن کی مہربانی سے۔ معلوم ہوا کہ پاکستانی سیاست کی دو بڑی مین اسٹریم جماعتوں یعنی پاکستان پیپلزپارٹی اور پاکستان مسلم
مزید پڑھیے


بے چارے غریب سیاستدان…(2)

بدھ 04 جولائی 2018ء
بے چارے غریب سیاستدانوں پر لکھتے ہوئے۔ سابق وزیراعظم ذوالفقار علی بھٹو کے نواسے۔ عالم اسلام کی پہلی منتخب وزیراعظم بے نظیربھٹو کے صاحبزادے برخوردار بلاول بھٹو زرداری کے ذمے یاڈالے گئے ایک ارب57 کروڑ کے اثاثوں کاذکر کرتے ہوئے افسردگی غالب آگئی تھی۔آئندہ کالم میں ہمارے نااہل ہونے والے وزیراعظم کی صاحبزادی بی بی مریم نواز کی جانب آناتھا۔۔ مگر فی الوقت تو دہری افسردگی کاشکار ہوں۔ ایک تو نصف صدی سے بھٹوز کے گڑھ لیاری میں جوناروا اور متشددانہ سلوک بلاول بھٹو زرداری کے ساتھ ہوا۔ اس کے وہ اپنی ذات کے حوالے سے مستحق نہ تھے کہ
مزید پڑھیے


بے چارے غریب سیاستدان۔۔۔ ؟

جمعه 29 جون 2018ء
بلاول بھٹو زرداری کی والدہ سابق وزیر اعظم محترمہ بے نظیر بھٹو نے اپنی کتاب ’’دخترِ مشرق‘‘ میں بھٹو خاندان کی سو برس پہلے زمینوں کی وسعت و مالیت کا ذکر کرتے ہوئے لکھا ہے کہ اْس وقت کا انگریز چارلز نیپیئر اپنی گاڑی میں لاڑکانہ سے باہر جارہا تھا۔ چند میل بعد اس نے پوچھا۔ یہ کس کی زمینیں ہیں؟ ڈرائیور کا جواب تھا۔۔۔ ’’ بھٹو کی‘‘۔ مزید آدھا گھنٹہ گزرنے کے بعد چارلز نیپیئر نے پھر پوچھا۔’’ کیا اب بھی بھٹو کی زمینیں چل رہی ہیں؟‘‘۔ ڈرائیور نے اثبات میں سر ہلا دیا’’جی‘‘۔۔۔ اس پر چارلز نیپیئر نے
مزید پڑھیے


RAW/ISI

اتوار 24 جون 2018ء
تحریک انصاف کے سربراہ ہمارے محترم عمران خان کی بیوی نمبر2نے اپنی کتاب لانے سے پہلے ہی دوغضب ڈھائے۔ ایک تو ہمارے خان صاحب کے معذرت کے ساتھ بازاری زبان میں لنگوٹیا یاروں، غاروں کے ساتھ ،کہ اسکرینوں، ٹوئٹروں پر صفائیاں دیتے دیتے ( پریشان کالفظ ذرا ہلکا ہے) پاگل ہوئے جارہے ہیں۔ اور دوسرے برصغیر پاک و ہند کی دوپرائم ایجنسیوں کے سربراہوں کی لکھی ہوئی کتابSPY CHRONICLE کے مرتب اور پبلشر پر کہ دوبئی روانہ ہونے کیلئے کراچی ایئرپورٹ کے بک اسٹال پر’’درانی دلت‘‘ کتاب کے بارے میں پوچھا کہ یہ توHot Cakeکی طرح فروخت ہورہی ہوگی۔ افسردگی
مزید پڑھیے


ایسے نہیں ہوتا

جمعه 15 جون 2018ء
ستم سکھلائے گا رسم وفا ایسا نہیں ہوتا صنم سکھلائیں گے راہ خدا ایسا نہیں ہوتا اپنے محترم تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان سے دہائی سے اوپر نیاز مندی ہے۔ سیاسی فضا اتنی گرما گرم بلکہ سوانیزے پر پہنچی ہوئی ہے کہ براہ راست مشورہ دینے کے بجائے شاعرِ بے مثال فیض احمد فیض کے شعر کا سہارا لے رہاہوں۔ اور یہ جانتے ہوئے بھی کہ الیکشن کے اس بیچ ہنگام میں محترم خان صاحب کو کہاں فرصت کہ قلم کی گھسائی کرنے والوں کی بات پر دھیان دیں۔ پھر معذرت کے ساتھ یہ خیال بھی آتا ہے کہ ہمارے بیشتر
مزید پڑھیے


حاضر ہو۔۔۔

اتوار 10 جون 2018ء
28سال۔۔۔ جی ہاں پورے 28سال بعد۔۔۔ سپریم کورٹ میں ایئر مارشل (ر) اصغر خان کیس میں۔۔۔ آئی ایس آئی کے سابق سربراہ جنرل (ر) اسد درانی کے حلف نامے میں دئیے گئے 31 ناموں کی آواز لگ رہی تھی۔۔۔ سپریم کور ٹ کا کورٹ نمبر 2کھچا کھچ بھرا ہوا تھا۔۔۔ بڑا ڈرامائی ماحول تھا۔ حلف نامے میں دی گئی 31شخصیات میں سے صرف دو موجود تھیں۔۔۔ ایک مشہور زمانہ باغی مخدوم جاوید ہاشمی اور دوسرے ریٹائرڈ جنرل اسلم بیگ۔۔۔ آوازیں لگنا شروع ہوئیں تو بیشتر کے بارے میں جواب آیا۔۔۔ مرحوم ہوگئے۔۔۔ جبکہ بقیہ کے وکیل پیش ہوگئے۔ ایئر مارشل
مزید پڑھیے


ایک اور کتاب… ایک اور ہنگامہ

بدھ 06 جون 2018ء
میڈیا چاہے پرنٹ ہو۔ الیکٹرانک ہو یا سوشل اس اعتبار سے بڑا ظالم اور سفاک ہوتاہے۔ کہ یہ بڑی سے بڑی خبر کو محض اس وقت چلاتا بلکہ گھسیٹتا ہے جب تک اس سے کوئی بڑی چیختی، چنگھاڑتی بریکنگ نیوز نہ آئے۔آئی ایس آئی کے سابق سربراہ جنرل(ر) اسد درانی اوررا کے سربراہ امر جیت سنگھ دلت کی کتاب نے گذشتہ ہفتے جو طوفان برپا کیا۔ اس پر پہلے اور دوسرے کالم باندھنے کے بعد خیال تھا کہ تیسرے کالم میں اس کی بخیہ گری کروں گا کہ کشمیر، ممبئی، کارگل، موضوعات ہی ایسےHot cake ہیں کہ دہائیوں سے بک
مزید پڑھیے