BN

محمد حسین ہنزل


ڈونلڈ ٹرمپ کاچارسالہ عیارانہ دور حکومت


جس طرح ہیلری کلنٹن کے مقابلے میں غیر متوقع طور پر ڈونلڈ ٹرمپ نے صدارتی انتخابات جیت لیے تھے اسی طرح چارسالہ صدارتی دور میں ان کے اٹھائے گئے اقدامات بھی غیرمتوقع ثابت ہورہے ہیں۔ اسرائیل کے حوالے سے دیکھا جائے تو ڈونلڈ ٹرمپ کی پالیسیاں غیر متوقع ثابت ہوئی ہیں۔ مثلاً یہ غیر فطری ملک امریکہ اور برطانیہ کا لاڈلا بچہ سمجھاجاتاہے۔ انیس سو اڑتالیس میں اس ریاست کے قیام کے بعدسے اب تک امریکہ میں بارہ صدور گزرے ہیں لیکن ڈونلڈ ٹرمپ واحد امریکی صدر ہیں جنہوں نے اسرائیل کو حد سے زیادہ قریب بھی سمجھا اور
جمعرات 09 جنوری 2020ء

سلیمانی کی ہلاکت کی امریکی حماقت

اتوار 05 جنوری 2020ء
محمد حسین ہنز ل
’’ جنرل قاسم سلیمانی کے امریکی ڈرون حملے کے نتیجے میں جاں بحق ہونے کی جمعہ کی صبح بریک ہونے والی خبر نے جہاں پورے ایران کوجھنجھوڑ کے رکھ دیا،وہاں امریکہ ،اسرائیل اور اس کے حواریوں کیلئے یہ خوشخبری سے کم نہ تھی ۔ جنرل قاسم سلیمانی کو جمعہ کی صبح عراقی ملیشیاکے ایک اہم کمانڈرسمیت پانچ دیگر ساتھیوں سمیت اس وقت شہید کردیا گیا جب ان کاقافلہ بغداد ہوائی اڈے سے نکل رہاتھا۔قاسم سلیمانی 1957ء کو شمال مشرقی صوبے کرمان کے قنات ِ مالک گاوں کے ایک غریب خاندان میں پیداہوئے۔ابتداء میں وہ ایک کرمان کے آبی
مزید پڑھیے


کیا صرف حکمران طبقہ بدعنوان ہے ؟

پیر 30 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
کرپشن ، کرپشن ،کرپشن ،کرپشن۔یہ لفظ ہماری سماج میں ایک مانوس جانور کی طرح بہت معروف ہوچکاہے ۔میرایقین ہے کہ اس ڈیجیٹل دور میںآج کل ملک کابچہ بچہ بھی اس سے واقف ہے۔کیونکہ ایک تو یہاں کرپشن کا نہ ختم ہونے والاراج دہائیوں سے برقرارہے دوسرا یہ کہ ہمارے ہاں اس ناسورکاخاتمہ ہر سیاستدان کا انتخابی نعرہ ہوتاہے اگرچہ وہ خود ہی کرپٹ کیوں نہ ہو۔افسوس مجھے اس بات کی ہے کہ کرپشن کی صحیح معنی سمجھنے سے ہماری اکثریت یاتوحقیقت میںقاصر ہے یا پھر جان بوجھ کر اسے محدود پیرائے میںاس کامطلب لیاجارہاہے۔مثلاًاس پر توسب لوگوں کا اجماع ہے
مزید پڑھیے


زیرِعتاب بھارتی مسلمان ۔پس چہ باید کرد ؟

جمعرات 26 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
بھارت میں انڈین نیشنل کانگریس ایک قدیم سیاسی جماعت ہے جو برطانوی راج کے زمانے میں 1885 ء میں قائم ہوئی تھی۔ تقسیم ہند کے بعد کانگریس بھارت میں اب تک سات آٹھ مرتبہ اقتدار میں آئی ہے ۔انیس سوباون میں لوک سبھا کے پہلے انتخابات ہوئے تو کانگریس نے کلین سویپ کیا اور جواہرلال نہرو پہلی بار ہندوستان کے منتخب وزیراعظم بنے ۔ پانچ سال بعد پھر انتخابات ہوئے تو کانگریس کو پھر برتری ہوئی اور نہرو دوسری مرتبہ وزیراعظم بن گئے ۔ باسٹھ کے انتخابات میں اس جماعت کو پھر برتری ملی اور پھرنہرو وزیراعظم بن
مزید پڑھیے


تاریخ کے لاڈلے حکمران

اتوار 22 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
اسلامی تاریخ میں خلفائے راشدین کا دورہر لحاظ سے قابل رشک تھا۔ خلافت راشدہ کے بعدرفتہ رفتہ عالم اسلام میں خلافت کی بجائے ملوکیت کاسکہ رائج ہوا۔ باری باری اموی خاندان کے بااثر لوگ خلیفہ کی صورت میں بادشاہ بنتے گئے یوں اس خاندان کایہ سلسلہ تقریبا بیانوے برس تک جاری رہا۔ اس پورے عرصے میں کم وبیش دس بارہ حکمران آئے، حکمرانی کی اور چلے گئے۔ 750 میں امیوں کی حکومت ساقط کردی گئی اور اس کی جگہ عباسیوں نے سنبھالی۔عباسی ملوکیت تقریبا پانچ سو چوبیس برس قائم رہی،اس عرصے میں تقریبا سینتیس تخت نشین گزرے۔تاریخ کامزاج عموماً
مزید پڑھیے



