BN

سعد الله شاہ



لمحہ لمحہ کرچیاں


بڑھا دیتی ہیںعمروں کو نہ جانے یہ کتابیں کیوں میں چھوٹا تھا مگر سر پر کئی صدیوں کا سایہ تھا یہ ایک احساس ہے جو کبھی مجھے تھا کہ جب مجھ سے کتابیں باتیں کرتی تھیں اور پھر ایک اور طرح کا احساس کہ راز منکشف ہونے لگا’’خوں جلایا ہے رات بھر میں نے۔ لفظ بولے ہیں تب کتابوں سے‘‘ اب سچ یہ ہے کہ نہ وہ دن رہے نہ وہ فراغت کہ کتاب کا لمس اور کاغذ کی خوشبو مدہوش کر دے ۔مجھے یاد ہے کہ تب اتنی کتابیں گھر میں جمع ہوگیں کہ جب ہمیں مکان بدلنا پڑا تو ٹرک
اتوار 22  ستمبر 2019ء

کشمیر مشاعرہ اور کشمیریوںکا دُکھ

هفته 21  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
کیوں نہیں دیکھتا قبروں کے نشاں سے آگے اک جہاں اور بھی ہے تیرے جہاں سے آگے تجھ کو معلوم نہیں فرض ہے تجھ پر بھی جہاد اور تو نکلا نہیں لفظ و بیاں سے آگے اصل میں یہ دو اشعار میرے اس نوحہ کے ہیں جو میں نے کشمیر کے ضمن میں ہونے والے مشاعرہ کے لئے کہے جو عارف چودھری نے نجیب احمد کی صدارت میں الحمرا ادبی بیٹھک میں منعقد کیا۔ میری سرخوشی یہ کہ ادیبوں اور شاعروں میں اپنے کشمیری بھائیوں کے لئے ایک احساس درد جاگا اور انہوں نے اپنے فکرو فن کے ذریعہ اس قلمی جہاد میں شرکت
مزید پڑھیے


نابغہ عصر مولانا طاہر القادری

جمعه 20  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
میرے سخن آشنا دوست یقینا اس بات کو محسوس نہیں کریں گے اور نہ مجھے گردن زدنی قرار دیں گے کہ اگر میں مولانا طاہر القادری کے ضمن میں خدائے سخن میرؔ کا شعر درج کر دوں: مت سہل ہیں جانو پھرتا ہے فلک برسوں تب خاک کے پردے سے انسان نکلتا ہے میں علامہ طاہر القادری کے بارے میں ان کی سیاست سے ریٹائرمنٹ پر کالم لکھنا چاہتا تھا مگر مجھے اندیشہ تھا کہ کالم چھپنے تک ان کے مداحین ان کو ریٹائرمنٹ واپس لینے پر مجبور نہ کر دیں۔ شاید یہی اندیشہ یا ڈر دوسرے لکھنے والوں کوبھی ہو کہ اس
مزید پڑھیے


حلقہ ارباب ذوق کی محفل سلام

منگل 17  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
تذکرہ تو مجھے کرنا ہے سلام کی ایک محفل کا کہ جسے ادبی دنیا کے سب سے بڑے پلیٹ فارم حلقہ ارباب ذوق کے پلیٹ فارم سے پیش کیا گیا جس کے روح رواں علی نواز شاہ ہیں جو افسر بھی اور ادیب ہیں پھر ہر دو حوالے سے خوبصورت نظامت اس متبرک محفل کی اعجاز رضوی نے کی اور صدارت کا اعزاز مجھے بخشا گیا‘ شاید اس لئے کہ میں ابھی ابھی فریضہ حج ادا کر کے آیا ہوں۔ وگرنہ صدارت سے بہت ہی سینئر ہو جانے کا اندیشہ ہوتا ہے۔ خیر ہم اپنی محفل کی بات تو کریں
مزید پڑھیے


مہنگائی سے رسوائی تک

پیر 16  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
ان دنوں گھسے پٹے لطیفے بھی کیسے نئے اور تازہ لگنے لگے ہیں۔ ایک شخص نیکر پہن کر بیری سے بیر اتار رہا تھا۔ کسی نے پوچھا ’’جناب! کیا ہو رہا ہے‘‘ بولے زندگی میں دو ہی کام کیے ہیں ‘ اچھا پہننا اور اچھا کھانا‘‘ بیر کو چھوڑیے اب تو کھیرے کی اہمیت کس قدر بڑھ گئی ہے۔ حالانکہ ایک مرتبہ ایک شخص نے کھیرا پھانکوں میں کاٹ کر پاس بیٹھے ہوئے لوگوں میں بانٹ دیا اور خود آرام سے ایک طرف ہو کر بیٹھ گیا۔ ایک دوست نے کہا ’’یار تم خود کھیرا کیوں نہیں کھا رہے؟‘‘ اس
مزید پڑھیے




