BN

محمد حسین ہنزل


علامہ زبردست کے ساتھ ایک مختصرنشست


جمعرات کی شام میرے دفتر میں اچانک علامہ زبردست وارد ہوئے۔چونکہ آج کل ہر دو آدمیوں کی مجلس کا محور کورونا وائرس ہوتاہے یوںباتوں باتوں میں ہم نے بھی کورونا ئی وباکو موضوع سخن بنالیا۔علامہ زبردست نے اس عالمگیروباکے بارے میں مجھ سے کئی باتیں شیئرکیں ، تاہم سوائے ایک آخری بات کے باقی سب باتوں پر میں نے ان سے اتفاق کرلیا۔ علامہ صاحب نے پہلی بات یہ کہی کہ چین سے اٹھنے والی کورونا کی حالیہ وبا ایک فتنہ اور الٰہی عذاب ہے ۔ ان کی اس بات سے میں نے نہ صرف اتفاق کیا بلکہ اس
اتوار 19 اپریل 2020ء

نیکی کی ٹوکری

هفته 11 اپریل 2020ء
محمد حسین ہنز ل
یہ ایک نان بائی کا تندور ہے اوراس کے باہر ایک طرف دیوارپر ایک خاکی ٹوکری لٹکی ہوئی ہے ۔نان بائی کے پاس گاہک آتاہے جسے کھانے کو توچارنان ضرورت ہوتی ہے لیکن وہ پیسے آٹھ نان کا اداکرتاہے ۔نان بائی گاہک سے مخاطب ہوتاہے’’ بھائی صاحب ! کیا آپ سے کوئی چوک ہوگئی کہ چار کی بجائے آٹھ نان کے پیسے آپ نے میرے ہاتھ میں تھمادیئے؟ گاہک جواب دیتاہے : نہیں جناب، مجھ سے غلطی نہیں ہوئی ۔ چار نان تو میں نے اپنے بچوں کیلئے خریدلئے اورباقی چارنان کو آپ نے نیکی کی ٹوکری میں ڈالنے ہیں۔یہ جواب
مزید پڑھیے


ایک ملین ڈالر کی تصویر

منگل 07 اپریل 2020ء
محمد حسین ہنز ل
سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی یہ تصویر اگرچہ خلاف القیاس ہے اور دیکھنے سے چنداں تعلق نہیں رکھتی ہے لیکن اس کے نیچے کیپشن میں لکھے گئے جملے نے اس کو ملین ڈالر کی تصویر بنادیا ہے ۔گوکہ مزاحیہ تصاویر میں یہ پہلی تصویر ہے جسے میں نے دیکھتے ہی پہلی فرصت میںنہ صرف اپنے فون کی گیلری میں اپنے لئے محفوظ کرلیا بلکہ بے شماردوستوں کوبھی دکھا چکا ہوں ۔ تصویر میں ایک سفید لاغر بکری بڑی تکلیف میں کھڑی دکھائی دیتی ہے اورنیچے سے چمٹ کر ایک لمبی تڑنگی گائے اس بیچاری کا دودھ چوس رہی ہے
مزید پڑھیے


تم جہاں کہیں ہوگے موت تمہیں آکرپکڑے گی

بدھ 01 اپریل 2020ء
محمد حسین ہنز ل
موت کو تھوک کے حساب سے بانٹنے والا کرونا وائرس پوری آب وتاب کے ساتھ ملک دَرملک ، شہر شہراور قریہ قریہ محو ِ سفر ہے ۔جائے پیدائش اس کا چینی شہر ووہان تھا لیکن اب اس کا ایپی سنٹر یورپ اور امریکہ بن چکاہے۔ تازہ ترین اطلاعات کی رو سے اس وبا سے صرف یورپ کے شہراٹلی میں اب تک دس ہزار سات سونواسی افراد ہلاک جبکہ ساڑھے ستانوے ہزار افراد متاثر ہوئے ہیں۔گزشتہ چند دنوں سے تو وہاں پر یہ وبا اتنی شدت اختیار کرگئی ہے کہ ایک ہی دن میں نوسوسے ایک ہزار افراد جان کی بازی
مزید پڑھیے


ایران کمال کررہاہے

منگل 24 مارچ 2020ء
محمد حسین ہنز ل
ایران ایک قابل رحم ملک ضرورہے تاہم اسے ایک قابلِ رشک ملک کہنا بھی مبالغہ نہیں ہوگا۔ ایران قابل ِ رحم اس لئے ہے کہ کرونا وائرس کی حالیہ وبا کے متاثرین کی فہرست میں یہ عالمی سطح پر تیسرا اور مسلم ملکوں میں پہلا ملک ہے جہاں اس وبا سے سب سے زیادہ لوگ متاثر ہوئے ہیں ۔یہ سطور لکھتے وقت ایران میں اب تک ساڑھے اکیس ہزار سے زیادہ افراد میں کرونا وائرس کی تشخیص ہوئی ہے جبکہ سترہ سو کے قریب اموات واقع ہوئے ہیں۔اس ملک کومیں قابل ِ رشک اس لئے سمجھتاہوں کہ ایک طرف یہ
مزید پڑھیے



