BN

محمد عامر خاکوانی



خو اب سرائے


بسا اوقات ایسا ہوتا ہے کہ ہم کسی چیز کے بارے میں کوئی خاص تصور قائم کر لیتے ہیں اور پھر خاصے عرصے تک اسی پر کاربند رہتے ہیں۔ ضروری نہیں کہ اس کی مضبوط وجہ ہو، بس آدمی کبھی سنگل ٹریک ہو کر سوچتا اور اس سے باہر نہیں نکل پاتا۔ میرے ساتھ یہ اخوت کالج یونیورسٹی کے حوالے سے ہوا۔ اخوت یونیورسٹی کا اشتہار کہیں دیکھا اور اس کا ذکر سنا تو اسے ایزی لیا۔ ذہن میں آیا کہ اس طرح کے تو کئی ادارے اور بھی ہیں ۔ بلاسود چھوٹے قرضے دینے والے ادارے’’اخوت‘‘سے کون واقف نہیں۔
منگل 19 مارچ 2019ء

سانحہ نیوزی لینڈ، کیا سیکھنا چاہیے؟

اتوار 17 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
کرائس چرچ میں نمازیوں پر جو قیامت ٹوٹی ، اس بارے میں کیا کہا جائے۔ایک لہورنگ ویڈیو سوشل میڈیا پرچلی، بعد میں اسے روک دیا گیا، اچھا ہوا۔ایسی ویڈیوز دیکھی نہیں جاتیں۔ منظر مدتوں پیچھا نہیں چھوڑتے۔ ہم پاکستانی ایسے بہت سے زخم اپنی روح میں چھپائے بیٹھے ہیں۔ مساجد میں نمازیوں پر فائرنگ، بازاروں، اہم مقامات پر دھماکے ، جنازوں میں خود کش حملے … اور نجانے کیا کیا۔ بہت سوں نے ٹی وی دیکھنا ہی چھوڑ دیاتھا کہ دکھ برداشت سے باہر ہوگیا۔نیوزی لینڈ پرامن ملک سمجھا جاتا ہے، پہلی بار ایسی خوفناک دہشت گردی ہوئی، وہاں
مزید پڑھیے


وزیراعظم علمی اداروں کو بھی تحفظ دیں

جمعه 15 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
وزیراعظم عمران خان پر بعض اوقات ترس آتا ہے۔امور مملکت میں وہ نئے ہیں، انتظامی معاملات سنبھالنے کا تجربہ موجود نہیں۔ ایسے میں غلطیاں ہونے کے امکانات بڑھ جاتے ہیں۔ افسوس کہ انہیں ناتجربہ کار اور عاقبت نااندیش ٹیم کا سامنا ہے۔ اپنے ٹیم لیڈر کے لئے آسانیاں فراہم کرنے، راستے کے کانٹے چننے کے بجائے وہ قدم قدم پر نئی مشکلات پیدا کرتے ہیں۔ پنجابی محاورے کے مطابق ہر روز ایک نیا کٹا کھول دینے کے ماہر۔ جنہیں اس محاورے کا اندازہ نہیں، آسان اردو میں وہ یہ سمجھ لیں کہ مویشیوں کے کسی باڑے میں اگر بھینس کا
مزید پڑھیے


سول ایوارڈ ز2019،عجیب وغریب فیصلے

بدھ 13 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
سول ایوارڈ 2019پر بات کرنی ہے۔ ہر سال حکومت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے ممتاز شخصیات کا انتخاب کرتی ہے، جنہیںتئیس مارچ کو یہ ایوارڈز دئیے جاتے ہیں۔ چودہ اگست کو ان شخصیات کا اعلان ہوتا ہے، اس بار چونکہ اس وقت حکومت موجود نہیں تھی، اس لئے اعلان نہیں ہوا۔ تین دن پہلے ان شخصیات کے ناموں کا اعلان کیا گیا، جنہیں دو ہفتے بعد ایوارڈز دئیے جائیں گے۔ ہمارے ہاں ایوارڈز وغیرہ اکثر تنازعات کا شکار رہتے ہیں، وجہ دیانت داری سے سلیکشن نہ ہونا ہے۔سب سے زیادہ بدنامی زرداری حکومت کے حصے میں آئی تھی۔ پاکستانی
مزید پڑھیے


خواتین مارچ پر تنقید کیوں؟

منگل 12 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
خواتین مارچ پر ہونے والی بحث ابھی ختم نہیں ہوئی ۔ دو تین دنوں میں میڈیا اور سوشل میڈیا دونوں پر انہیں بے بھائو کی سنائی گئیں۔ شروع میں تو شدید ردعمل کے پیش نظر لبرل کیمپ سرے سے غائب ہوگیا، پھر شائد ان بیبیوں کے شرم دلانے پر شرماتا، لجاتا، کسمساتا ہوا ایک گروہ دفاع کے لئے میدان میں اترا۔ اپنا کیس مضبوط انداز میں پیش کرنے کے بجائے انہوں نے صرف میل شاونزم کے روایتی الزامات لگانے، مذہبی حلقوں پر طعن وتشنیع کے سوا کچھ نہیں کیا۔ ایک دلچسپ دلیل البتہ یہ پیش کی گئی کہ اتنا
مزید پڑھیے