کچلاک ۔ژوب شاہراہ ،حادثات اور حکومتی غفلت

بدھ 18 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
پچھلے چھ مہینوں میں یہ میرا تیسرا کالم ہے جو شدید کرب کے عالم میں لکھ رہا ہوں ۔ تین روز پہلے علی الصبح کچلاک ژوب شاہراہN-50 نے پھر سے رونگھٹے کھڑے کرنے والے ایک المناک حادثے کا مژدہ سنایا ۔ بیک وقت تیرہ انسانی جانوں کو پل بھر میں راکھ کے ڈھیر میں تبدیل کرنے والا یہ حادثہ مسلم باغ کے قریب کان مہترزئی کے مقام پر پیش آیا - ایرانی پٹرول سے لدی پک اپ گاڑی مخالف سمت سے آنے والی مسافر بردار کوچ سے ٹکرا گئی جس کے نتیجے میں دونوں گاڑیاں آگ کی لپیٹ میں
مزید پڑھیے


افگار بخاری کی شہادت

اتوار 15 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
گزشتہ کالم میں مولانا قیام الدین خادم کی رحلت اور شاعری پر روشنی ڈالی گئیبیسویں صدی میں افغانستان کے ادبی افق پر جن چھ ادیبوں اورشعراء نے انمٹ نقوش چھوڑے ہیں، ادبی حلقوں میں وہ ستاروں کے نام سے مشہور ہیںان میں مولانا قیام الدین خادم بھی شامل ہے۔مولاناخادم ایک ہمہ جہت شخصیت کے مالک تھے کیونکہ وہ بیک وقت عالم دین بھی تھے ،پکے نیشنلسٹ بھی تھے ،شاعر وادیب اور ایک اچھے انسان بھی تھے۔ اُن کے نثری اور شعری فن پارے پڑھنے کے بعدقاری پہلی فرصت میں ان کی افغانیت،وطن دوستی اور ملی تفاخر کو بھانپ لیتا ہے
مزید پڑھیے


مولانا قیام الدین خادم کون تھے؟

اتوار 08 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
بیسویں صدی میں افغانستان کے ادبی افق پر جن چھ ادیبوں اورشعراء نے انمٹ نقوش چھوڑے ہیں، ادبی حلقوں میں وہ ستاروں کے نام سے مشہور ہیںان میں مولانا قیام الدین خادم بھی شامل ہے۔مولاناخادم ایک ہمہ جہت شخصیت کے مالک تھے کیونکہ وہ بیک وقت عالم دین بھی تھے ،پکے نیشنلسٹ بھی تھے ،شاعر وادیب اور ایک اچھے انسان بھی تھے۔ اُن کے نثری اور شعری فن پارے پڑھنے کے بعدقاری پہلی فرصت میں ان کی افغانیت،وطن دوستی اور ملی تفاخر کو بھانپ لیتا ہے اور ساتھ ساتھ ان کی انسان دوستی اور روشن فکری کامعترف بھی ہوجاتاہے۔پشتون ملاووں
مزید پڑھیے


افغانوں کے مسیحا کابے رحمانہ قتل

جمعه 06 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
در بدر افغانوں کی خدمت کے جذبے سے سَرشار جاپانی ڈاکٹرٹیٹسو ناکا مورا کے بہیمانہ قتل نے مجھ سمیت لاکھوں انسانوں کو دکھی کردیا-ڈاکٹرناکاموراکے سفاک قاتل یقینا اس خوش فہمی میں مبتلا ہونگے کہ انہوں نے ایک غیر ملکی اور غیر مذہب انسان کو قتل کرکے اپنے لیے جنت واجب کرلی لیکن حقیقت میں یہ ان کی بھول ہے- اول تو کسی بھی مذہب کے ماننے والے بے گناہ افراد کی جان ومال کو تحفظ فراہم کرناہمارے دین کی اولین ترجیح ہے،سو بغیر کسی شرعی جواز کے ایک مسلمان کیلئے کسی عیسائی ، یہودی یا دوسرے غیر مذہب کو مارناقطعاً ناجائز
مزید پڑھیے


خان عبدالصمد اچکزئی کون تھے؟

منگل 03 دسمبر 2019ء
محمد حسین ہنز ل
وہ بھی اچکزئی تھے یوںدیگر اچکزئیوں کی طرح ان کے سامنے بھی نارمل زندگی گزارنے کا خاصااچھاآپشن موجودتھا۔وہ تجارت میں وقت لگاتے تو بڑا مال اکٹھا کرتے۔ گلہ بانی اور زراعت کے پیشے سے منسلک ہوتے تب بھی زندگی آسودہ اور پرآسائش گزرجاتی۔انگریز سرکار سے وفاداری تو اسی زمانے کا بہترین انتخاب ہواکرتاتھا لیکن اس بدقسمت اچکزئی نے اس نوعیت کی بہترین نوکری کوبھی قبول نہیں کیا ۔ کیوں ؟ کیونکہ انہوں نے خود کو اپنی ذات سے بے نیاز کردیاتھا۔نام بھی ان کا ’’عبدالصمد‘‘ تھا یعنی بے نیاز ذات کا بندہ ۔عبدالصمدخان اچکزئی نے کل چھیاسٹھ برس عمر
مزید پڑھیے