Common frontend top

سعد الله شاہ


حکومت کا خودکش انداز


کوئی مرکز بھی نہیں کوئی خلافت بھی نہیں سب ہی حاکم ہیں مگر کوئی حکومت بھی نہیں جھوٹ ہی جھوٹ ہے یہ سارا نظام حرمت اور اس جھوٹ پہ حاکم کو ندامت بھی نہیں آپ یقین کیجیے کہ سب کے سب اقتدار ہی کے بھوکے ہیں۔کم از کم اس معاملے میں مولانا نے تو سچ ہی کہا تھا کہ کیا کوئی اقتدار حاصل نہ کرنے کے لئے بھی سیاست کرتا ہے۔کوئی مانے یا نہ مانے مگر سراج الحق کی بات حق ہے کہ ایوان اور عدلیہ مورچہ زن ہیں۔ آئین تختہ مشق بنا ہوا ہے۔ ایک فلم دیکھی تھی جس میں رنگیلا اور
اتوار 30 اپریل 2023ء مزید پڑھیے

الٹی گنگا بہانے کی تیاری

جمعه 28 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
رشتہء آب کیا حباب کے ساتھ آب ملتا ہے آخر آب کے ساتھ میں نے سیکھا خزاں کے موسم سے رنگ وبو ہے فقط شباب کے ساتھ خزاں رسیدہ موسم میں تو پیلے اور سوکھے پتے ہی اڑتے ہیں اور وہ ہوا کے دوش پر ہوتے ہیں۔کچھ ایسی ہی صورت حال سیاست میں آئی ہے۔ایسے میں منیر نیازی کی نظم کی وہ لائنیں یاد آ گئی شاں شاں کر دے رکھ پیل دے تے انھیاں کر دیاں وا واں۔اوس رات دے بہتے لوکی بھل گئے گھر دیاں راہواں۔اگرچہ اس وقت بہار پوری طرح گزری نہیں مگر سیاست میں موسم گرم کچھ زیادہ ہی ہو
مزید پڑھیے


سیاسی صورتحال اور آرمی چیف کا دورہ چین!

بدھ 26 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
چند لمحے جو ملے مجھ کو ترے نام کے تھے سچ تو یہ ہے کہ یہی لمحے میرے کام کے تھے میری آنکھوں سے ہیں وابستہ مناظر ایسے جو کسی صبح کے تھے اور نہ کسی شام کے تھے عید گزر چکی اور زندگی اب کسی اور ڈگر پر رواں ہو گئی کہ کچھ رمضان کی حد بندیاں تھیں۔ چار پانچ چھٹیاں گزارنا پڑیں جس طرح ہم نے گزارے ہیں وہ ہم جانتے ہیں دن فراغت کے بظاہر بڑے آرام کے تھے۔ سیاسی چالیں چلنے والے دوبارہ بساط پر آ بیٹھے ہیں۔ یہ زندگی اور اس میں تحرک ہی اصل چیز ہے۔
مزید پڑھیے


مذاکرات کا امکان

بدھ 19 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
کچھ کم نہیں ہے وصل سے یہ ہجر یار بھی آنکھوں نے آج دھو دیا دل کا غبار بھی اپنے نقوش پا کے سوا کچھ نہیں ملا اپنے سوا کوئی نہیں صحرا کے پار بھی زندگی رواں دواں ہے مگر اپنی ڈگر پر۔ نے ہاتھ باگ پر ہے نہ پاہے رکاب میں۔ تکلیف دہ ہے اور بھی کچھ عارضی خوشی۔ توڑا ہے میں نے بارہا غم کا حصار بھی۔ ایک چیز طے ہے کہ کچھ بھی طے کرلیں وہ حتمی نہیں۔ سنا ہے اب خان صاحب مذاکرات کی طرف آئے ہیں۔ بات پھر وہی کہ ہمیں زمانے نے سب کچھ سکھا دیا ورنہ۔ ہمارے
مزید پڑھیے


انتخاب ہی حل ہے

اتوار 16 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
خواب کمخواب کا احساس کہاں رکھیں گے اے گل صبح تری باس کہاں رکھیں گے کبھی ہم بھی اس نہج پر سوچتے ہیں مگر نتیجہ معلوم۔ مگر اس کام سے دست کش بھی تو نہیں ہو سکتے۔ سر تسلیم ہے خم کچھ نہ کہیں گے لیکن یہ قلم اور یہ قرطاس کہاں رکھیں گے پھر یہ بھی تو ہے کہ خود ہی روئیں گے ہمیں پڑھ کے زمانے والے۔ہم بھلا رنج و الم پاس کہاں رکھیں گے ۔کچھ نہ کچھ رائے زنی تو کرنا پڑتی ہے اور اگر ادب کے پیرائے میں ہو جائے تو سونے پر سہاگہ نہ سہی کچھ تو
مزید پڑھیے



زرداری صاحب کا مشورہ صائب !!

