BN

اوریا مقبول جان



افغان طالبان اور سیکولر لبرل بیانیے کی ذلت آمیز شکست


اگر جنگ عظیم دوم میں ہٹلر کے ساتھی جیت جاتے تو تاریخ کی کتابوں میں سب سے بڑے فاشسٹ اور انسانیت کے مجرم چرچل، ٹرومین اور سٹالن ہوتے۔ جس طرح نازی پارٹی کے جنم مقام نیورمبرگ کے اس ہال میں جنگی جرائم پر مقدمے چلائے گئے تھے، جہاں پر نازی پارٹی اپنی بڑی بڑی ریلیاں منعقد کیا کرتی تھی، اسی طرح جمہوریت کے جنم مقام بگ بین کے زیر سایہ برطانوی پارلیمنٹ میں ویسی ہی عدالت سجائی جاتی۔ جیسے نازی جرمنی کے 24 اہم سیاسی اور فوجی قائدین پر مقدمات چلائے گئے تھے ویسے ہی امریکہ، برطانیہ، فرانس اور
بدھ 13 فروری 2019ء

اس دلدل سے نکلو عمران خان

پیر 11 فروری 2019ء
اوریا مقبول جان
جس وقت یہ سطور آپ تک پہنچیں گی۔عمران خان متحدہ عرب امارات میں بسائے گئے عالمی اقتصادی استحصالی سودی نظام کے عماراتی جنگل میں آئی ایم ایف سے اپنی گفتگو کا آغاز کر چکے ہوں گے اور جس طرح کے حواری ان کے ساتھ ان مذاکرات میں گئے ہیں عین ممکن ہے وہ آئی ایم ایف سے ایک جامع پیکیج لینے میں کامیاب بھی ہو جائیں اور اسے اپنے لئے ایک فتح قرار دے دیں۔ اس لئے کہ یہ سب کے سب اپنی تعلیم ‘ تربیت اور نقطہ نظر کے غلام ہیں۔ ان کی آنکھ اس مکروہ سودی نظام کی
مزید پڑھیے


مومن کی فراست سے ڈرو

جمعه 08 فروری 2019ء
اوریا مقبول جان
یوں لگتا ہے علم و حکمت، فہم و فراست اور معاملہ فہمی اس شخص کی میراث ہو۔ جدید حالات و واقعات کا اسے مکمل ادراک اور جیسے عالمی منظر نامہ اس کی ہتھیلی پر درج ہو۔ قرون وسطیٰ کے مسلمانوں کے لباس عمامہ، شلوار قمیص میں ملبوس، چہرے پر وہ داڑھی جسے گزشتہ دو دہائیوں سے دہشت کی علامت بنا کر پیش کیا گیا لیکن ماسکو کی اس میٹنگ میں اس کے مخاطب وہ لوگ تھے جنہیں اپنی عالمی امور کی ڈگریوں پر ناز تھا، جو سفارتی دنیا کے ’’مچھندر‘‘ سمجھے جاتے تھے اور آئین سازی اور جمہوریت جن
مزید پڑھیے


سیکولر ،مذہب بیزار افراد کی رہنما کتاب اور عمران خان کے ساتھی

بدھ 06 فروری 2019ء
اوریا مقبول جان
پاکستان کی تخلیق ایک ایسا واقعہ ہے جو دنیا بھر کے سیکولر‘ لبرل اور مذہب بیزار گروہوں کے سینے میں خنجر کی طرح پیوست ہے۔ وہ جنہوں نے دنیا بھر کے علوم کو گزشتہ تین سو سال کی محنت سے سیکولر بنایا تھا، انسانوں کو یہ سکھایا تھا کہ جو کچھ انسانی مشاہدہ کے تحت سائنس بتاتی ہے وہی اصل سچ ہے باقی سب وہم و گمان ہے ، انہی ماہرین اور دانشوروں نے پوری دنیا میں بسنے والے انسانوں کو یہ درس بھی پڑھایا تھا کہ تمام انسان رنگ، نسل، زبان اور علاقے کی وجہ سے ایک دوسرے سے
مزید پڑھیے


ابھی تو تماشا شروع ہوا ہے

پیر 04 فروری 2019ء
اوریا مقبول جان
کس قدر سناٹا اور خاموشی ہے۔ مادہ پرستی اور ٹیکنالوجی کے بتوں کو خدا ماننے والوں کے قلم یوں لگتا ہے زنگ آلود ہو چکے ہیں اور زبانیں گنگ۔ وہ اخبار، جریدے اور ٹیلی ویژن جو افغانستان میں کسی امریکی کو مچھر بھی کاٹنے پر وہاں ملیریا کی افتاد تک کہانی لے جاتے تھے۔آج انہیں وہ مظلوم ملا عبدالسلام ضعیف نظر نہیں آتا، جسے انسانی تہذیب کے تمام سفارتی آداب کو پس پشت ڈال کر امریکیوں کے حوالے کیا گیا تھا۔ آج وہ مذاکرات کی میز پر ان امریکیوں کے روبرو بیٹھا تھا، جن کی بدترین گوانتاناموبے جیل میں وہ
مزید پڑھیے