بلاول‘ کراچی اور قبضہ

هفته 14  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
بھادوں کا مہینہ ختم ہونے کو آیا مگر حبس ابھی تک ہے مگر اتنا نہیں کہ مصرع پڑھنا پڑے کہ ’’وہ حبس تھا کہ لُو کی دعا مانگتے تھے لوگ’’ملکی حالات بھی کچھ ایسے ہی دگرگوں ہیں کہ کچھ پتہ نہیں چل رہا۔مہنگائی سب کو پسپا کر رہی ہے اس گھٹن اور بے چینی میں بھی سوشل میڈیا پر کوئی نہ کوئی پوسٹ ایسی ہوتی ہے کہ گدگدی کر کے ہمیں مسکرانے پر مجبور کر دیتی ہے۔ ان مزاحیہ پوسٹوں کے ساتھ مجھے بلاول کا حالیہ بیان کیوں ملتا جلتا ہوا محسوس ہوا کہ جس میں انہوں نے اسلام آباد
مزید پڑھیے


کیا پولیس کی اصلاح ممکن ہے

اتوار 08  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
مزاج کی دنیا کے نامور اداکار امان اللہ نے ایک مزیدار بات سنائی کہ اس کے گھر چور آ گئے تو اس نے کلاشنکوف اٹھا لی۔ یہ دیکھ کر چور فوراً فرار ہو گئے۔ تھوڑی دیر کے بعد پولیس اس کے گھر گھس آئی اور ناجائز اسلحہ طلب کیا کہ اس نے گھر میں بغیر لائسنس کلاشنکوف رکھ چھوڑی ہے۔ امان اللہ نے دست بستہ عرض کیا کہ مہاراج وہ تو بچوں کا کھلونا ہے یہ تو اس نے ایک کھیل کھیلا اور اسے چوروں پر تان لیا۔ پولیس نے اس کھلونا کلاشنکوف کا جائزہ لیا اورچلتی بنی پھر کچھ
مزید پڑھیے


کچرا کچرا کراچی اور مصطفی کمال

جمعرات 05  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
’’محوِ حیرت ہوں کہ دنیا کیا سے کیا ہو جائے گی‘‘ حیرت تو اس بات پر ہوتی ہے کہ کراچی جیسا عروس البلاد اور روشنیوں کا شہر گردانا جاتا تھا، اب کچرا کچرا کراچی کیسے بن گیا۔ اتفاق سے میں مصطفی کمال کی زبانی کہانی سنی تو سمجھ میں آیا کہ ان گند پسند لوگوں کے عزائم کیا ہیں۔ اتفاق سے کچھ عرصہ قبل میں عافیہ صدیقی کی رہائی کے لیے قائم جرگہ میں شریک ہوا کہ محترمہ ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے بلایا تھا تو وہاں میں نے دیکھا کہ سچ مچ سڑکوں کا کوئی پرسانِ حال نہیں تھا تا
مزید پڑھیے


کشمیریوں کی عملی طور پر مدد کیسے کی جائے

منگل 03  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
دشت کی پیاس بڑھانے کے لئے آئے تھے ابر بھی آگ لگانے کے لئے آئے تھے ایسے لگتا ہے کہ ہم ہی سے کوئی بھول ہوئی تم کسی اور زمانے کے لئے آئے تھے مجھے اسی تناظر میں بات کرنا تھی کہ کل بارش اتری تو بجلی غائب ہو گئی۔ بارش تو دو تین گھنٹے برسی مگر بجلی چھ سات گھنٹے غائب رہی۔میں مرغزار کالونی کی بات کر رہا ہوں۔ یہاں م کے اوپر زبر ہے تو اس کا مطلب سبزہ زار ہوا اور اسے بارش کی ضرورت تو ہوتی ہے۔ مگر بجلی کے بغیر تو سارے برقی آلات بند ہو جاتے ہیں اور
مزید پڑھیے


کشمیر اور حاجیوں کا استقبال

اتوار 01  ستمبر 2019ء
سعد الله شاہ
ابھی تک سفر کی تھکاوٹ ہے۔ اٹھتے ہی اپنا اخبار 92نیوز دیکھا تو آنکھوں میں چمک آئی۔ ہارون الرشید صاحب کا کالم ’’کوئی کوئی‘ خال خال‘‘ پڑھا تو میں نہال ہو گیا کیا کریں ہم جیسوں کی خوراک یہی ہے وہ نثر کب لکھتے ہیں۔ شاعری کرتے ہیں اور وہ بھی پر مغز۔ پتہ نہیں ان کے اندر کتنے زمانے سانس لیتے ہیں۔ مکہ میں بھی اکثر حجاج کشمیر کے حوالے سے پوچھتے۔ میرا بیٹا عمیر بن سعد ایئر پورٹ پر لینے آیا تو آپ یقین مانیے میری بیگم نے سب سے پہلے کشمیر کے حوالے سے موجودہ صورتحال
مزید پڑھیے