کرونا وائرس اور انسان کی حقیقت

هفته 21 مارچ 2020ء
محمد حسین ہنز ل
انسان اپنے آپ کو خواہ کتنا سیانا اور کمالات کا مجموعہ ثابت کردے لیکن سچی بات یہ ہے کہ انسان پھر بھی انسان اور عجز کا پتلا ہی ہے۔یہ پَل دو پَل میں کسی بھی وقت اور کہیں بھی ڈھیر ہوکر زمیں بوس ہوسکتا ہے۔کرونا وائرس کی حالیہ وبائی لہر ہمارے سامنے اس کی ایک زندہ مثال ہے جس نے انسانی حقیقت کی قلعی محض چند دنوں میں کھول کر رکھ دی۔چار سے پانچ سو نینو میٹر کی جسامت رکھنے والے اس غیر مرئی( جرثومے( وائرس نے سات ارب کی انسانی آبادی کو ایک نئے عذاب سے دو چار کر
مزید پڑھیے


بادارہ !دغہ جنگ دی دوطن

پیر 09 مارچ 2020ء
محمد حسین ہنز ل
امریکہ اور افغان طالبان کے درمیان انتیس فروری کو قطری دارالحکومت دوحہ میں ہونے والاامن معاہدہ نہ صرف زخم خوردہ افغانوں کے لئے امید کی ایک کرن تھی بلکہ افغانوں کے لاکھوں کے دیگربہی خواہ بھی اس معاہدے کو نیک شگون سمجھ بیٹھے تھے۔گو کہ بزباں حال سبھی کی زبانوں پراُستاد درویش درانی کے اس شعر کاوِرد تھا، چی بیا نہ تورہ پورتہ شی نہ سَر پہ وینو رنگ شی بادارہ! دغہ جنگ دی د وطن آخری جنگ شی ’’اس دعاکے ساتھ کہ پھر نہ کوئی تلوار اٹھ جائے اور نہ کسی کا سَر خون آلود ہوجائے، اے میرے مولا! اس جنگ کو
مزید پڑھیے


بین الافغان ڈائیلاگ میں خلل ڈالنے کی کوشش

جمعرات 05 مارچ 2020ء
محمد حسین ہنز ل
امریکہ اور افغان طالبان کے بیچ دوحہ میں ہونے والے مذاکرات کو اگرچہ میں نیک شگون سمجھتا تھا لیکن ساتھ ساتھ میرے خدشات بھی بڑھتے جارہے تھے- مجھے ڈر تھا کہ ان مذاکرات کی کامیابی کے بعد افغان وطن کے حقیقی اسٹیک ہولڈرز کے مابین شروع ہونے والی حقیقی ڈائیلاگ( بین الافغانی مذاکرات) میں کہیں طالبان پھر سے ٹانگ اڑانے پر اصرار نہ کریں۔میںاپنے بے شمار مضامین میں یہاںتک میںلکھ چکاہوں کہ شایدطالبان امریکی انخلا کو اپنی جیت قرار دے کر ایک مرتبہ پھر افغانستان میں اپنی اَنانیت کا لوہا منوانے پر بضد رہیں گے۔لیکن دوحہ مذاکرات کے
مزید پڑھیے


علامہ عبدالشکور رَشاد

بدھ 04 مارچ 2020ء
محمد حسین ہنز ل
گزشتہ مضمون میںہم نے ادبی ستاروں کے نام سے شہرت پانے والی جن چھ نامورافغان ادبی شخصیات کاذکرکیا تھا ،ان میں استاد علامہ عبدالشکور رَشاد بھی شامل تھے ۔علامہ عبدالشکور رَشاد چودہ نومبر 1921ء کو تاریخی کندہار کے بربڑ کوچہ میں ایک علمی گھرانے میں پیداہوئے۔ رَشادکے والدعبدالغفور بابر خود ایک عالم اور فاضل انسان تھے یوں انہوں نے اپنے بیٹے کی علمی اور فکری نشوونما میں کوئی کسرنہیں چھوڑی۔اپنے باپ کی اس تربیت کااعتراف خود علامہ رشاد بھی ایک انٹرویومیں کرچکے ہیں کہ’’ میرا اولین استاد اور مُربی میرا باپ ہے ، اللہ تعالیٰ انہیں غریق رحمت کرے۔لیکن مجھے
مزید پڑھیے


اسرائیلی بلڈوزرسے نعیم کی لٹکتی لاش

جمعرات 27 فروری 2020ء
محمد حسین ہنز ل
رَمزے بارعُود ایک مشہور مشرق وسطیٰ کے امور پر لکھنے والے ایک مشہور لکھاری اور فلسطین کرونیکل نامی فلاحی تنظیم کے بانی ہیں۔ پیر کی رات سوشل میڈیا پر ان کے اکائونٹ پر مظلوم فلسطین سے متعلق پھر سے ایک رونگھٹے کھڑی کرنے والی خبر پڑھنے کو ملی۔مبینہ خبر کے لنک کو کلک کرتے ہی بیچ میں ایک ویڈیو بھی نظرآئی ۔تین چار منٹ پر مشتمل اس ویڈیو میں اسرائیلی افواج کے مظالم کی انتہا دیکھ کر میرے ذہن میں کئی سوالات پیدا ہوئے۔ان سوالات کی طرف بعد میں آتے ہیں پہلے بربریت کی اس داستان پر بات کرتے ہیں
مزید پڑھیے