یہ امتِ مسلمہ کی فتح ہے

جمعه 01 فروری 2019ء
اوریا مقبول جان
پوری امتِ مسلمہ کو اس کا جشن منانا چاہیے۔ ان دنوں ان منافقین کے چہرے دیکھنے والے ہیں جو کلمہ تو اس کائنات کے مالک و مختار ‘ اللہ کا پڑھتے ہیں، نعتیں بھی اس رسولِ رحمت کی شان میں تحریر کرتے ہیں جس کی ساری زندگی اپنے وصال کے آخری سال تک کفار‘ مشرکین اور اللہ کے دشمنوں کے خلاف شمشیر بکف گزری۔ لیکن ان کے سینوں میں ٹیکنالوجی کے بت چھپے ہوئے ہیں۔ یہ اس رسولؐ کی امت کی تضحیک کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے۔ وہ رحمتہ اللعالمین جو اپنی امت کے اوصاف گناتے ہوئے
مزید پڑھیے


امریکہ کے بعد کا پر امن افغانستان

بدھ 30 جنوری 2019ء
اوریا مقبول جان
پاکستان کا سیکولر، لبرل اور روشن خیال طبقہ جو خود کو آزادی، امن اور انسانی حقوق کا علمبردار بنا کر پیش کرتا ہے، اس طبقے کے دل میں آج کل ایک خواہش بہت شدت سے مچل رہی ہے۔ تاریخ شاہد ہے کہ شکست خوردگی کی ذلت کی دلدل میں بار بار دھنستے ہیں اور ڈھٹائی کے ساتھ پھر قلم ہاتھ میں پکڑ لیتے ہیں یا کیمروں کے سامنے آکر اپنے سینوں میں چھپی ہوئی خواہشوں کا اظہار کرنے لگتے ہیں۔ یہ طبقہ مدتوں کیمونزم، سوشلزم اور کسان مزدور کی بادشاہت کے خواب دیکھتا رہا، لیکن اس کا اصل
مزید پڑھیے


کیا یہ عالمی جنگ کے آغاز کا سال ہے؟

پیر 28 جنوری 2019ء
اوریا مقبول جان
امت مسلمہ کی عمر کا اندازہ لگانا اور قرب قیامت کی علامتوں اور دور فتن کی دستک کے بارے میں علم حاصل کرنا مسلمان امت کے علماء کی روایت رہی ہے۔ ان کی تمام جستجو اور علم قرآن پاک کی آیات اور سید الانبیاء ؐکی احادیث کے دائرے میں گھومتا ہے۔ یوں تو ان چودہ سو برسوں میں لاتعداد بندگان خدا، اولیائ، اصفیاء اور اصحاب سیر ایسے گزرے ہیں جنہوں نے اپنے ایسے مکاشفات ،الہام اور خواب بیان کئے ہیں جن میں اس دورِ آخر کے بارے میں اشارے ملتے ہیں۔ لیکن اس تمام علم پر عائد دو پابندیاں بہت
مزید پڑھیے


کیا یہ عالمی جنگ کے آغاز کا سال ہے؟

جمعه 25 جنوری 2019ء
اوریا مقبول جان
گزشتہ بیس سالوں سے یہ دنیا جس تیزی کے ساتھ جنگ و جدل، قتل و غارت اور خوف و دہشت کے ماحول کی طرف بڑھی ہے، پوری انسانی تاریخ میں کبھی ایسا نہیں ہوا۔ بیسویں صدی، جو کہ دو عالمی جنگوں کے ساتھ ساتھ لاتعداد جنگوں کا شکار رہی، اس صدی میں بھی کبھی دنیا اس طرح مسلسل سلگتی نہیں رہی۔بلکہ ان جنگوں کے آغاز سے لے کر انجام تک مختلف ممالک کی افواج ایک دوسرے سے نبرد آزما تھیں اور پھر ایک دن ان دونوں میں سے ایک گروہ کو فتح حاصل ہو گئی۔ لیکن ان گزشتہ بیس سالوں
مزید پڑھیے


جدید معاشی و سیاسی تہذیب کے 26 مکروہ کردار

بدھ 23 جنوری 2019ء
اوریا مقبول جان
سرمایہ دارانہ سودی معیشت سے جنم لینے والی ’’مقدس جمہوریت‘‘ ایک ایسا عالمی استحصالی نظام ہے جس کی کوکھ سے گزگشتہ پچاس سالوں میں غربت‘ افلاس، بھوک، بیماری، قحط، بے روز گاری، جنگ، دہشت، قتل و غارت، ہجرت، بدیانتی، رشوت، بے ایمانی، جنسی استحصال اور اغواء جیسی لاتعداد بلاؤں نے جنم لیا ہے۔ دنیا کا نقشہ اس جمہوری نظام کے سرمایہ دارانہ تسلط سے پہلے کبھی اس قدر خوفناک نہ تھا۔ خون چوسنے والے سودی بینکاری نظام سے جنم لینے والی مصنوعی کاغذی دولت کے انبار پر قابض کارپوریٹ دنیا کا خوش نما چہرہ، جمہوری سیاسی لیڈران، معاشی تجزیہ کار،
مزید پڑھیے