BN

آصف محمود



بلوچستان عمران خان کی راہ دیکھ رہا ہے


بلوچستان میں سیلاب نے تباہی مچا دی لیکن ہماری صحافت اور سیاست اس المیے سے لاتعلق ہیں۔پارلیمان ، جسے عوامی نمائندگی کا دعوی ہے، پوری تندہی سے مچھر چھان رہی ہے۔ کچھ آگ بگولہ ہیں کہ بلاول نے عمران خان کی توہین کر دی اور کچھ آتش فشاں بنے بیٹھے ہیں کہ اسد عمر نے بلاول کے تارک الدنیا اور درویش الطبع باپ کی شان میں گستاخی کا ارتکاب کر دیا۔ ٹاک شوز میں وہی اہل سیاست کی دن بھر کی چاند ماری پر رجز اور قصیدے پڑھے جا رہے ہیں اور اخبارات کی بے نیازی کا عالم یہ ہے
اتوار 10 مارچ 2019ء

وردی بدلنے سے کیا ہو گا؟

جمعرات 07 مارچ 2019ء
آصف محمود
پنجاب پولیس کی وردی ایک بار پھر تبدیل کر دی گئی ہے۔عثمان بزدار صاحب کا ایک عدد ارشاد مبارکہ بھی خبر کے ساتھ طلوع ہوا ہے۔ فرماتے ہیں: وردی تبدیل ہونے سے پولیس کا سافٹ امیج اجاگر ہو گا۔ کیا ہمارے وسیم اکرم واقعی یہ سمجھتے ہیں کہ وردی کا رنگ بدلنے سے سافٹ امیج اجاگر ہو جائے گا۔ ایک فیاض چوہان کو کیا روئیںیہاں تو معلوم ہوتا ہے لاکھوں ہی آفتاب ہیں اور بے شمار چاند۔بس فرق اتنا ہے کہ کچھ زبان حال سے جلوہ افروز ہیں اور زبان قال سے چمک رہے ہیں۔ سانحہ ساہیوال کے لاشے ابھی عوامی
مزید پڑھیے


جہادی تنظیمیں ۔۔۔پاکستان اور کیا کرے؟

منگل 05 مارچ 2019ء
آصف محمود
بھارتی سورما جہاز تباہ کروا کے چائے کا کپ پی کر واپس پدھارے ہیں تو اب کچھ مقامی سورما میدان میں آ گئے ہیں۔واردات وہی ہے لیکن طریقہ واردات بڑا دردمندانہ ہے۔یہ بظاہر بڑے دردِ دل سے سوال اٹھا رہے ہیں کہ دیکھیے ایک دو جہادیوں کے لیے بھلا بھارت سے جنگ لڑنا کوئی عقلمندی ہے؟ کیا ہم اب مسعود اظہر اور حافظ سعید کی خاطر ایٹمی جنگ کا خطرہ مول لے لیں اورکیا صرف ایک جہادی کے لیے چین سے ویٹو جیسی غیر معمولی مدد طلب کرنا کوئی مناسب کام ہے ؟تاہم اس سے قبل کہ آپ کوئی
مزید پڑھیے


کیا بھارتی پائلٹ کی رہائی ایک درست فیصلہ ہے؟

هفته 02 مارچ 2019ء
آصف محمود
کیا بھارتی پائلٹ کی رہائی ایک درست فیصلہ ہے؟ چند پہلو میں آپ کے سامنے رکھ دیتا ہوں، فیصلہ آپ خودکر لیجیے۔ سب سے پہلے تو یہ دیکھنا ہو گا کہ جنگ کیا ہوتی ہے؟ جنگ محض میدان عمل میں داد شجاعت دینے کا نام نہیں۔ یہ حکمت اور بصیرت کا نام بھی ہے۔قدیم زمانوں کی جنگوں کا معاملہ مختلف تھا۔ اب سفارت کاری کی دنیا بھی باقاعدہ میدان جنگ بن چکی ہے۔آپ نے نہ صرف دشمن کو جواب دینا ہوتا ہے بلکہ عالمی برادری کو بھی ساتھ لے کر چلنا ہوتا ہے۔کم از کم کوشش یہ ہوتی ہے کہ عالمی
مزید پڑھیے


پاکستان کو اب کیا کرنا چاہئے

جمعرات 28 فروری 2019ء
آصف محمود
اللہ کا شکر ہے ، پاکستان سرخرو ہوا۔ کل کا دن اعصاب شکن تھا ، آج کی صبح مگر اللہ کا انعام بن کر طلوع ہوئی ہے۔حساب چکا دیا گیا ہے اور پوری جمع تفریق کے ساتھ۔یہی وقت ہے جب قومیں اپنی فکری صف بندی کرتی ہیں۔ہمیں بھی اس وقت اپنی فکری صف بندی پر توجہ دینی چاہیے۔ اس ضمن میں چندپہلوبہت اہم ہیں اور ضروری ہے کہ انہیں اچھی طرح سمجھ لیا جائے۔ پہلی بات جو ہمیں پلے باندھ لینی چاہیے یہ ہے کہ بھارت ہمارا دشمن تھا ، دشمن ہے اور رہے گا۔اس کے ساتھ دوستی نہیں ہو سکتی۔
مزید پڑھیے