بدھ 12 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
ہمارے پاس حیرانی نہیں تھی ہمیں کوئی پریشانی نہیں تھی ہمیں ہونا تھا رسوا‘ ہم ہوئے ہیں کسی کی ہم نے بھی مانی تھی حق و باطل کی آویزش تو ازل سے ہے اور ابد تک رہے گی مگر یہاں تو معاملہ ہی کچھ اور ہے کہ منفی اور مثبت قوتوں کی پہچان میں ختم ہو گئی۔ بنیادی طورپر اکثریت کی دو ہی قوتیں ہیں اور دونوں ہی سچ کی دعویدار ہیں مگر ان کی ہسٹری شیٹ کچھ اور ہی بتاتی ہے۔ اسی لیے یہ کہتے ہوئے بھی خوف لاحق ہے کہ کہیں چھوٹ کے مدمقابل چھوٹ ہی تو نہیں۔ اصل میں ہم یا
مزید پڑھیے


سیاست اور ایمان افروز واقعات

اتوار 09 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
کسی کی نیند اڑی اور کسی کے خواب گئے سفینے سارے اچانک ہی زیر آب گئے ہمیں زمیں کی کشش نے کچھ اس طرح کھینچا ہمارے ہاتھ سے مہتاب و آفتاب گئے کبھی کبھی ایسا ہوتا ہے کہ حالات بالکل ہی کنٹرول سے باہر ہو جاتے ہیں کہ انسان کی بس ہو جاتی ہے تو پھر بس۔ قارئین کرام یہ تو جانتے ہیں کہ حباب کی اوقات ہی کیا ہوتی ذرا سی دیر کو ہوا اسے لئے پھرتی ہے پھر میر تو میر ہیں: ہستی اپنی حباب کی سی ہے یہ نمائش سراب کی سی ہے لیکن خدا جانتا ہے کہ اس حباب صفت انسان نے کیا
مزید پڑھیے


کتبے سے تراشی زندگی

جمعرات 06 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
سچ کو سقراط کی مسند پہ بٹھا دیتا ہے وقت منصور کو سولی پہ چڑھا دیتا ہے آگ کو پھول بناتا ہے کبھی جو لمحہ برف زاروں میں بھی وہ آگ لگا دیتا ہے اور اس سے آگے بھی تو سوچئے کہ ’’ایک دریا میں بنا دیتا ہے رستے کوئی اور پھر ان رستوں کو آپس میں ملا دیتا ہے‘‘ سخن کے پیرائے میں بات اپنی جگہ مگر اچھی نثر بھی مضامین کو چار چاند لگا دیتی ہے۔ مشت از خروارے کے طور پر نثر کے ایک دو نمونیمالحظہ فرمائیں کہ ان میں جاذبیت اور د لکشی ہے۔ ’’پیاس کو بجھنا نہیں چاہیے وگرنہ کنویں
مزید پڑھیے


فلاح دین ہے

منگل 04 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
دلوں کے ساتھ یہ اشکوں کی رائیگانی بھی کہ ساتھ آگ کے جلنے لگا ہے پانی بھی ہوا ہے عشق تو تھوڑا سا حوصلہ بھیمیاں کہ حسن رکھتا ہے تھوڑی سی سرگرانی بھی بات ذرا سی سمجھنے کی ہے کہ اونچی اڑان کے لیے ہوا بھی ضروری ہے۔ پیراکی کے جوہر دکھانے کے لیے پانی تو اشد ضروری ہے۔ بچا رہے ہو ہوائوں سے تم چراغ مگر۔ ہوا کے بعد کہاں اس کی زندگانی بھی۔ بات یہ ہے کہ اس وقت تعمیر کی صورت کم اور تخریب کا عمل جاری ہے بلکہ یوں کہیں کہ ان کے مسائل بڑھ گئے ہیں۔ یہ انا بھی
مزید پڑھیے


حالاتِ ناظرہ

اتوار 02 اپریل 2023ء
سعد الله شاہ
توڑ ڈالے ہیں جو دریا نے کنارے سارے کون دیکھے گا تہہِ آب نظارے سارے تب کہیں جا کے حقیقت کی طرف آیا میں اس نے آنکھوں سے مری خواب گزارے سارے لیکن اس کے باوجود بھی اگر نفس حقیقت کو خواب ہی سمجھے کہ ہیں خواب میں ہنوز جو جاگے ہیں خواب سے۔ایک احساس ہے جو عمر کے ساتھ ساتھ پیدا ہو جانا چاہیے مگر وہ بھی توفیق ہی سے ہے۔ یہ بے برکتی ہے یا کوئی بددعا ہے کہ حالات بگڑتے ہی چلے جاتے ہیں اور پھر انہیں سلجھانے کی کوشش بھی نہیں کی جاتی ہے اک تماشہ لگا ہوا ہے
مزید پڑھیے








اہم خبریں