BN

محمد عامر خاکوانی



let It Be


لیٹ اٹ بی (Let It Be)شہرہ آفاق انگلش راک میوزک بینڈ بیٹلز کا بہت مشہور اور آخری سٹوڈیو البم کا نام ہے، بیٹلز کا گایا ہوا یہ گیت بھی بہت مشہور ہوا۔ بیٹلز(Beatles)بذات خود ایک حیران کن راک بینڈ تھا، ایک زمانے میں اس نے پوری دنیا میں تہلکہ مچا دیا تھا۔ بیٹلز کے گیت دنیا بھر میں سنے جاتے ،نوجوان نسل میں انہیں سننے کا کریز تھا۔1960 کا سال تھا، انگلینڈ کے شہر لیور پول میں چارنوجوانوں جان لینن،جار ج ہیریسن، جارج میکارٹنی ، رنگو سٹارنے بیٹلز کی بنیاد ڈالی۔ جلد ہی یہ انگلینڈ کا مقبول ترین بینڈ ہوگیا،
منگل 16 جولائی 2019ء

آپریشن بن لادن اور سٹیو کول کی گواہی

جمعه 12 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
اسامہ بن لادن کی ہلاکت کے لئے کیا گیا امریکی آپریشن پاکستانی تاریخ میں ہمیشہ ایک سیاہ دن کے طور پر یاد رکھا جائے گا۔ امریکیوں نے جس طرح پاکستانی سکیورٹی کو مفلوج کر کے یہ آپریشن کیا، اسامہ کو قتل کیا اور اس کی لاش اٹھا کر ساتھ لے گئے، اس سے پوری قوم ششدر رہ گئی۔ کسی کوایسی غیر متوقع جارحیت کا اندازہ نہیں تھا۔ اس پر عوامی ردعمل بڑا شدید تھا ۔ امریکی صحافی ،ریسرچر اور ادیب سٹیو کول نے اپنی کتاب ڈائریکٹوریٹ ایس میں اس واقعے کے حوالے سے دلچسپ تفصیلات رقم کی ہیں۔ سٹیو کول
مزید پڑھیے


بڑی تصویر کے چند ٹکڑے

بدھ 10 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
سٹیو کول کی کتاب ڈائریکٹوریٹ S پڑھنا ایک دلچسپ تجربہ ہے۔ پچھلے کالم میں سٹیوکول کا تعارف کرایا، اس کا کتاب کا بھی کچھ پس منظر آ گیا تھا۔ سٹیو کول معروف امریکی صحافی، ریسرچر اور ادیب ہیں، وہ امریکہ کا اعلیٰ ترین صحافتی ایوارڈ پلٹرز ایوارڈ جیت چکے ہیں، ان کی کتاب گھوسٹ وارز مشہور ہوئی تھی، ڈائریکٹوریٹ ایس پچھلے سال شائع ہوئی اور عسکریت پسندی سے دلچسپی رکھنے والے حلقوں میں اس کا نوٹس لیا گیا۔ یہ کتاب افغانستان میں امریکی فوج کی آمد اور وہاں موجودگی کے گرد گھومتی ہے۔امریکی وہاں کیوں کامیاب نہیں ہوسکے، اس کی
مزید پڑھیے


ڈائریکٹوریٹ ایس

منگل 09 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
سٹیو کول (Steve Coll) ممتاز امریکی صحافی، ریسرچر اور ادیب ہیں۔ کئی کتابوں کے مصنف ہیں۔ ان کی افغانستان پر لکھی کتاب گھوسٹ واربہت مشہور ہوئی تھی۔ سٹیو کول واشنگٹن پوسٹ کے لئے لکھتے رہے، وہ معروف جریدے نیویارکرکی ٹیم میں بھی شامل رہے، آج کل وہ کولمبیا یونیورسٹی کے گریجوائٹ سکو ل آف جرنلزم کے ڈین ہیں۔ سٹیو کول کو اپنی کتابوں پر امریکہ کا اعلیٰ ترین صحافتی ایوارڈ پلٹرز ایوارڈ مل چکا ہے۔ ڈائریکٹوریٹ S ان کی ایک اور مشہور کتاب ہے۔ پچھلے سال یہ شائع ہوئی اور عالمی میڈیا میں ڈسکس ہوتی رہی۔ سٹیو کول نے اس
مزید پڑھیے


قہوہ کی مہک اور کتاب کی خوشبو

اتوار 07 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
اے حمیداردو کے نامور ادیب ادیب اور کالم نگار تھے۔ انہوں نے بے پناہ لکھا۔ بچوں کی کہانیوں سے لے کر سحرانگیز سفرناموں، دلکش افسانوں سے اخباری مضامین تک۔ ان کا ہفتہ وار کالم ’’چائے، سماوار اور خوشبو‘‘بڑا مشہور تھا۔اے حمدآخری ایام تک اس کالم میں املتاس کے حسین پھولوں، خوبصورت سرسبزدرختوں اور خوشبو اڑاتی چائے کے گرد بپا محفلوں کی داستاں سناتے رہے۔سرتاپامرتسری تھے، سبز چائے مرغوب تھی ، گھر آنے والے خاص مہمانوں کی تواضع اس سے کیا کرتے۔ اے حمید کے وہ کالم ہمیشہ ایک خاص رومانوی کیفیت میں لے جاتے۔لاہور کی تپتی فضائوں، آگ برساتے لو
مزید پڑھیے