خود غرض بیانیہ

منگل 26 فروری 2019ء
آصف محمود
احباب کہتے ہیں : بیانیہ صرف نواز شریف کے پاس ہے۔ درست کہتے ہوں گے۔ عرض صرف اتنی ہے کہ یہ بیانیہ ہے تو بڑا ہی خود غرض اور نا معتبر بیانیہ ہے۔ نواز شریف گرفتار ہو کر جیل پہنچتے ہیں۔ بیانیہ اودھم مچا دیتا ہے: واش روم گندہ ہے، کمرے میں سیلن ہے ، کمرہ ہوادار نہیں ، طبی سہولیات غیر موزوں ہیں، جیل میں اچھا ہسپتال نہیں ہے ، جیل میں قابل ڈاکٹر نہیں ہیں، وغیرہ وغیرہ۔ شام ڈھلنے تک بیانیہ ایک قوالی بن جاتا ہے ، کیا خبر ، کیا کالم کیا ٹاک شو ، ہر جگہ یہی
مزید پڑھیے


امن ایک نعمت ہے

هفته 23 فروری 2019ء
آصف محمود
امن بہت بڑی نعمت ہے ۔یہ اللہ کا انعام ہے۔ اس کی قدر ان سے پوچھیے جنہوں نے جنگیں دیکھ رکھی ہیں ۔ برصغیر میں رہتے ہوئے ہم نے اس نعمت کو سنبھالنا ہے تو اس کے لیے دو کام ناگزیر ہیں۔ اول: ہمیں جنگ کی تیاری کرنا ہو گی۔ دوم : ہمیں جنگ کے لیے تیار رہنا ہو گا۔سافٹ امیج ، میٹھے میٹھے اقوال زریں نہ عالمی برادری میں آپ کے موقف کی حقانیت ،آخری تجزیے میں یہ صرف آپ کی اپنی قوت ہوتی ہے جو آپ کو جارحیت سے بچاتی ہے اورامن کی ضمانت فراہم
مزید پڑھیے


این جی اوز کے دانش گرد، آزادی رائے ، آئین اور قانون

جمعرات 21 فروری 2019ء
آصف محمود
این جی اوز کے دانش گردشمشیر بکف ہیں۔مذہب ، ریاست، اقدار ، روایات سب کچھ ان کے نشانے پر ہے ۔ضد ہے کہ اس چاند ماری کو آزادی رائے کے باب میں لکھا جائے۔کوئی شکوہ کرے تو کندھے اچکا کر جواب دیا جاتا ہے: ہم اپنی رائے کا اظہار کر رہے ہیں اور آئین ہمیں ا س بات کی اجازت دیتا ہے۔۔۔۔۔تو آئیے آج ذرا دیکھ لیتے ہیں آئین جس آزادی رائے کی ضمانت دیتا ہے اس کی حدود و قیود کیا ہیں؟ آئین کے آرٹیکل 19 میں آزادی رائے کی ضمانت فراہم کی گئی ہے۔آزادی صحافت کا ضامن بھی یہی
مزید پڑھیے


نئے پاکستان کا پرانا عمران

منگل 19 فروری 2019ء
آصف محمود
رات جو عمران بولا ، یہ وزیر اعظم عمران خان نہیں تھا۔ یہ وہ پرانا عمران تھا جسے کبھی لوگوں نے چاہا تھا کہ وزیر اعظم بن جائے۔مصلحتوں میں گھرے نئے عمران خان کو کہنی مار کر جب کبھی پرانا عمران خان سامنے آتا ہے ، اچھا لگتا ہے۔یہ لہجہ بھی عمران خان کا نہیں تھا۔اس نے شاید ہی کبھی اس اسلوب میں کسی سے التجا کی ہو۔ انگریزی تو وہ رسان سے بولتا ہے ، پھر بھی وہ اٹک رہا تھا۔الفاظ گویا زبان پر نہیں آ رہے تھے۔ ’’ آئی جسٹ وانٹ ٹو سیـ‘‘ ، یہ فقرہ اس
مزید پڑھیے


مقبوضہ کشمیر میں خود کش حملہ اور این جی اوز کے دانش گرد

هفته 16 فروری 2019ء
آصف محمود
ادھر مقبوضہ کشمیر میں خود کش حملہ ہوا ، اِدھر ففتھ جنریشن وار کے لشکری متحرک ہو گئے۔بھارت نے تو سی سی ایس کی میٹنگ اگلے روز بلائی ، ہمارے ہاں لشکریوں پرایک لمحے میں انکشاف ہو گیا کہ اس کے تانے بانے پاکستان سے ملتے ہیں ، یاروں نے ہاتھ نچا نچا کر طعنے دینے شروع کر دیے کہ اب دیکھنا پاکستان کیسے مزید تنہائی کا شکار ہو گا۔ ففتھ جنریشن وار کے یہ لشکری گریہِ نیم شبی میں رات کے دوسرے پہر جب لڑکھڑائے تو ان کے خیال میں تحریک آزادی کشمیر کا خاتمہ ہو چکا
مزید پڑھیے