بھیانک مذاق

اتوار 10 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
آٹھ مارچ ، خواتین کے عالمی دن کے موقعہ پر اس بار جو بھیانک مذاق کیا گیا،مجھے یقین ہے اس نے ہر ایک کو کسی نہ کسی حد تک ہلا کر رکھ دیا۔پہلی بار نہایت منظم انداز میں مختلف شہروں میں بعض مغرب زدہ تنظیموں اور نام نہاد این جی اوز کے زیراہتمام جلوس نکالے گئے، جسے خواتین مارچ کا نام دیا گیا۔ میڈیا میں تو زیادہ کچھ نہیں آیا، سوشل میڈیا پر اس مارچ کی تصاویر آئیں تو میری طرح بے شمار لوگ انگشت بہ دنداں رہ گئے۔ عام طور پر ایسے مشکل الفاظ میں نہیں لکھتا، مگر
مزید پڑھیے


ہمیں اب آگے بڑھنا ہوگا

جمعه 08 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
پاک بھارت کشیدگی میں کمی آتے ہی اس سے منسلک دیگر اہم ایشو نمایاں ہونے لگے ہیں۔ مجھے اندازہ نہیں کہ بھارت میں جنگی جنون تھمنے اور الیکشن کا عمل آگے بڑھنے کے بعد وہاں کی انٹیلی جنشیا اور فعال طبقات مسئلہ کشمیر کے حوالے سے غیر جذباتی سوچ بچار کے قابل ہوپاتے ہیں یا اس حوالے سے وہاں تمام دروازے بند ہوچکے ہیں۔ کامن سینس تو یہ کہتی ہے کہ بھارت جیسے ملک کو جسے عالمی قوت بننے کا جنون ہو، اسے ہر قیمت پر کشمیر جیسے تنازعات کو نمٹا دینا چاہیے۔ خیر بھارتی جانیں اور ان کا کام
مزید پڑھیے


نئی دنیا، نئے حقائق

بدھ 06 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
جنگ کبھی خوشگوار نہیں ہوتی،اپنے جلو میں یہ تباہی اور بربادی لاتی ہے۔ پاکستان، بھارت کے لوگوں نے جنگ کا حقیقی وحشت ناک چہرہ دیکھا ہی نہیں۔ جو جنگیں ہم نے آپس میں لڑیں، وہ محدود تھیں اور ان میں شہروں کو نقصان پہنچانے سے گریز کیا گیا۔ یورپ کو دوسری جنگ عظیم میں جس تباہی کا سامنا کرنا پڑا، اس سے انہوں نے بہت کچھ سیکھا اور پھر کبھی ویسی صورتحال پیدا کرنے سے گریز کیا۔ امریکہ کو ویت نام میں بہت نقصان اور شرمندگی اٹھانا پڑی۔نائن الیون کے بعدامریکہ بوکھلاہٹ میں افغانستان اور پھر عراق پر چڑھ
مزید پڑھیے


پہلا رائونڈ۔کیا سبق حاصل ہوئے؟

اتوار 03 مارچ 2019ء
محمد عامر خاکوانی
پاکستان اور بھارت کے مابین کشیدگی اور ممکنہ جنگی صورتحال کے حوالے سے سردست ایک وقفہ سا آیا ہے۔ پاک بھارت تعلقات تاریخی طور پر نشیب وفراز کا شکار رہے ہیں، چار جنگیں لڑی جا چکی ہیں، کئی بار جنگ کے دہانے پر جا کر واپسی ہوئی۔ اس لئے یقین سے کچھ بھی نہیں کہا جا سکتا۔ امید کرنی چاہیے کہ پلوامہ حملے کے بعد سے جاری کشیدہ صورتحال میں اب کمی آئے گی اورمثالی امن نہ سہی، پہلے جیسی پرامن ورکنگ کنڈیشن بحال ہوجائے گی۔ان چند دنوں کے دوران بہت کچھ تلپٹ ہوا ، کئی تصورات تحلیل ہوئے، نئے
مزید پڑھیے


زندگی۔ کچھ مکمل، کچھ ادھوری

منگل 26 فروری 2019ء
محمد عامر خاکوانی
آج کل پھر وہی کام زیادہ اور وقت کم والی صورتحال چل رہی ہے۔ کسی زمانے میں یہ فقرہ بہت سنتے تھے، ’’وقت کم ہے اور مقابلہ سخت‘‘۔ اب آ کر سمجھ آئی کہ وقت ہمیشہ کم ہوتا ہے اور مقابلہ تو ہے ہی سخت۔سیانے کہتے ہیں(آپ چاہیں توموٹیویشنل سپیکر حضرات مراد لے لیں) کہ اصل با ت ترجیحات کی ہے۔ جو چیزیں ترجیحات میںٹاپ پر ہوں، ان کے لئے آدمی وقت نکال لیتا ہے۔ بات درست ہوگی، سیانوں سے کیا بحث کرنی۔ ویسے سیانے لوگوں کی مثال سن کر ہمیشہ ایک مشہور لطیفہ یاد آجاتا ہے ۔کہتے ہیں
مزید پڑھیے