پاک افغان مخاصمت ، چند مشاہدات

جمعه 05 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
چار پانچ سال پہلے پاک افغان میڈیا کوارڈی نیشن کے ایک پروگرام میں مجھے بھی شامل ہونے کا موقعہ ملا۔ دونوں طرف کے کئی سینئر صحافیوں کو ایک دوسرے کے ممالک کا دورہ کرنا تھا۔ پہلے سال پاکستانی میڈیا وفد نے کابل کا دورہ کیا، اگلے سال افغان جرنلسٹ اسلا م آباد آئے، تیسرے سال پھر ہم نے کابل کا دورہ کیا اور اس میں کئی اہم شخصیات سے ملاقاتیں بھی ہوئیں، جن میں افغانستان کے موجودہ صدر اشرف غنی، حکومت میں شریک افغان چیف ایگزیکٹو عبداللہ عبداللہ، جبکہ لیجنڈری تاجک گوریلا لیڈر احمد شاہ مسعود کے بھائی احمد ضیا
مزید پڑھیے


افغانستان میں پاکستان مخالف جذبات کیوں ؟

بدھ 03 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
افغانستان جانے اور خاص کر کابل میں چند دن قیام کا موقعہ ملے تو پاکستانیوں کو شدید حیرت ہوتی ہے کہ ہر کوئی پاکستان کو اپنا سب سے بڑا دشمن سمجھتا ہے۔ستم ظریفی یہ ہے کہ وہ بچے جو پاکستان میں پلے، بڑھے، پاکستانی تعلیمی اداروں میں تعلیم حاصل کی ، ڈاکٹریٹ، انجینئرنگ جیسی اعلیٰ ڈگریاں لیں، وہ بھی پاکستان کے مخالف ملیں گے ۔ اس کی وجوہات پر جامع اور غیر جانبدارانہ ریسرچ کرانے کی ضرورت ہے۔ ہم تو اس ایشو کو صحافیانہ انداز ہی میں دیکھ سکتے ہیں، طائرانہ نظراور تین چار موٹی موٹی باتیں، جن سے
مزید پڑھیے


افغان پاکستانیوں کو کیوں ناپسند کرتے ہیں ؟

منگل 02 جولائی 2019ء
محمد عامر خاکوانی
کرکٹ ورلڈ کپ جاری ہے اور پاکستانی ٹیم کی خراب کارکردگی کے باوجود میچز کے حوالے سے آنے والی خبریں زیادہ جگہ لینے میں کامیاب ہوجاتی ہیں۔ افغانستان کے ساتھ میچ کے دوران خاصا شورشرابا رہا ، فیس بک اور ٹوئٹر پر کئی منفی ٹرینڈز چلتے رہے ۔ ایک ایسی بحث شروع ہوئی جو شائد خاصا عرصہ جاری رہے ۔ اس پر بات کرتے ہیں، مگر پہلے ورلڈ کپ کا ایک اوراہم میچ، جس نے بہت سے پاکستانیوں کی آنکھیں کھول دیں۔ اگلے روز بھارت کا انگلینڈ کے ساتھ میچ تھا اور عرصے بعد ایسا ہوا کہ پاکستانی شائقین کی
مزید پڑھیے


اپوزیشن کہاں کھڑی ہے؟

جمعه 28 جون 2019ء
محمد عامر خاکوانی
اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس کے اعلامیہ پر جائزے، تبصرے چل رہے ہیں۔ اعلامیہ کے لفظ لفظ پر بحث ہورہی ہے۔ تجزیہ کار اپوزیشن اتحاد کے مستقبل کے منصوبوں کا اندازہ لگانا چاہ رہے ہیں۔ اپوزیشن اس اے پی سی کو شاندار کامیابی قرار دے رہی ہے توحکمران جماعت کے ترجمان اس میں نقص نکالتے ہوئے اسے بے فائدہ، بے مقصد قرار دے رہے ہیں۔اپوزیشن کے حامی حلقے اسے تاریخی اعلامیہ قرار دے رہے ہیں توبعض حلقے اسے نشستند، گفتند،خوردند، برخاستند(نشست ہوئی، گپ شپ لگی، کھایا پیا گیا اور پھر نشست برخاست ہوگئی یعنی سب کچھ بلامقصد ہوا)کہہ
مزید پڑھیے


نئے حکومتی ماڈل کو سمجھیں

بدھ 26 جون 2019ء
محمد عامر خاکوانی
سیاسی محفلوں، ڈرائنگ روم گپ شپ ہو یا تھڑوں پر ہونے والی بحثیں… ان سب میں دو تین سوال بار بار زیربحث آ جاتے ہیں۔ عمران خان کیا کر رہا ہے؟حکومت کب تک رہے گی اور کیا اپوزیشن کی تحریک کامیاب ہوجائے گی؟ تیسرا سوال بھی ان سے منسلک ہی ہے کہ کیا ڈیل ہونے والی ہے؟ ان سوالوں پر ہر ایک کے جوابات مختلف اور اپنی اپنی پسند کے مطابق ہی ہیں۔ مسلم لیگ ن والوں کا اپنا بیانیہ ہے، پیپلزپارٹی والے ان سوالات کو اپنے زاویے سے دیکھتے ہیں، تحریک انصاف کے پاس اپنے جواز، دلائل ہیں جبکہ
مزید پڑھیے